Teen Dost - Article No. 1165

تین دوست

کسی شہر میں تین دوست رہتے تھے ۔ان میں گہری دوستی تھی ۔ہنسی خوشی زندگی گزاررہے تھے۔بد قسمتی سے ان کا کاروبار تباہ ہو گیاور وہ تنگ دستی کی زندگی گزار نے پر مجبور ہو گئے

پیر 20 اگست 2018

teen dost

محمد شاہد حفیظ
کسی شہر میں تین دوست رہتے تھے ۔ان میں گہری دوستی تھی ۔ہنسی خوشی زندگی گزاررہے تھے۔بد قسمتی سے ان کا کاروبار تباہ ہو گیاور وہ تنگ دستی کی زندگی گزار نے پر مجبور ہو گئے ۔انھوں نے سوچا کہ کسی دوسرے شہر میں جا کر قسمت آزمانی چا ہیے ۔

چناں چہ انھوں نے کچھ پیسے اور ضروری سامان ساتھ لیا اور سفر کوروانہ ہوگئے ۔چلتے چلتے وہ ایک شہر میں قریب پہنچے ۔دن بھر کی مسافت نے انھیں تھکا دیا تھا ۔آخر وہ ایک درخت کے نیچے سستا نے کے لیے بیٹھ گئے ۔اچانک ان میں سے ایک کی نظر قریب پڑی تھیلی پر جاپڑی ۔
اس نے دوڑ کر تھیلی کو اُٹھا لیا ۔جب اسے کھول کر دیکھا توو ہ تینوں خوشی کے مارے اُچھل پڑے وہ تھیلی سونے کے سکوں سے بھری ہوئی تھی ۔انھوں نے فیصلہ کیا کہ اس رقم کو تین برابر حصوں میں بانٹ لیں گے ۔

(جاری ہے)

اسی دوران انھیں بھوک لگی ۔انھوں نے اپنے میں سے ایک ساتھ کو کچھ پیسے دے کر بازار بھیجا کہ کھانے کا کچھ سامان لے آئے ۔

جب وہ کھانا لانے کے لیے روانہ ہوا تو باقی دودوستوں کے دل میں لالچ پیدا ہو گیا ۔انھوں نے سوچا کہ جو نہی ہمار ا دوست کھانا لے کر آئے گا ہم اسے مارڈالیں گے اور ساری رقم آپس میں آدھی آدھی با نٹ لیں گے ۔کچھ ایسا ہی لالچ ان کے تیسرے دوست کے دل میں بھی پیدا ہو گیا جو کہ کھانا لانے بازار گیا تھا ۔
وہ سوچ رہا تھا کہ تیسرے حصے کی تھوڑی سی رقم سے میرا کیا بنے گا کیوں نہ میں کھانے میں زہر ملادوں اور پوری کی پوری رقم کا میں اکیلا مالک بن جاؤں ،مگر فوراََ ہی یہ خیال اس کے دل ودماغ سے غائب ہو گیا ۔اس نے سوچا کہ زہر ملا کھانا کھانے سے میرے دونوں دوست مر جائیں گے ،رقم تو میرے ہاتھ لگ جائے گی ،مگر دونوں کا قتل میرے سر ہو جائے گا ۔
پولیس مجھے نہیں چھوڑے گی اور مجھے جیل کی سزا ہوجائے گی اور پھر مجھے پھانسی پر لٹکا دیا جائے گا ۔اس نے لالچ کو اپنے دل سے جھٹک دیا ۔اُدھر دونوں دوستوں کے دل میں بھی یہی خیال آیا کہ ہم رقم کے لالچ میں اسے قتل تو کردیں گے ،مگر اس جرم میں ہمیں سزا ے موت ہوجائے گی اور یہ رقم بھی ہمارے کسی کام کی نہیں رہے گی ۔
یہ سوچ کر انھوں نے فوراََ قتل کا منصوبہ اپنے دل سے نکال دیا ۔تیسرا دوست کھانے لے کر پہنچا ۔تینوں دوست کھانے پر ٹوٹ پڑے ۔کھانا کھا کے خدا کا شکر اداکیا ،اور اس بات کا بھی شکر ادا کیا کہ وہ لالچ جیسی بُری بلا سے بچ گئے ہیں ۔آخر میں تینوں نے تھیلی سے رقم نکالی ۔پہلے ساری رقم گنی ۔پھر اسے تین حصوں میں برابر تقسیم کرلی اور خوشی خوشی اپنے گھر وں کو روانہ ہو گئے ۔اس طرح وہ تینوں عبرت ناک انجام سے بچ گئے ۔

مزید اخلاقی کہانیاں

Aqalmandi Ka Inaam

عقلمندی کا انعام۔۔۔تحریر: مختار احمد

Aqalmandi Ka Inaam

Jadu Ka Tamasha

جادو کا تماشہ

Jadu Ka Tamasha

Naiki Ka Badla Sabaq Amoz Kahani

نیکی کا بدلہ، سبق آموز کہانی

Naiki Ka Badla Sabaq Amoz Kahani

Jhooti Khabar

جھوٹی خبر

Jhooti Khabar

Haq Baat Ka Inaam

حق بات کا انعام

Haq Baat Ka Inaam

بادشاہ اور غریب میں‌ فرق

Badshah Aur Ghareeb Main Faraq

Batooni Amna

باتونی آمنہ

Batooni Amna

Tahir - Aik Zaheen Larka

طاہر،ایک ذہین لڑکا

Tahir - Aik Zaheen Larka

Inaami Token

انعامی ٹوکن۔۔تحریر:مختار احمد

Inaami Token

Khudgharz Loomri

خود غرض لومڑی

Khudgharz Loomri

Kaghaz Ki Theli

کاغذ کی تھیلی

Kaghaz Ki Theli

Safaid Kabutri

سفید کبوتری

Safaid Kabutri

Your Thoughts and Comments