خاتون کی جانب سے بچوں کی حوالگی کیلئے درخواست پر حکومت سے بیرون ممالک سے بچوں کی حوالگی کے معاہدہ جات کی تفصیلات طلب

جمعرات نومبر 21:06

لاہور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 26 نومبر2020ء) لاہور ہائیکورٹ نے خاتون کی جانب سے بچوں کی حوالگی کیلئے دائر درخواست پر ایڈیشنل اٹارنی جنرل سے بیرون ممالک سے بچوں کی حوالگی کے معاہدہ جات کی تفصیلات طلب کر لیں۔لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس فاروق حیدر نے گجرات کی رہائشی رامین سجاد کی درخواست پر سماعت کی ۔عدالتی حکم پر ایڈیشنل اٹارنی جنرل اشتیاق اے خان پیش ہوئے۔

درخواست گزار خاتون کی جانب سے موقف اختیارکیاگیا کہ اس کی افغانستان سے تعلق رکھنے والے آسٹریلیا میں مقیم کیمرون سے 2014 میں شادی ہوئی ۔دو بچیاں زویا خان اور زرمینہ خان پیدا ہوئیں جس کے بعد خاوند نے اسے طلاق دیدی۔اب اس کا دیور دونوں بچیوں کو لے کر افغانستان چلا گیا ہے ،بچیوں کی بازیابی کے لئے تھانہ رحمانیہ گجرات کو درخواست دی لیکن پولیس بچے بازیاب نہیں کر رہی ۔

(جاری ہے)

استدعا ہے کہ عدالت پولیس کو بچے بازیاب کرنے کا حکم دے ۔دوران سماعت تفتیشی افسر نے عدالت کو آگاہ کیا کہ بچوں کی بازیابی کے لیے اقدامات کر رہے ہیں ، فون پر بچیوںکے باپ سے آسٹریلیا میں رابطہ کیا جس کے نتیجے اس وقت افغانستان میں ہونے کا انکشاف کیا ہے ، اس نے موبائل وٹس اپ پر بچیوں کی افغانستان میں موجودگی کی تصاویر بھیجی ہیں۔عدالت نے کیس کی سماعت 4دسمبر تک ملتوی کرتے ہوئے ایڈیشنل اٹارنی جنرل کو آئندہ سماعت تک بیرون ممالک سے بچوں کی حوالگی کے معائدہ جات کی رپورٹ پیش کرنے کی ہدایت کر دی۔

لاہور شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments