سکھر میں ترقیاتی منصوبے مکمل نا ہوسکے،سماجی تنظیم کا ٹھیکیدارسمیت انتظامیہ کے خلاف احتجاجی مظاہرہ

جمعرات جون 20:07

سکھر (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 17 جون2021ء) سکھر میں ترقیاتی منصوبے مکمل نا ہوسکے،سماجی تنظیم کا ٹھیکیدارسمیت انتظامیہ کے خلاف احتجاجی مظاہرہ ،نعرے بازی ، ،ترقیاتی کاموں کا فنڈز لگانے کے بجائے جیبوں میں ڈالا جارہا ہے ملوث افراد کے خلاف م چیف جسٹس آف پاکستان و دیگر بالا حکام سے نوٹس لینیکا مطالبہ تفصیلات کے مطابق نوجوان اتحاد ضلع سکھر کے زیر اہتمام قریشی گوٹھ نزد بجارانی چوک پر علاقے میں ترقیاتی کام مکمل نہ کرنے کے خلاف علاقہ مکینوں کی کثیر تعداد نے زیر قیادت چئیرمین نوجوان اتحاد سکھر نعیم بلوچ ،فیروز بجارانی،سعید احمد بلیدی،نزیر بلوچ و دیگر کے ہاتھوں میں پلے کارڈ اٹھا کر سکھر انتظامیہ اور محکمہ پبلک ہیلتھ ڈپارٹمنٹ سمیت متعلقہ کاموں کے ٹھیکیدار کے خلاف نعریبازی کی اس موقع پر مذکورہ علاقہ مکینوں کا کہنا تھا کہ شہر سکھر کے مختلف علاقوں سمیت قریشی گوٹھ ،بجارانی چوک سمیت دیگر کے ترقیاتی کاموں کے کروڑوں روپے کے فنڈز کے باوجود قریشی گوٹھ میں جاری ترقیاتی کام مکمل نہیں ہوسکیعلاقے کی سڑکیں ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہیں علاقہ مکینوں کی شکایات کے باوجود متعلقہ محکمے کے افسران اور ٹھیکیدار کے کانوں میں جوں تک نہیں رینگ رہی ہے ٹھیکیدار نے جو کام کرائے ہیں اس میں بھی ناقص میٹریل استعمال کیا گیا ہے ناتجربے کاری ،نااہل ٹھیکیدار ، ناقص پالیسی و پلاننگ کی وجہ سرکاری خزانے کو ہر بار کروڑوں روپے کا نقصان ہوتا ہے جو کسی صورت قابل قبول نہیں ہے اگر عوام کا پیسہ عوام پر خرچ نہیں ہوگا تو ترقی کیسے آئے گی مظاہرین نے چیف جسٹس آف پاکستان ،وزیر اعلی سندھ ،صوبائی وزیر بلدیات سیکریٹری لوکل گورنمنٹ و دیگر بالا حکام سے ترقیاتی کاموں کے باعث شہر کو تباہ کرنے والے عمل کا نوٹس لیکرقریشی گوٹھ کے علاقہ مکینوں کو درپیش مشکلات سے نجات دلانے سمیت سرکاری خزانے کو مال غنیمت سمجھ کر لوٹنے والوں کے خلاف کاروائی کا پرزور مطالبہ کیا ہے۔

سکھر شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments