سوچی سجھی سازش کے تحت احتسابی عمل کونشانہ بنایاجارہا ہے‘میاں مقصوداحمد

ملک میں روزانہ12اورسالانہ4320ارب روپے کی کرپشن لمحہ فکریہ ہے‘امیر جماعت اسلامی پنجاب

جمعرات اپریل 19:24

سوچی سجھی سازش کے تحت احتسابی عمل کونشانہ بنایاجارہا ہے‘میاں مقصوداحمد
لاہور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 19 اپریل2018ء) ) صدر متحدہ مجلس عمل پنجاب اورامیرجماعت اسلامی پنجاب میاں مقصود احمدنے چیئرمین نیب کے اس بیان پرکہ’’احتساب کاالیکشن سے کوئی تعلق نہیں،،کرپشن کاحجم اعدادوشمار سے آگے نکل گیا ہے‘‘پر اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہاہے کہ چیئرمین نیب کا بیان اس بات کی عکاسی کرتاہے کہ ایک سوچی سجھی سازش کے تحت احتسابی عمل کونشانہ بنایاجارہا ہے۔

ملک میں پہلی بار کسی بڑے سے جواب دہی شروع ہوئی ہے یہ سلسلہ رکنا نہیں چاہئے۔پانامالیکس میں بے نقاب ہونے والے دیگر 436پاکستانیوں کوبھی انصاف کے کٹہرے میں لایاجائے۔انہوں نے کہاکہ قومی دولت لوٹنے والوں کا کڑااحتساب وقت کاناگزیر تقاضا ہے۔سابق چیئرمین نیب بھی اس بات کابرملااظہار کرچکے ہیں کہ ملک میں روزانہ12ارب روپے جبکہ سالانہ4320ارب روپے کی کرپشن ہورہی ہے جوکہ بہت بڑالمحہ فکریہ ہے۔

(جاری ہے)

ملک وقوم کی ترقی وخوشحالی کی راہ میں کرپٹ عناصر اور ان کی خردبرد سب سے بڑی رکاوٹ ہے۔ہمیں کرپشن پر قابوپانے کے ساتھ بدعنوان افراد کاقلع قمع کرکے آگے بڑھنا ہوگا۔۔کرپشن نے پورے ملکی معاشی نظام کو مفلوج کرکے رکھ دیاہے۔انہوں نے کہاکہ پاکستان میں40فیصد سے زائد افراد سطح غربت سے نیچے زندگی گزارنے پر مجبور ہیں۔رہی سہی کسر حکمرانوں کی ڈنگ ٹپائو پالیسیوں نے پوری کردی ہے۔

ایک طرف حکومت بڑے بڑے چور لٹیروں کے لیے ایمنسٹی اسکیموں کا اعلان کررہی ہے تو دوسری طرف لوٹ مار کرنے والوں کوکھلی چھٹی دے رکھی ہے۔حکمران خود عوام کی خون پسینے کی کمائی کودونوں ہاتھوں سے لوٹنے میں مصروف ہیں۔میاں مقصوداحمد نے مزیدکہاکہ اس وقت ڈالر117روپے سے تجاوزکرچکا ہے۔دوماہ کے دوران ڈالر106سی117روپے تک بڑھ گیا مگر حکمرانوں کے کانوں پر جوں تک نہیں رینگی۔روپے کی بے قدری سے ملکی قرضوں میں ہوشربا اضافہ ہوچکا ہے۔وزیر خزانہ کایہ حال ہے کہ ایک ادارے کی معمولی قیمت اداکرکے دوسرے ادارے کو مفت دینے کی آفرکی جارہی ہے۔غیر سنجیدہ اور بدترین حکمران قوم پر مسلط ہوچکے ہیں ان سے نجات حاصل کرنا ہوگی۔