ملزم کی پیرول پر رہائی سے متعلق کیس کی سماعت ،عدالت نے ایڈیشنل آئی جی ثنا اللہ عباسی کو معاملے کی انکوائری کا سربراہ مقررکردیا

جمعہ جون 17:57

کراچی (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 22 جون2018ء) سندھ ہائیکورٹ میں پانچ ارب روپے سے زائد کرپشن کے مقدمے میں ملزم کی پیرول پر رہائی سے متعلق کیس کی سماعت ،،عدالت نے ایڈیشنل آئی جی ثنا اللہ عباسی کو معاملے کی انکوائری کا سربراہ مقررکرتے ہوئے ایک ماہ میں رپورٹ پیش کرنے کاحکم دے دیا ۔جمعہ کو سندھ ہائیکورٹ میں پانچ ارب روپے سے زائد کرپشن کے مقدمے میں ملزم انعام اکبرکی پیرول پر رہائی سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی۔

عدالت کا کہنا تھا کہ ایسا لگتا ہیکہ بااثرشخصیت کو غیر ضروری سہولیات کی فراہمی میں جناح اسپتال کی انتظامیہ اور ہوم ڈیپارٹمنٹ ملا ہوا ہے ہوم سیکرٹری نے چودہ جون کو اسی روز پیرول پر رہائی کا حکم دیا جس روز عدالت نے جیل بھیجنے کا حکم دیا تھا جیل انتظامیہ کا کہناتھا کہ انعام اکبر بیماری کے نام پر جیل سے اسپتال منتقل ہوئے عدالت کا کہنا تھا کہ لیکن انھوں نے اسی حالت میں کراچی سے لاہورکا سفرکیا۔

(جاری ہے)

عدالت نے ایڈیشنل آئی جی ثنا اللہ عباسی کو معاملے کی انکوائری کا سربراہ مقرر کردیا عدالت کا کہنا تھا کہ انکوائری آفیسر ثنا اللہ عباسی کو وہ تمام اختیارات حاصل ہونگے جوانکوائری کیلیے حقائق تک پہنچنے کے لئے ضروری ہونگے ۔انکوائری آفیسر زیر حراست قیدیوں کی اسپتال منتقلی کا باقاعدہ قانون کی خلاف ورزی کا جائزہ لیں گے ۔۔عدالت نے ایڈیشنل آئی جی ثنا اللہ عباسی کو معاملے کی انکوائری کا سربراہ مقررکرتے ہوئے ایک ماہ میں رپورٹ پیش کرنے کاحکم دے دیا۔