زنا، قتل اور منشیات کی سمگلنگ کے الزامات، سعودی عرب میں 20 پاکستانیوں کے سر قلم کر دیے گئے

سال 2019 کے دوران مختلف کیسز میں 20 پاکستانیوں نے موت کی سزا پائی، 17 پر منشیات، 2 افراد پر قتل اور 1 پر زنا کا الزام تھا

muhammad ali محمد علی منگل جنوری 21:28

زنا، قتل اور منشیات کی سمگلنگ کے الزامات، سعودی عرب میں 20 پاکستانیوں ..
اسلام آباد (اردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین۔14 جنوری 2020ء) زنا، قتل اور منشیات کی سمگلنگ کے الزامات، سعودی عرب میں 20 پاکستانیوں کا سر قلم کر دیا گیا، سال 2019 کے دوران مختلف کیسز میں 20 پاکستانیوں نے موت کی سزا پائی، 17 پر منشیات، 2 افراد پر قتل اور 1 پر زنا کا الزام تھا۔ تفصیلات کے مطابق وزارت خارجہ نے سال 2019 کے دوران سعودی عرب میں موت کی سزا پانے والے پاکستانیوں کی تفصیلات فراہم کی گئی ہیں۔

وزارت خارجہ کی جانب سے فراہم کردہ تفصیلات کے مطابق سال 2019 کے دوران سعودی عرب میں مختلف کیسز میں کل 20 ایسے پاکستانی گرفتار کیے گئے جن کا بعد میں سر قلم کر دیا گیا۔ جن 20 پاکستانیوں کو سعودی عرب میں موت کی سزا دی گئی ان میں 17 پر منشیات، 2 افراد پر قتل اور 1 پر زنا کا الزام تھا۔ تاہم اس بات کا تعین کرنا مشکل ہے کہ آیا ان پاکستانیوں کو قانونی تقاضے پورے کر کے موت کی سزا دی گئی یا صرف الزام کی بنیاد پر ہی ان کا سر قلم کر دیا گیا۔

(جاری ہے)

جسٹس پراجیکٹ پاکستان کے مطابق دنیا بھر میں کے مختلف ممالک کی جیلوں میں قید پاکستانیوں کی تعداد 11 ہزار سے زائد ہے جبکہ 7 ہزار کے قریب صرف عرب ممالک میں قید ہیں۔ خاص کر سعودی عرب میں ہزاروں کی تعداد میں پاکستانی جیلوں میں قید ہیں جنہیں موجودہ حکومت کسی نہ کسی طرح آزاد کروانے کی کوشش کر رہی ہے۔ سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے گزشتہ برس دورہ پاکستان کے دوران اعلان کیا تھا کہ وہ سعودی عرب میں قید پاکستانی قیدیوں کی رہائی کو اپنا فرض سمجھتے ہیں۔

انہیں نے کہا تھا کہ وہ سعودی عرب میں مقیم پاکستانیوں کیلئے ایک سفیر کردار ادا کریں گے۔ سعودی ولی عہد شہزادے کے اعلان کے بعد سعودی جیلوں میں قید پاکستانیوں کی بڑی تعداد کو رہائی بھی ملی، تاہم اب بھی پاکستانی ایک اچھی خاصی تعداد سعودی عرب کی جیلوں میں قید ہے۔