جہلم میں 6 سالہ بچی سے مبینہ زیادتی کی کوشش، گھر والوں نے استاد کو رنگے ہاتھوں پکڑ لیا

گھر کے علیحدہ کمرے میں استاد بچوں کو پڑھا رہا تھا، 2 بچوں کو جلدی چھٹی دے کر 6 سالہ بچی کے ساتھ نازیبا حرکات کرتے پکڑا گیا

Kamran Haider Ashar کامران حیدر اشعر اتوار ستمبر 08:19

جہلم میں 6 سالہ بچی سے مبینہ زیادتی کی کوشش، گھر والوں نے استاد کو رنگے ..
جہلم (اردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔ 13 ستمبر 2020ء) جہلم میں 6 سالہ بچی سے مبینہ زیادتی کی کوشش، گھر والوں نے استاد کو رنگے ہاتھوں پکڑ لیا۔ گھر کے علیحدہ کمرے میں استاد بچوں کو پڑھا رہا تھا، 2 بچوں کو جلدی چھٹی دے کر 6 سالہ بچی کے ساتھ نازیبا حرکات کرتا پکڑا گیا۔ تفصیلات کے مطابق جہلم میں ایک اور تشویشناک واقعہ پیش آیا ہے جس میں ایک استاد اپنی 6 سالہ طالبہ کے ساتھ مبینہ جنسی زیادتی کی کوشش کرتے ہوئے رنگے ہاتھوں پکڑا گیا ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق یہ واقعہ جہلم کے مشین محلہ نمبر 3 میں پیس آیا جہاں بچوں کو پڑھانے والے استاد نے 6 سالہ معصوم بچی سے مبینہ طور پر زیادتی کرنے کی کوشش کی، ملزم بچی کے ساتھ بند کمرے میں چھیڑ چھاڑ کر رہا تھا۔ نیوز رپورٹس کے مطابق استاد ایک مسجد کا امام بھی ہے جو بچوں کو گھروں میں جا کے دینی تعلیم دیتا ہے۔

(جاری ہے)

بتایا گیا ہے کہ استاد گھر کے علیحدہ کمرے میں بچوں کو پڑھا رہا تھا کہ اسی دوران خلاف معمول اس نے 2 بچوں کو جلدی چھٹی دے دی اور پھر اس کے بعد وہاں اکیلی رہ جانے والی 6 سالہ بچی سے نازیبا حرکات کرنے لگا۔

اسی اثناء جب گھر والوں نے اچانک کمرے کا دروازہ کھولا تو انہوں نے استاد کو بچی کے ساتھ نازیبا حرکات کرتے ہوئے دیکھا تو اس کی خوب درگت بنائی۔ 
  کمسن بچی کے اہل خانہ نے جب مولوی کو مبینہ زیادتی کی حرکات کرتے پکڑا تو اس پر تشدد کرنا شروع کر دیا، شور سے اہل محلہ بھی اکٹھے ہوگئے اور ملزم پر بدترین تشدد کرتے ہوئے چوک تک لے آئے۔

مشتعل عوام نے چوک پر پہنچنے کے بعد بھی ملزم کی خوب درگت بنائی۔ شہریوں کے مشتعل ہجوم نے ملزم کو پورے علاقے میں نیم برہنہ حالت میں گھمایا اور تشدد بھی کرتے رہے۔
  اس سارے واقعے کے دوران مذکورہ جگہ پر لوگوں کا ہجوم بڑھنے لگا جس کے بعد پولیس تھانہ سٹی نے مداخلت کر کے مبینہ ملزم کو شہریوں کے چنگل سے چھڑا کر تھانے لے گئے۔ پولیس کے اعلیٰ حکام کا کہنا ہے کہ وہ مبینہ زہادتی کے اس واقعے کی تحقیقات کر رہے ہیں۔

متعلقہ عنوان :