توشہ خانہ ریفرنس ،نیب نے دو گواہاں نے بیانات ریکارڈ کرا دیئے

اکتوبر کو فاروق ایچ نائک گواہاں پر جرح کریں گے، آصف زرداری کی ایک دن کی حاضری سے استثنیٰ کی درخواست منظور

جمعرات ستمبر 15:52

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 24 ستمبر2020ء) احتساب عدالت اسلام آباد میں آصف علی زرداری،یوسف رضا گیلانی،انور مجید اور عبدالغنی مجید کیخلاف توشہ خانہ ریفرنس میں نیب نے دو گواہاں نے بیانات ریکارڈ کرا دیئے، یکم اکتوبر کو فاروق ایچ نائک گواہاں پر جرح کریں گے، آصف زرداری کی ایک دن کی حاضری سے استثنیٰ کی درخواست منظور کرلی گئی ۔

جمعرات کو احتساب عدالت اسلام آباد میں سابق صدر آصف زرداری، سابق وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی،انور مجید اور عبدالغنی مجید کے خلاف توشہ خانہ ریفرنس کی سماعت ہوئی، آصف علی زرداری کے وکیل فاروق ایچ نائیک پیش ہوئے اور آصف علی زرداری کی حاضری سے استثنیٰ کی درخواست دائر کی۔ دوران سماعت وکیل فاروق ایچ نائیک نے نیب کی جانب سے گواہ پیش کئے جانے پر اعتراض کر دیا، ہمیں نہیں بتایا گیا تھا کہ نیب کی جانب سے گواہ پیش کیا جائے گا، آج گواہوں کے بیانات ریکارڈ کریں، ہم آئندہ سماعت پر جرح کریں گے،نیب پراسیکیوٹر سردار مظفر نے کہا کہ ایک گواہ کا بیان ہو گا، اس پر جرح ہو گی پھر اگلا گواہ پیش کریں گے۔

(جاری ہے)

نیب کی احتساب عدالت سے توشہ خانہ ریفرنس پر روزانہ کی بنیاد پر سماعت کی استدعا پر بھی فاروق نائیک نے اعتراض کیا اور کہا کہ پتہ نہیں نیب کو ان کیسز میں اتنی جلدی کیا ہے، آپ یہاں سیکیورٹی رسک بنانا چاہتے ہیں تو ہم آصف زرداری کو روز پیش کر دیا کریں گے،جج اصغر علی نے فاروق نائیک سے کہا کہ یہاں وقت ضائع نہ کریں، روز سماعت کا فیصلہ آپ کے کہنے پر نہیں ہو گا۔

نیب کے گواہ عمران ظفر نے عدالت میں بیان ریکارڈ کرایا کہ الیکشن کمیشن پاکستان میں بطور ڈپٹی ڈائریکٹر کانفیڈینشل خدمات سر انجام دیں، 7 فروری 2019ء کو نیب کی جانب سے خط موصول ہوا، جس میں نیب کی جانب سے انکوائری کیلئے تفصیلات مانگی گئی تھیں، گواہ عمران ظفر کا یہ بھی کہنا ہے کہ نیب نے آصف زرداری کی 2008ء کے کاغذاتِ نامزدگی اور اثاثہ جات کی تفصیلات مانگی تھیں، الیکشن کمیشن کی جانب سے مجھے ریکارڈ فراہم کرنے کیلئے منتخب کیا گیا تھا،دوسرے گواہ اسسٹنٹ ڈائریکٹر ایکسائیز اینڈ ٹیکسیشن وقار الحسن شاہ نے بیان ریکارڈ کرا دیئے عدالت کو بتایا کہ تین گاڑی آصف علی زرداری کے نام پر رجسٹرار ہیں،ایکسائیز ڈیپارٹمنٹ میں موجود دستاویزات تفتیشی افسر کو فراہم کیا،عدالت نے توشہ خانہ ریفرنس کی سماعت 1 اکتوبر تک ملتوی کردی،آئندہ سماعت پر وکلاء صفائی گواہاں پر جرح کریں گے۔