Live Updates

کورونا مریضوں میں اضافہ ، میو ہسپتال میں معمول کے سرجری آپریشن بند

صرف ایمرجنسی یا کینسر کے مریضوں کی سرجری ہی کی جائے گی ، چیف ایگزیکٹو آفیسر میو ہسپتال ڈاکٹر اسد اسلم کی طرف سے شعبہ سرجری کے سربراہ ڈاکٹر اصغر نقوی کو مراسلہ ارسال کردیا گیا

Sajid Ali ساجد علی منگل اکتوبر 12:55

کورونا مریضوں میں اضافہ ، میو ہسپتال میں معمول کے سرجری آپریشن بند
لاہور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 27 اکتوبر2020ء) صوبہ پنجاب میں ہونے والے کورونا کیسز میں اضافے کے باعث لاہور کے میو ہسپتال میں معمول کے آپریشن بند کر دیے گئے۔ تفصیلات میں بتایا گیا ہے کہ اس حوالے سے چیف ایگزیکٹو آفیسر میو ہسپتال ڈاکٹر اسد اسلم کی طرف سے شعبہ سرجری کے سربراہ ڈاکٹر اصغر نقوی کو مراسلہ ارسال کردیا گیا ، جس میں کہا گیا ہے کہ معمول کے سرجری آپریشن کو روک دیا جائے ، کورونا مریضوں میں ایک بار پھر ہونے والے اضافے کے بعد اب صرف ایمرجنسی یا کینسر کے مریضوں کی سرجری ہی کی جائے گی ، بتایا گیا ہے کہ ہسپتال کے شعبہ سرجری میں ہر روز 15 سے 20 آپریشن کیے جارہے تھے ، تاہم کورونا مریضوں کی تعداد بڑھنے کی وجہ سے سرجری آپریشنز کا عمل معطل رہے گا ، جس کا میو ہسپتال کے شعبہ سرجری کے سربراہ پروفیسر ڈاکٹر اصغر نقوی کی طرف سے نوٹی فکیشن بھی جاری کردیا گیا۔

(جاری ہے)

اس ضمن میں چیف سیکریٹری جواد رفیق ملک نے کہا ہے کہ پنجاب کےہسپتالوں میں کورونامریضوں کی تعدادبڑھ رہی ہے، ایک بار پھر ہسپتالوں میں کورونا کے باعث تشویشناک مریضوں کی تعداد میں بھی اضافہ ہوا ، انہوں نے بتایا کہ رواں برس یکم ستمبر کو پنجاب میں اموات کاتناسب 1.6 تھا جو کہ آج 6 فیصد تک پہنچ چکا ہے ، جب کہ صوبہ پنجاب میں کورونا کیسز کی شرح 0.92 سے بڑھ کر 1.33 ہوگئی۔

دوسری طرف پاکستان میں کورونا وائرس کی ایس او پیز کی مسلسل خلاف ورزی پر دوبارہ سخت اقدامات کا عندیہ دے دیا گیا۔ نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سنٹر (این سی او سی) کے مطابق ملک بھر میں عوام کی طرف سے میں کورونا ایس او پیز کی خلاف ورزی اسی طرح جاری رہی تو مختلف شعبوں میں ایک بار پھر لاک ڈاون کرنا پڑے گا ، کورونا کے پھیلاو کا باعث بننے والے ٹرانسپورٹ، مارکیٹس ، شادی ہالز، ریسٹورنٹس اور عوامی اجتماعات پر خصوصی توجہ دی جائے اور ایس او پیز کی خلاف ورزی پر سخت کارروائی کی جائے ، بصورت دیگر اگر وائرس کا پھیلاو ایسے ہی جاری رہا تو سخت اقدامات کرنا پڑیں گے۔
کرونا وائرس کی دوسری لہر سے متعلق تازہ ترین معلومات