Live Updates

دبئی حکومت نے کرونا کے گڑھ بھارت سمیت کچھ ممالک سے مسافروں کی متحدہ عرب امارات آمد پر عائد پابندی ختم کر دی

پاکستان پر عائد سفری پابندیاں تاحال برقرار، بھارت، جنوبی افریقہ اور نائیجیریا میں پھنسے اماراتی رہائشی ویزہ ہولڈرز کو اماراتی حکومت کی منظورہ شدہ ویکسین کی 2 ڈوز لگوانے کی صورت میں واپسی کی اجازت ملے گی

muhammad ali محمد علی ہفتہ 19 جون 2021 19:54

دبئی حکومت نے کرونا کے گڑھ بھارت سمیت کچھ ممالک سے مسافروں کی متحدہ ..
دُبئی(اُردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔19 جون2021ء) دبئی حکومت نے کرونا کے گڑھ بھارت سمیت کچھ ممالک سے مسافروں کی متحدہ عرب امارات آمد پر عائد پابندی ختم کر دی۔ تفصیلات کے مطابق دبئی حکومت نے بھارت، جنوبی افریقہ اور نائیجیریا پر عائد سفری پابندیوں میں نرمی کر دی ہے۔ بتایا گیا ہے کہ بھارت، جنوبی افریقہ اور نائیجیریا میں پھنسے ایسے افراد جو یا تو اماراتی شہری ہیں یا ان کے پاس امارات کا رہائشی ویزہ ہے، انہیں اماراتی حکومت کی منظورہ شدہ کسی بھی ویکسین کی 2 ڈوز لگوانے کی صورت میں واپسی کی اجازت ہو گی۔

اس کے علاوہ مذکورہ ممالک سے دبئی آنے والے مسافروں کو سفر سے 48 گھنٹے قبل کروائے گئے کرونا ٹیسٹ کی منفی رپورٹ بھی ساتھ لانا ہوگی، اماراتی شہریوں کو اس شرط سے استثنٰی حاصل ہوگا۔

(جاری ہے)

اس فیصلے کا اطلاق 23 جون سے ہوگا۔ دبئی حکومت کی جانب سے کرونا کے گڑھ بھارت سے مسافروں کی آمد پر تو پابندی ختم کر دی گئی، لیکن کرونا وبا کی تیسری لہر پر قابو پا لینے والے پاکستان پر عائد سفری پابندیاں تاحال برقرار رکھی گئی ہیں۔

تاہم متحدہ عرب امارات میں تعینات پاکستانی سفیر افضال محمود کی جانب سے کچھ روز قبل دبئی میں منعقدہ ایک تقریب کے دوران اظہار خیال کرتے ہوئے کہا گیا کہ پاکستان پر عائد سفری پابندیاں ختم کروانے کیلئے اماراتی حکام سے بات چیت جاری ہے، جلد مثبت پیش رفت ہوگی۔ امید ہے کہ پاکستان سے متحدہ عرب امارات کی ریاستوں کے لیے براہ راست پروازوں کا سلسلہ دوبارہ جلد شروع ہوگا۔

واضح رہے کہ اماراتی سول ایوی ایشن نے رواں ہفتے منگل کے روز پاکستان سمیت دیگر ممالک سے چارٹرڈ فلائٹس سے آنے والے مسافروں پر نئی پابندیاں عائد کر دی تھیں۔ اماراتی جنرل سول ایوی ایشن اتھارٹی کی جانب سے جو نیا سرکلر جاری ہوا، اس کے مطابق تمام مسافروں کو امارات پہنچنے کے فوراً بعد 14 روز قرنطینہ میں گزارنے ہوں گے۔ ان افراد کو قرنطینہ کے دوران کم از کم 10روز ٹریکنگ ڈیوائس بھی پہننا ہو گی۔

یہ ڈیوائسز شارجہ، ابوظبی اور راس الخیمہ ایئرپورٹ پر اترنے والے مسافروں کودی جا چکی ہیں۔ خلیج ٹائمز کے مطابق پاکستان ، بھارت، نائیجیریا، نیپال اور یوگنڈا سے چارٹرڈ فلائٹس کے ذریعے آنے والے مسافر پہنچتے ساتھ ہی پی سی آر ٹیسٹ کروائیں گے۔ پھر قرنطینہ کے چوتھے روز اور پھر آٹھویں روز بھی پی سی آر ٹیسٹ کروانے لازمی ہوں گے۔ جبکہ ان ممالک سے دُبئی آنے والوں کو 10 روز آئسولیشن میں اور گزارنے کے ساتھ پی سی آر ٹیسٹ بھی کروانا ہوگا۔
Live پاکستان میں کرونا وائرس کی چوتھی لہر سے متعلق تازہ ترین معلومات