بہترین پلیئنگ الیون بنانے کی کوشش کی ہے ضرورت پڑنے پر سرفراز احمد کو بھی موقع ملے گا، بابر اعظم

ہم نے ریلیکس رہنا ہے دباؤ نہیں لینا خود پر اعتماد ہے ،سو فیصد کھیل پیش کریں گے،وزیر اعظم عمران خان سے پیغام نہیں ملا ، آنے سے پہلے ملاقات ضرور ہوئی تھی، گفتگو

ہفتہ 23 اکتوبر 2021 15:49

بہترین پلیئنگ الیون بنانے کی کوشش کی ہے ضرورت پڑنے پر سرفراز احمد کو ..
دبئی (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 23 اکتوبر2021ء) قومی کرکٹ ٹیم کے کپتان بابر اعظم نے کہا ہے کہ بہترین پلیئنگ الیون بنانے کی کوشش کی ہے ضرورت پڑنے پر سرفراز احمد کو بھی موقع ملے گا، ہم نے ریلیکس رہنا ہے دباؤ نہیں لینا خود پر اعتماد ہے ،سو فیصد کھیل پیش کریں گے،وزیر اعظم عمران خان سے پیغام نہیں ملا ، آنے سے پہلے ملاقات ضرور ہوئی تھی۔

بابر اعظم نے ورچوئل پریس کانفرنس میں بھارت کے خلاف میچ کے لیے پاکستان کے بارہ کھلاڑیوں کے ناموں کا اعلان کیا، بابر اعظم کے ساتھ محمد رضوان ،فخر زمان ،محمد حفیظ ، حیدر علی، شعیب ملک، آصف علی ، شاداب خان ، عماد وسیم ، حسن علی، شاہین آفریدی اور حارث رؤف شامل ہیں۔قومی کپتان نے کہا کہ چیئرمین رمیز راجہ نے سو فیصد کھیلنے کا کہا انہوں نے کھیل پر فوکس کرنیکا کہا ہے، رمیز راجہ نے کھلاڑیوں کا حوصلہ بڑھایا اور اعتماد دیا۔

(جاری ہے)

اس موقع پر بابر اعظم نے کہا کہ بہترین پلیئنگ الیون بنانے کی کوشش کی ہے ضرورت پڑنے پر سرفراز احمد کو بھی موقع ملے گا، شعیب ملک بھی ٹیم میں ہیں وہ بھی اسپنرز کو اچھا کھیلتے ہیں، شاداب خان کی باڈی لینگویج اور جوش و خروش سب کے سامنے ہے۔بابر اعظم نے کہا کہ ہم نے ریلیکس رہنا ہے دباؤ نہیں لینا خود پر اعتماد ہے سو فیصد کھیل پیش کریں گے، ہم یہاں کھیلنے کے عادی ہیں ہمارا فوکس کھیل پر ہے اس پر نہیں ہے کہ ہمیں ٹریولنگ کرنا پڑے گی۔

قومی کپتان نے کہا کہ پہلے دو میچز بہت اہم ہیں تاہم ہمیں اعتماد ہے کہ ہم اچھا کھیلیں گے، پاک بھارت ہمیشہ ایک بڑا میچ ہوتا ہے اعصاب پر قابو پانا ہوتا ہے ، تینوں شعبوں میں اچھا کرنا ہے۔انہوں نے کہا کہ میں اپنے پلان کے مطابق کھیلتا ہوں اور بال پر فوکس کرکے کھیلتا ہوں، ہمارے بولرز اچھے اور تجربہ کار ہیں۔کپتان نے کہا کہ ہر ٹیم کی اپنی قوت ہوتی ہے ہماری بولنگ ہمیشہ اچھی رہی ہے۔بابر اعظم نے واضح کیا کہ ہمیں وزیر اعظم عمران خان سے پیغام نہیں ملا لیکن آنے سے پہلے ملاقات ضرور ہوئی تھی، وزیر اعظم عمران خان نے 1992 ورلڈ کپ کی جیت کے تجربے سے آگاہ کیا تھا۔