Live Updates

سپاہی بچوں کا مرکز، مغربی و وسطی افریقہ

DW ڈی ڈبلیو اتوار 28 نومبر 2021 17:40

سپاہی بچوں کا مرکز، مغربی و وسطی افریقہ

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ ۔ DW اردو۔ 28 نومبر 2021ء) اقوام متحدہ کے بہبودِ اطفال کے ادارے یونیسیف نے اپنی ایک تازہ رپورٹ میں مغربی اور وسطی افریقہ میں مسلح تنازعات کے حامل ممالک میں مسلح گروپوں میں شامل چائلڈ سولجر کی صورت حال کا تفصیلی احاطہ کیا ہے۔

دنیا بھر میں کم سن فوجی، دس حقائق

یونیسیف کی رپورٹ میں بیان کیا گیا کہ ان مسلح گروپوں نے بے شمار بچوں کو زبردستی بھرتی کر رکھا ہے اور اسی خطے میں جنسی استحصال کے شکار ہونے والوں بچوں کی تعداد بھی سب سے زیادہ ہے۔

یونیسیف کی رپورٹ

یونیسیف کی ریجنل ڈائریکٹر میری پیئر پوائریئر (Marie-Pierre Poirier) نے نیوز ایجنسی اے پی کو بتایا کہ وسطی اور مغربی افریقی ممالک میں بچوں کی بھرتی کا جو رجحان پیدا ہو چکا ہے، وہ انتہائی پریشانی کا باعث ہے کیونکہ اس طرح بچوں کی ایک نسل کے ضائع ہونے کا امکان پیدا ہو گیا ہے۔

(جاری ہے)

ریجنل ڈائریکٹر کا مزید کہنا تھا کہ اس خطے میں بچوں کے استحصال کے واقعات میں گزشتہ پانچ سالوں میں غیرمعمولی اضافہ ہوا ہے۔

باسٹھ ملین بچے نت نئے انسانی بحرانوں کے شکار: یونیسیف

یہ امر اہم ہے کہ سن 2005 سے اقوام متحدہ نے ایک نظام قائم کر رکھا ہے اور اس کے تحت بچوں کے استحصال کی رپورٹوں کو مرتب کیا جاتا ہے۔ ان استحصالی رپورٹوں میں چائلڈ سولجر کی بھرتی، بچوں کا اغوا، اسکولوں پر حملے، ہسپتالوں پر اٹیک اور جنسی زیادتی شامل ہیں۔ یونیسیف کے مطابق اس وقت دنیا بھر میں ہر پانچواں بچہ جس کا استحصال ہو رہا ہے، اس کا تعلق وسطی یا مغربی افریقہ سے ہے۔

ہزاروں چائلڈ سولجرز

گزشتہ پانچ برسوں میں اس افریقی علاقے میں سپاہی بچوں کی بھرتی میں بہت زیادہ اضافہ ہوا ہے اور اب ایسے باوردی اور مسلح چائلڈ سولجرز کی تعداد اکیس ہزار سے زائد ہو چکی ہے۔ یونیسیف کی رپورٹ کے مطابق ان بچوں کی بھرتی صرف حکومت مخالف مسلح گروپ نہیں کر رہے بلکہ بعض ممالک کی حکومتی فوج بھی ایسی بھرتیوں کا سلسلہ جاری رکھے ہوئے ہیں۔

جنسی استحصال اور بچوں کا اغوا

اقوام متحدہ کے ادارے کی رپورٹ میں یہ بھی بیان کیا گیا کہ وسطی اور مغربی افریقہ میں بھرتی کیے جانے والے بچوں کا جنسی استحصال بھی معمول کی بات سمجھی جاتی ہے۔ جنسی استحصال کے شکار بچوں کی کم سے کم تعداد دو ہزار دو سو بتائی گئی ہے۔ اسی طرح اسی علاقے میں بچوں کے اغوا کے بھی سب سے زیادہ واقعات سامنے آئے ہیں۔

ساڑھے تین ہزار سے زائد بچوں کو اغوا کیے جانے کی تصدیق کی گئی ہے۔

بچوں کی جبری فوجی بھرتی کے خلاف بین الاقوامی معاہدہ

انسانی المیے سے دوچار بچے

وسطی اور مغربی افریقہ کے تنازعات کے شکار ممالک میں برکینا فاسو، چاڈ، کانگو، مالی، موریطانیہ، وسطی افریقی جمہوریہ، کیمرون اور نیجر نمایاں ہیں۔ یونیسیف کی رپورٹ کے مطابق تنازعات اور تشدد کی وجہ سے ان ممالک میں بچوں کو انسانی ہمدردی کی اشد ضرورت پیدا ہو چکی ہے اور اب کورونا وبا نے حالات کو مزید خراب کر دیا ہے۔

رپورٹ کے مطابق ستاون ملین بچے انسانی ہمدردی کے تحت امداد کے طلبگار ہیں اور تنازعات میں تسلسل کی وجہ سے گزشتہ برس کے مقابلے میں ایسے محروم بچوں کی تعداد رواں برس دوگنا ہو گئی ہے۔ کچھ ممالک میں مسلح تنازعات ایک دہائی سے جاری ہیں لیکن ان میں شامل ہونے والے کیمرون اور برکینا فاسو نئے ممالک ہیں، جہاں بچوں کو جبری طور پر تنازعات کا حصہ بنایا جا رہا ہے۔

کیمرون، چاڈ، نیجر اور نائجیریا میں تیس لاکھ بچوں کو بے گھری کا سامنا ہے۔ جہادی حملوں میں ہزاروں بچوں کی اموات ہو چکی ہیں۔

ع ح/ ک م (اے پی)

Live کرونا کی نئی قسم اومیکرون کا پھیلاو سے متعلق تازہ ترین معلومات