Live Updates

پاکستانی کینو اور آم کے لیے کینیا کی مارکیٹ کھولنے کے لیے افریقی وفد کا دورہ

کینیا مشرقی افریقہ کو پاکستانی برآمدات کے لیے گیٹ وے بن سکتا ہے اور کینو کے ساتھ پاکستانی آم کی بھی اچھی مارکیٹ ثابت ہوگا، وحیداحمد

جمعہ 14 جنوری 2022 15:43

پاکستانی کینو اور آم کے لیے کینیا کی مارکیٹ کھولنے کے لیے افریقی وفد ..
کراچی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 14 جنوری2022ء) پاکستان فروٹ اینڈ ویجیٹبل ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن، وفاقی وزارت نیشنل فوڈ سیکیوریٹی اینڈ ریسرچ کے ادارے پلانٹ پروٹیکشن ڈپارٹمنٹ اور وزارت تجارت کی کاوشوں سے افریقہ میں پاکستانی کینو اور آم کے لیے ایک اہم مارکیٹ کھولنے کی کوششیں نتیجہ خیز ثابت ہوئیں، افریقی ملک کینیا کے قرنطینہ ماہرین کے ایک وفد نے رواں ماہ پاکستان کا دورہ کرکے کینو کی درآمد کے لیے قرنطینہ سہولتوں کے معیار پر اطمینان کا اظہار کردیا ہے۔

آل پاکستان فروٹ اینڈویجیٹبل ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن کے سرپرست اعلیٰ وحید احمد کے مطابق جنوری 2020میں نیروبی میں ہونے والی پاکستان افریقہ ٹریڈ کانفرنس کے دوران پی ایف وی اے کے وفد سے کینیا کے درآمد کنندگان اور قرنطینہ ڈپارٹمنٹ کے آفیشلز سے ملاقات میں کینیا کو پاکستان سے کینو کی ایکسپورٹ کے امکانات کا جائزہ لیتے ہوئے دونوں ملکوں کے مابین قرنطینہ معاہدہ طے کرنے پر اتفاق کیا گیا تھا۔

(جاری ہے)

اس اتفاق رائے کو عملی شکل دینے میں کینیا میں پاکستانی سفارتخانہ اور پاکستان کے پلانٹ پروٹیکشن ڈپارٹمنٹ نے کلیدی کردار ادا کیا اور کینیا کے قرنطینہ ماہرین کے چار رکنی وفد نے 2سے 8جنوری 2022کو پاکستان کا دورہ کیا۔ وفد میں کے ای پی ایچ آئی ایس کے منیجنگ ڈائریکٹر Dr. Isaac Macharia، جنرل منیجر فائیٹو سینٹری سروسز Theophilus Mutui، چیف انسپکٹر اور پی آر اے ایکسپرٹ George Momanyi اور Asenath Koech شامل تھیں۔

کینیا کے وفد نے پاکستان میں کینو کے باغات، قرنطینہ سہولتوں کے ساتھ کراچی، ملتان اور بھلوال میں 33 پلانٹس اور پیک ہاؤسز کا دورہ کیا جن میں ہاٹ واٹر ٹریٹمنٹ، ویپر ہاٹ ٹریٹمنٹ اور کولڈ ٹریٹمنٹ کی سہولتیں شامل تھیں۔ وحید احمد کے مطابق کینیا کے قرنطینہ وفد کا دورہ بہت کامیاب رہا اور کینیا کے ماہرین نے پاکستانی کینو کی پراسیسنگ کے معیار اور قرنطینہ ضوابط پر عمل درآمد کے طریقہ کار پر اطمینان کا اظہار کیا۔

وحید احمد کے مطابق کینیا کے قرنطینہ وفد کے دورے کو کامیاب بنانے میں پلانٹ پروٹیکشن ڈپارٹمنٹ کے ڈائریکٹر ٹٰکنیکل سہیل شہزاد نے اہم کردار ادا کیا جس کے پاکستانی برآمدات پر دور رس نتائج مرتب ہوں گے۔ ملکی برآمدات بڑھانے میں اپنا کردار بھرپور طریقے سے ادا کرتے ہوئے دورے کے تمام اخراجات پی ایف وی اے نے برداشت کیے۔وحید احمد کے مطابق کینیا کے قرنطینہ وفد کے کامیاب دورے کے بعد امید ہے کہ پاکستان سے رواں سیزن ہی کینیا کو کینو کی ایکسپورٹ کا آغاز ہوجائے گا۔

انہوں نے کہا کہ کینیا مشرقی افریقہ کو پاکستانی برآمدات کے لیے گیٹ وے بن سکتا ہے اور کینو کے ساتھ پاکستانی آم کی بھی اچھی مارکیٹ ثابت ہوگا۔ رواں سیزن کینو کی ایکسپورٹ کے آغاز کے بعد آئندہ پانچ سال میں کینیا چالیس سے پچاس ہزار ٹن کی مارکیٹ بن سکتا ہے۔
Live کرونا کی نئی قسم اومیکرون کا پھیلاو سے متعلق تازہ ترین معلومات
>