بند کریں
صحت مضامینغذا اور صحتانار ۔ قلب دوست پھل

مزید غذا اور صحت

پچھلے مضامین - مزید مضامین
انار ۔ قلب دوست پھل
انار تقریباََ گول ہوتا ہے ۔ اس کے سر پر تاج ہوتا ہے ، جودیکھنے میں بہت خوشمنا نظرآتا ہے ، اس لیے جو بھی اسے دیکھتا ہے ، فوراََ اٹھا لیتا ہے ۔ جب اسے چھیلا جاتا ہے تو اندر سے سرخ سرخ یاقوتی دانے نکل پڑتے ہیں ۔ آپ ان دانوں کو منھ میں ڈال کر چبائیں تو آپ کو میٹھا، لیکن قدرے ترش ذائقہ محسوس ہوگا۔
رضوانہ نقوی :
انار تقریباََ گول ہوتا ہے ۔ اس کے سر پر تاج ہوتا ہے ، جودیکھنے میں بہت خوشمنا نظرآتا ہے ، اس لیے جو بھی اسے دیکھتا ہے ، فوراََ اٹھا لیتا ہے ۔ جب اسے چھیلا جاتا ہے تو اندر سے سرخ سرخ یاقوتی دانے نکل پڑتے ہیں ۔ آپ ان دانوں کو منھ میں ڈال کر چبائیں تو آپ کو میٹھا، لیکن قدرے ترش ذائقہ محسوس ہوگا۔
انار کھانے کے علاوہ اس کا رس بھی نکال کر پیا جاتا ہے یاپھر جب آپ سلاد بنائیں تو اس کے دانے اس پر چھڑک لیں ، سلاد کا ذائقہ بڑھ جائے گا۔
انار ایک صحت بخش پھل ہے ، لیکن ثقیل ہوتا ہے ، اس لیے دیر سے ہضم ہوتا ہے ۔ اس میں فلیوونائڈز (FLVONOIDS) ، پولی فینالز (POLYPHENOLS) پائے جاتے ہیں ، جو دل کی بیماریوں اور سرطان کو ختم کرتے ہیں ۔
انار میں سبزچائے کی نسبت زیادہ مانع تکسید اجزا (ANTIOXIDANTS) ہوتے ہیں ۔ اس میں پایا جانے والا ایک مرکب ” پیونیکا لاجن “ (PUNICALAGIN) بھی دل اور اس کی شریانوں کے لیے بے حد مفید ہے ۔ اسی مرکب اور دوسرے مفید اجزا کی بنا پر یہ مانع تکسید ہے اور صحت بخش بھی ۔
انار میں ہلکی سی ترشی ہوتی ہے ، لیکن یہ کھانے میں بہت مزے دار ہوتا ہے ۔ اس کا رس نکالنا آسان ہے ، جس طرح نارنگی کو مشین سے دبا کر رس نکالا جاتا ہے ، اسی طرح انار سے بھی رس نکالا جاسکتا ہے ۔ اس کے رس سے سوپ بھی بنایاجاسکتا ہے ۔ اس سے جیلی تیار کی جاتی ہے اور خوشبو کے لیے کیک میں بھی ڈالا جاتا ہے ۔
انار ایک ایرانی ڈش ” فسنجان“ کی تیاری میں بھی استعمال ہوتا ہے ۔ یہ ڈش انار کے رس اور پسے ہوئے اخروٹ سے تیار کی جاتی ہے ۔ ان دونوں چیزوں کو اُبلے ہوئے چاولوں پر ڈالا جاتا ہے تو پلاؤ جیسی ڈش تیار ہوجاتی ہے ۔ انار کے رس سے مشرق وسطیٰ اور بحیرہٴ عرب کے ملکوں میں بھی کافی ڈشیں تیار کی جاتی ہیں ۔ اس کے علاوہ خوشبو اور ذائقے کے لیے بھی اسے بہت سی ڈشوں میں ڈالا جاتا ہے ۔
اس کے بیجوں کو اناردانہ کہتے ہیں ۔ انار کو چھیل کر اس کے بیج نکال لیے جاتے ہیں اور دھوپ میں دس سے پندرہ دنوں تک خشک کیے جاتے ہیں ۔ انار دانہ چٹنی بنانے کے استعمال کیاجاتا ہے ۔ یہ چٹنی سالن میں ڈالی جاتی ہے ، تاکہ اس کا ذائقہ دوبالا ہوجائے ۔ انار دانے کا چورن بھی بنایا جاتا ہے ، جس سے ہاضمہ درست رہتا ہے ۔ انار کو توڑکر اگر ٹھنڈے پانی میں ڈال دیاجائے تو اس کے دانے آسانی سے نکل جاتے ہیں ۔

(1) ووٹ وصول ہوئے