Ba Yaad Shams Ur Rehman Farooqi

''بیاد شمس الرحمٰن فاروقی''

پیر 2 اگست 2021

Ba Yaad Shams Ur Rehman Farooqi
رپورٹ۔ احمد امیر پاشا
گزشتہ صدی کے نصف آخر اور اس صدی کے ابتدائی دو عشروں پر محیط ادبی خدمات اور اپنے منفرداسلوب و نظریات کی بدولت شمس الرحمٰن فاروقی اُردو ادب میں ایک نابغہ روزگار مفکر اور اصلاح کار کے طور پر یاد رکھے جائیں گے۔فاروقی صاحب کا کمال یہ ہے کہ انہوں نے اُردو کے علمی مزاج کی نہ صرف تزئین و آرائش کی بلکہ اس کے ثقافتی مزاج کی تشریح اس مدلل انداز میں کی کہ سیاسی قوت نہ ہونے کے باوجود اس زبان کی عمرانی آفاقیت کو اس زبان کے ناقدین سے بھی تسلیم کرایا۔

شمس الرحمٰن فاروقی ان معدودِدِ چندمشاہیرِ اردو میں سے ہیں جنہوں نے استدلال اور تجدد سے اردوکے احیاء کو ایک عالمی تحریک کا قلب عطا کیا ۔
اپنے عملی مزاج کے اعتبار سے مجلسِ فخرِ بحرین بھی احیائے اُردو ہی کی ایک تحریک ہے، اس لحاظ سے فاروقی صاحب کی فکری میراث کی آبیاری اور اس کی دیکھ بھال میں مجلس اہم کردار ادا کر سکتی ہے۔

(جاری ہے)

اس ضمن میں مجلس فخرِ بحرین کے بانی و سرپرست شکیل احمد صبرحدی کی ادبی جدت پسندی اور فروغِ اُردو کا بے لوث جذبہ بنیادی محرک کا کردار ادا کر رہا ہے، بلاشبہ ان کی سرپرستی میں مجلسِ فخرِ بحرین فاروقی صاحب کی لازوال شخصیت کے مختلف پہلووں اور خدمات کے منفرد زاویوں پر علم و قلم آرائی کی مکمل صلاحیت رکھتی ہے۔

اس سے قبل بھی مجلس ،زبانِ اُردوکی نامور شخصیات کی گرانقدر خدمات پر مثالی تحقیق و اشاعت ، عالمی مشاعروں اور مقامی شعری نشستوں کے انعقاد کا قابلِ فخر کارنامہ سر انجام دے چکی ہے، ان میں شہر یار، فراق،عرفان صدیقی،پنڈت آنند نارائن ملا ، خلیل الرحمٰن اعظمی ،برج نارائن چکبست اور مجروح سلطان پوری جیسے عظیم شعرائے کرام کے نام شامل ہیں۔

شمس الرحمٰن فاروقی کی وفات نے فروغِ و احیائے اُردو کی اُن کوششوں کو شدید زک پہنچائی جو بالخصوص ان کی ذات سے منسلک تھیں، بادی النظر میں عہدِ نو میں اردو ادب کا اجلا پن فاروقی صاحب کی انتھک کاوشوں کا بھی مرہونِ منت ہے، اس لحاظ سے ان کی وفات سے پیدا ہونے والے علمی و ادبی خلا کو مجلس فخرِ بحرین برائے فروغِ اُردو نے فوری طور پر محسوس کرتے ہوئے امسال ان کے لئے تین طرحی نشستوں، ایک عالمی مشاعرے اور ان کی ذات و صفات کے حوالے سے ایک مبسوط تصنیف و مجلے کی اشاعت کا اعلان کیا ہےجو کہ بلا شبہ مجلس کے قدو قامت کی عالمی تنظیم کی طرف سے فاروقی صاحب کے شایان شان خراج ِ عقیدت پیش کرنے کی منصوبہ بندی ہے۔


پہلی آن لائن طرحی نشست "بیاد شمس الرحمٰن فاروقی" کا اہتمام 30جولائی 2021ء بروز جمعہ کیا گیا۔اس طرحی نشست کی صدارت کراچی (پاکستان) سے نیلگوں شعری تجلیات کے معروف شاعراجمل سراج نے کی جبکہ مہمانِ خاص عربی ادبیات کے فاضل سکالر ڈاکٹر شعیب نگرامی تھے۔ اس طرحی نشست کے لئے شمس الرحمٰن فاروقی کی دو غزلوں کے مصرعوں کو مصرعہ طرح کے طور پر مقرر کیا گیا تھا، پہلا مصرعہ تھا، " ''شورِ طوفانِ ہوا ہے بے اماں سنتے رہو " جبکہ دوسرا مصرعہ " ادھر سے دیکھیں تو اپنا مکان لگتا ہے" تھا۔

اس نشست کی نظامت ، حرف و شعر کے شناور خرم عباسی نے کی، انہوں نے تعارفی کلمات میں مرحوم شمس الرحمٰن فاروقی کی خدمات و کمالات کا جامع تذکرہ کرتے ہوئے انہیں فروغِ اُردو کا ایک پورا عہد قرار دیا۔عباسی صاحب نے اس مرتبہ اپنے اسلوبِ نظامت کو فاروقی صاحب کے اشعار کی بجائے ان کے تابناک اقوال سے جلا بخشی۔ شکیل احمد صبرحدی نے نشست میں شریک شعراء اور اس کے آن لائن ناظرین کا شکریہ ادا کرتے ہوئے شمس الرحمٰن فاروقی مرحوم کو سپاسِ نقدو نظر کے حوالے سے مجلس کے آئندہ لائحہ عمل کا اجمالی ذکر کیا۔

انہوں نے ایک طویل عرصے کے بعد اس نشست کے انعقاد پر خوشی کا اظہار کرتے ہوئے اس سلسلے کو تواتر سے جاری رکھنے کے عزم کا اظہار کیا۔اس طرحی شعری نشست میں شریک شعرائے عظام کے کلام سے منتخب اشعار قارئین کی نذر ہیں۔
اجمل سراج۔ کراچی (پاکستان)
ہم اس طرح تری دنیا کےساتھ چلتے ہیں
کنارے جس طرح دریا کے ساتھ چلتے ہیں
جو چاہتے ہیں وہی کچھ دکھائی دیتا ہے
سب اہنے ذوقِ تماشا کے ساتھ چلتے ہیں
جواز ہی نہیں رکھتے کوئی بھٹکنے کا
جو تیرے نقشِ کفِ پا کے ساتھ چلتے ہیں
احمد امیر پاشا۔

(پاکستان )
وہ جس کا چہرہ خوشی کا بیان لگتا ہے
کسی کی پہلی محبت کا مان لگتا ہے
بڑے غرورو تکبر سے بات کرتے ہو
تمھارے سر کو کوئی آسمان لگتا ہے
طاہر عظیم (بحرین)
شب کی تصویر نا مکمل ہے
کچھ ستارے ادھر لگے ہوئے ہیں
چاند کو آئینہ دکھانا ہے
شام سے شیشہ گر لگے ہوئے ہیں
ریاض شاہد ۔

(بحرین )
یقیں کی صورتِ دیگر ہے وصل ہی ورنہ
ترا فراق مجھے امتحان لگتا ہے
تمھارے قرب سے بڑھ جائے حوصلہ میرا
تمھارا ساتھ مجھے سائبان لگتا ہے
سعید سعدی (بحرین)
مخالفت میں تری آسمان لگتا ہے
زمین زادے ترا امتحان لگتا ہے
جفاکرے تو نہیں اس سا دوسرا لیکن
کبھی کبھار وہی مہربان لگتا ہے
اسد اقبال (پاکستان)
یہ خبر پھیلی ہوئی ہے باغ میں چاروں طرف
شورِ طوفانِ ہوا ہے بے اماں سنتے رہو
خامشی کا حکم تو ہے بس رعایا کے لئے
جو بھی فرماویں ہمارے حکمراں سنتے رہو
ڈاکٹر احسان اعظمی (انڈیا)
بہر لحاظ مکمل جہان لگتا ہے
تمھارا شہر ہی ہندوستان لگتا ہے
اسیر جسم نہیں ذہن ہو گیا شاید
کہ اب قفس بھی ہمیں آسمان لگتا ہے
کچھ محترم شعراء نے اس طرحی نشست کے لئے اپنی غزلیات مجلسِ فخرِ بحرین برائے فروغِ اردو کو ارسال کی تھیں، ان کے کلام سے منتخب اشعار پیشِ خدمت ہیں،
ظفر بیگ (انڈیا)
اُدھر سے اجڑے کھنڈر کا نشان لگتا ہے
ادھر سے دیکھیں تو اپنا مکان لگتا ہے
وہ وقت آئے گا دشمن بھی ہمنوا ہوگا
ابھی تو دوست بھی ہر بد گمان لگتا ہے
عامر قدوائی(کویت )
شکست کھا کے بھی چہرے پہ تازگی ہے ابھی
یہ حوصلہ تو ہمارا نشان لگتاہے
بکھر گئی ہیں ہماری تمام تہذیبیں
ہر ایک لمحہ یہاں ترجمان لگتا ہے
اخلاق بندوی (انڈیا)
چیختی ہے آگ روتا ہے دھواں سنتے رہو
بولتا ہے ان دنوں شہرِ اماں سنتے رہو
ایک تم ہی تو نہیں ہو مبتلائے رنج و غم
ہر طرف ہے اک صدائے الاماں سنتے رہو
تاریخ اشاعت: 2021-08-02

Your Thoughts and Comments