پتھرائو کرنے والے کشمیریوں کو گولی مار دینی چاہیے ، بی جے پی رہنما کی زہر افشانی

پیر جون 19:46

سری نگر(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 11 جون2018ء) بھارت کی ہندو انتہا پسند حکمران جماعت بی جے پی کے رہنما نے کہا ہے کہ پتھرا کرنے والے کشمیریوں کو گولی مار دی جائے۔۔مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم کا سلسلہ جاری ہے اور قابض حکومت نہتے کشمیریوں کی جدوجہد آزادی کو کچلنے کیلیے کیمیائی ہتھیاروں سمیت ہر طرح کا اسلحہ استعمال کررہی ہے۔ بھارتی فوج پرامن کشمیریوں کو احتجاجی مظاہروں سے روکنے کے لیے ان پر سیدھی فائرنگ کرتی ہے جب کہ بھارتی مظالم کے خلاف کشمیریوں کا ہتھیار محض پتھر ہوتے ہیں۔

اب بھارتی حکومت بی جے پی کے رکن پارلیمنٹ نے ہرزہ سرائی کرتے ہوئے کہا ہے کہ پتھرا کرنے والے کشمیریوں کو گولی مار دینی چاہیے۔بی جے پی کے رکن اسمبلی اور بھارتی فوج کے سابق لیفیٹننٹ جنرل ڈی پی واتس نے کہا کہ میں نے سنا ہے کہ پتھرا کرنے والے کشمیریوں کے خلاف مقدمات واپس لیے جارہے ہیں لیکن ان لوگوں کو تو گولی مار دینی چاہیے۔

(جاری ہے)

مقبوضہ کشمیر میں محبوبہ مفتی کی حکومت نے 10 ہزار لوگوں کے خلاف مقدمات ختم کرنے کا فیصلہ کیا ہے جن کے خلاف بھارتی فورسز پر پتھرا کا الزام عائد ہے۔

گزشتہ روز بھارتی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے بھی کہا ہے کہ پتھرا کرنے والے 10 ہزار کشمیری نوجوانوں کے خلاف مقدمات واپس لینے کا فیصلہ کیا گیا ہے، تاہم بی جے پی کی مرکزی حکومت نے مقبوضہ کشمیر کے قومی انسانی حقوق کمیشن کو جمع کرائی گئی سفارش میں مقدمات ختم کرنے کی مخالفت کی ہے۔۔