بحریہ ٹاؤن کیس ،ْملک ریاض کو جیل بھیج دیا تو جہاں کرین کھڑی ہے وہیں رہے گی ،ْ چیف جسٹس

تحریری جواب کے بعد سپریم کورٹ نے نیب کو ملک ریاض اور اہل خانہ کے خلاف کارروائی سے رو ک دیا ہمیں معلوم ہے کہ آپ نے سینیٹ انتخابات میں کیا کردار ادا کیا، آپ بس رہنے دیں ،ْچیف جسٹس کا مکالمہ حکومتیں بنانے اور گرانے کا کام چھوڑ دیں، ملک ریاض وہ وقت نہیں رہا، جب آپ کیلئے اگلے ہی دن حکومتیں تبدیل ہوجاتی تھیں ،ْریمارکس

بدھ جون 15:20

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 27 جون2018ء) سپریم کورٹ نے بحریہ ٹاؤن نظرثانی کیس میں ملک ریاض کی جانب سے تحریری جواب جمع کرانے کے بعد قومی احتساب بیورو ( نیب ) کو ملک ریاض اور ان کے اہل خانہ کے خلاف کارروائی سے روک دیا جبکہ عدالت نے بحریہ ٹاؤن کو سرمایہ کاروں سے رقم وصول کرنے کی اجازت دے دی۔ بدھ کو سپریم کورٹ میں چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں بحریہ ٹاؤن نظر ثانی کیس کی سماعت ہوئی، اس دوران بحریہ ٹاؤن کے سربراہ ملک ریاض عدالت میں پیش ہوئے اور تحریری جواب جمع کرایا۔

جواب میں کہا گیا کہ ملک ریاض 15 دنوں میں 5 ارب روپے جمع کروائیں گے اور بحریہ ٹاؤن کے تمام مقدمات سے متعلق معاملات حل ہونے تک رقم موجود رہے گی۔اس دوران چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ ملک ریاض یا ان کے اہل خانہ کی تمام جائیدادیں قرق ( ضبط ) کریں گے۔

(جاری ہے)

چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ کل کی ساری عدالتی کارروائی میڈیا نے بلیک آؤٹ کردی، کیا آپ کا اتنا اثر و رسوخ ہی کیا آپ نے پیسے تو نہیں لگا دئیی ملک ریاض آپ کے ساتھ ناانصافی نہیں ہوگی۔

اس پر ملک ریاض نے کہا کہ ہر چیز میرے نام نہ لگائی جائے ،ْپورے میڈیا میں مجھے ڈان بنا دیا گیاجس پر چیف جسٹس نے کہا کہ کیا آپ حکومتیں بنانے اور گرانے میں ڈان نہیں بنے رہی جس پر ملک ریاض نے کہا کہ میں نے کیا گناہ کیا ہے اس پر چیف جسٹس نے ملک ریاض کو مخاطب کرتے ہوئے ریمارکس دیے کہ حکومتیں بنانے اور گرانے کا کام چھوڑ دیں، ملک ریاض وہ وقت نہیں رہا، جب آپ کیلئے اگلے ہی دن حکومتیں تبدیل ہوجاتی تھیں۔

دوران سماعت چیف جسٹس نے کہا کہ اپنے اخراجات کیلئے جتنے پیسے چاہئیں وہ رکھ لیں، ہمیں بتائیں سینیٹ انتخابات میں آپ نے کیا کیا چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ ہمیں معلوم ہے کہ آپ نے سینیٹ انتخابات میں کیا کردار ادا کیا، آپ بس رہنے دیں۔اس دوران چیف جسٹس نے مکالمہ کیا کہ ملک ریاض میں بحریہ ٹاؤن کراچی کا دورہ کرنے کیلئے آرہا ہوں، میں نے حساب کتاب کرکے ایک ایک روپیہ واپس کروانا ہے۔

چیف جسٹس نے کہا کہ اگر ملک ریاض کو جیل بھیج دیا تو جہاں کرین کھڑی ہے وہیں کھڑی رہے گی۔بعد ازاں عدالت نے ملک ریاض کی جانب سے جمع کرائے گئے جواب پر کہا کہ ملک ریاض نے تحریری تجاویز عدالت میں جمع کراوائیں، جس میں کہا گیا کہ ملک ریاض 5 ارب روپے 15 دنوں میں جمع کروائیں گے۔عدالت نے اپنے حکم میں کہا کہ ملک ریاض کے جواب میں ان کے اہل خانہ کے نام لکھے ہیں ،ْعدالت انہیں قرق کرنے کا حکم دیتی ہے۔

عدالت نے کہا کہ بحریہ ٹاؤن کی جانب سے تجاویز دی گئی ،ْ ملک ریاض نے 5 ارب روپے عدالت میں جمع کرنے پر رضا مندی ظاہر کی ہے۔عدالت کی جانب سے کہا گیا کہ 5 ارب روپے سپریم کورٹ کے اکاؤنٹ میں جمع ہوں گے۔سپریم کورٹ نے کہا کہ دوسری تجویز میں بحریہ ٹاؤن نے کہا ہے کہ وہ اپنی ذاتی جائیداد نہیں بیچیں گے، ملک ریاض کے خاندان کی ذاتی جائیدادیں ضمانت کے طور پر عدالت میں منسلک کی جائیں گی۔

نجی ٹی وی کے مطابق عدالتی حکم میں کہا گیا کہ ملک ریاض رقم کا 20 فیصد سپریم کورٹ کے بینک اکاؤنٹ میں جمع کرائیں گے اور اس حوالے سے سپریم کورٹ میں علیحدہ اکاؤنٹ کھولا جائیگا۔عدالت کی جانب سے کہا گیا کہ نیب بحریہ ٹاون کے خلاف اس وقت تک کارروائی نہ کرے جب تک نظر ثانی کیس کا فیصلہ نہیں ہوتا۔سپریم کورٹ نے کہا کہ بحریہ ٹاؤن کیس کا فیصلہ دینے والے ایک جج ریٹائرڈ ہوگئے اور ایک نے ملک ریاض کے حق میں اختلاف کیا، اس لیے نظرثانی کیس میں 5 رکنی لاجر بینچ تشکیل دیا جائیگا۔