تمباکو کے استعمال اور غیر قانونی اسمگلنگ سے متعلق قوانین کا سختی سے نفاذ ضروری ہے

جامعہ کراچی میں شعبہ نفسیات کے چیئرپرسن پروفیسر ڈاکٹر فرح اقبال،رکن سندھ اسمبلی سدرہ عمران اور کاشف مرزا ودیگر کا آن لائن سیشن کا انعقاد

جمعرات جون 22:06

کراچی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 25 جون2020ء) سوسائٹی فار پروٹیکشن آف رائٹس آف چلڈرن (ایس پی اے آر سی)نے منشیات کے ناجائز استعمال اور غیرقانونی اسمگلنگ کے خلاف عالمی دن کے موقع پر ایک آن لائن سیشن کا انعقاد کیا۔ اس سال کے موضوع ''بہتر نگہداشت کے لئے بہتر علم'' کے موضوع پر اظہار خیال کرتے ہوئے، تمباکو کے مخالف کارکنوں نے تمباکو نوشی کو منشیات کے مسئلے کے طور پر سمجھنے میں بہتری لانے کی ضرورت پر زور دیا اور بتایا گیا کہ صحت اور حکمرانی پر اس کے اثرات کو کم کرنے کے نتیجے میں بہتر علم کیسے ہوگا۔

حکومت کے پاس ملک میں منشیات استعمال کرنے والوں کے بارے میں تازہ ترین اعداد و شمار نہیں ہیں ۔جبکہ ایک اندازے کے مطابق اس کی تعداد تقریبا 6. 6.7 ملین ہے، ملک کی اس وقت کی کل آبادی کا 6 فیصد، 15-64 سال کی عمر کے افراد بغیر ڈاکٹری نسخے کی دوائیوں کے غلط استعمال سمیت غیر قانونی دوا استعمال کر رہے ہیں۔

(جاری ہے)

اقوام متحدہ کے دفتر برائے منشیات اور جرائم کے مطابق، پاکستان میں منشیات کے 6.7 ملین استعمال کنندہ ہیں۔

تمباکو کی غیر قانونی تجارت عروج پر ہے کیونکہ پاکستان میں تمباکو نوشی کے استعمال کرنے والے تمام سگریٹ میں سے 16 غیر قانونی ہیں، تمباکو کی بڑی کمپنیاں اس ناجائز تجارت میں ملوث ہیں۔پی ٹی آئی کے ایم پی اے سندھ اسمبلی کا سدرہ عمران کا کہنا ہے کہ تمباکو تمباکو نوشی سے نہ صرف جسمانی اثرات پڑتے ہیں بلکہ انسانی صحت پر بھی نفسیاتی اثرات مرتب ہوتے ہیں۔

تمباکو تمباکو نوشی ڈیمنشیا اور دیگر سنگین مسائل کا سبب بن رہا ہے۔ غیر فعال سگریٹ نوشی کو نوجوانوں اور نابالغوں کے لئے بھی اتنا ہی خطرناک سمجھا جاتا ہے۔ وہ مزید کہتی ہیں، ڈرگ مافیا کو روکنے اور ہمارے نوجوانوں کو بچانا وفاقی حکومت کی اولین ترجیح ہے۔منیجر میڈیا اسپارک اور تمباکو نو شی سے پاک کراچی کے سربراہ محمد کاشف مرزا نے کہا کہ کسی بھی عمر میں تمباکو نوشی کا استعمال پہلا قدم ہے جو منشیات کے استعمال کا باعث بنتا ہے۔

یہ معاملہ اس قدر سنگین ہوگیا ہے کہ اسے منشیات کے استعمال کی ایک سنگین شکل کے طور پر فوری طور پر دیکھنا چاہئے۔ انہوں نے بتایا کہ پاکستان میں روزانہ تقریبا 1200 بچے تمباکو نوشی شروع کرتے ہیں اور ہر سال تمباکو نوشی کے استعمال کی وجہ سے 170000 افراد لقمہ اجل بن گئے۔ منشیات استعمال کرنے والوں کی اکثریت 25 سے 39 سال کی عمر کے درمیان ہے۔ 30 سے 34 سال کی عمر کے لوگوں میں بھنگ کا استعمال سب سے زیادہ تھا۔

6.7 ملین منشیات استعمال کرنے والوں میں، بھنگ استعمال کرنے والوں میں 40 لاکھ، ہیروئن استعمال کرنے والوں کی تعداد 0.86 ملین، افیون استعمال کرنے والوں کو 0.32 ملین، سیلف میڈیسن کے عادی افراد کو 0.019 ملین، منشیات کے استعمال کرنے والوں کو 0.43 ملین، اور نسخے کے غیر منشیات استعمال کرنے والوں کی تعداد 1.6 ملین تھی۔شمائلہ مزمل خواتین کے حقوق کارکنوں نے کہا: بڑے پیمانے پر آگہی مہم کی ضرورت پر روشنی ڈالی۔

اس ناجائز تجارت کو ختم کرنے کے لئے حکومت سے سنجیدہ کوششوں کی ضرورت ہے تاکہ یہ یقینی بنایا جاسکے کہ تمباکو کی صنعت میں کام کرنے کا کوئی بہانہ نہیں ہے۔جامعہ کراچی میں شعبہ نفسیات کی چیئرپرسن پروفیسر ڈاکٹر فرح اقبال نے کہا کہ میڈیا اور حکمتی فقدان نے پاکستان میں منشیات اور تمباکو کی عادت کو معمول بنادیا ہے۔ ہم اکثر یہ حقیقت بھول جاتے ہیں کہ سگریٹ نوشی نوجوانوں کے لئے منشیات کی طرف راغب ہونے کا ابتدائی اقدام ہے۔

، حارث جدون نے ذکر کیا، سگریٹ کے تقریبا 16 فیصد پیک غیر قانونی پائے گئے۔ یہ تخمینہ تمباکو کی صنعت کے دعووں سے بہت کم ہے تاہم یہ تعداد بھی ایک تشویش ناک شخصیت ہے، گرافک صحت سے متعلق انتباہی، تشہیر اور اشتہاری پابندی، اور دھواں سے پاک جگہوں سے متعلق قوانین پر سختی سے عمل درآمد کے ساتھ، تمباکو کی مصنوعات کی غیر قانونی تجارت پر قابو پانا بہت ضروری اقدام ہے۔