Live Updates

بحرین اور اسرائیل کے درمیان امن معاہدے کے اعلان کے خلاف فلسطینیوں کی ریلی

متحدہ عرب امارات کے بعد بحرین کے بھی اسرائیل کے ساتھ تعلقات معمول پر لانے کے اعلان کے بعد فلسطینی شدید غم و غصے میں مبتلا، غزہ میں امن معاہدوں کے خلاف احتجاج میں اسرائیل، امریکہ، بحرین اور متحدہ عرب امارات کے رہنماؤں کی تصاویر جلا دیں

Kamran Haider Ashar کامران حیدر اشعر اتوار ستمبر 07:27

بحرین اور اسرائیل کے درمیان امن معاہدے کے اعلان کے خلاف فلسطینیوں کی ..
مقبوضہ بیت المقدس (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 13 ستمبر2020ء) بحرین اور اسرائیل کے درمیان امن معاہدے کے اعلان کے خلاف فلسطینیوں کی ریلی۔ متحدہ عرب امارات کے بعد بحرین کے بھی اسرائیل کے ساتھ تعلقات معمول پر لانے کے اعلان کے بعد فلسطینی عوام شدید غم و غصے میں مبتلا، غزہ میں امن معاہدوں کے خلاف احتجاج میں اسرائیل، امریکہ، بحرین اور متحدہ عرب امارات کے رہنماؤں کی تصاویر جلا دیں۔

تفصیلات کے مطابق فلسطینی عوام نے متحدہ عرب امارات کے بعد بحرین کے بھی اسرائیل کے ساتھ تعلقات بحال کرنے کے فیصلے کو مسترد کر دیا ہے۔ الجزیرہ کے مطابق غزہ میں ہونے والا احتجاجی مظاہرہ حماس کی جانب سے منعقد کیا گیا جس میں شرکاء کی تعداد بھی کوئی قابل ذکر نہیں تھی، محض چند درجن افراد اس احتجاج کا حصہ بنے تھے جس میں امریکی صدر اور اسرائیلی وزیر اعظم کے ساتھ بحرین اور متحدہ عرب امارات کے سربراہ کی تصاویر جلائی گئیں۔

(جاری ہے)

فلسطینی حکام کا کہنا ہے کہ ہم تعلقات کی بحالی والے وائرس سے لڑیں گے اور اس کو ہر ممکنہ کوشش کر کے روکیں گے، تاکہ اس کی افزائش ہونے سے روک لی جائے۔ واضح رہے کہ دو عرب ممالک کی جانب سے اسرائیل کو تسلیم کیے جانے کو فلسطینی عوام دھوکہ تصور کرتے ہیں۔ اس سے قبل بحرین کے اسرائیل سے تعلقات قائم کرنے کے اعلان کی فلسطینی اتھارٹی نے مذمت کرتے ہوئے بحرین سے احتجاجاََ اپنا مندوب واپس بلا لیا تھا۔

 
فلسطینی اتھارٹی نے بحرین کے اقدام کو مقبوضہ بیت المقدس، مسجدِ اقصیٰ اور مسئلہ فلسطین سے غداری قرار دیا تھا۔ اس حوالے سے فلسطینی اتھارٹی کے سیکریٹری جنرل صائب اریقات نے کہا کہ امارات کی طرح بحرین بھی فلسطینی عوام کے حقوق کو ڈونلڈ ٹرمپ کی صدارتی مہم پر قربان کر رہا ہے۔ عرب امارات کے اسرائیل سے تعلقات کے قیام کے اعلان پر بھی فلسطین نے سخت ردِ عمل ظاہر کیا تھا تاہم عرب لیگ نے امارات کی مذمت سے متعلق فلسطینی قرار داد منظور نہیں کی تھی۔

واضح رہے کہ بحرین کی جانب سے متحدہ عرب امارات کی طرح اسرائیل سے سفارتی تعلقات قائم کرنے کا اعلان سامنے آیا ہے، دونوں ممالک سفارتی تعلقات کے قیام سے متعلق معاہدے پر باضابطہ دستخط منگل کو کریں گے۔ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے بحرین کے بادشاہ حمد بن عیسی الخلیفہ اور اسرائیل کے وزیرِ اعظم بنجامن نیتن یاہو سے ٹیلی فون پر بات کی جس کے بعد ٹوئٹ میں اعلان کیا کہ بحرین اور اسرائیل بھی امن معاہدے کے لیے متفق ہو گئے ہیں۔
متحدہ عرب امارات،اسرائیل امن معاہدہ سے متعلق تازہ ترین معلومات