کلفٹن میں بائیس سالہ لڑکی کے مبینہ اغوا اور اجتماعی زیادتی میں ملوث ملزمان کے مکمل شواہد حاصل کرلئے گئے

مبینہ زیادتی کرنے والے ملزمان کی تعداد تین تھی،ملزمان کی تصاویر سمیت تمام اہم معلومات تفتیشی ٹیم نے حاصل کرلی،ذرائع

بدھ ستمبر 17:24

کراچی (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 23 ستمبر2020ء) کراچی پولیس نے دعوی کیا ہے کہ کلفٹن میں بائیس سالہ لڑکی کے مبینہ اغوا اور اجتماعی زیادتی میں ملوث ملزمان کے مکمل شواہد حاصل کرلئے گئے ہیں۔ذرائع کے مطابق تفتیشی اداروں نے ملزمان سے متعلق مکمل شواہد حاصل کرلئے ہیں، یہ تمام شواہد موبائل نمبر کے ذریعے حاصل کئے گئے ہیں۔ذرائع کا کہنا ہے کہ اغوا و مبینہ زیادتی کرنے والے ملزمان کی تعداد تین تھی،ملزمان کی تصاویر سمیت تمام اہم معلومات تفتیشی ٹیم نے حاصل کرلی،واقعے کے بعد ملزمان رات بھر کراچی کے مختلف علاقوں میں روپوش ہوتے رہے۔

ذرائع نے یہ بھی بتایا کہ آخری بار ملزمان کی لوکیشن سپر ہائی وے کے قریب کی آئی ہے،ملزمان کا کراچی سے فرار ہونے کا بھی امکان ہے،ملزمان کی گرفتاری کیلئے سندھ کے دیگر اضلاع میں بھی ٹیم بھیجنے کا امکان ہے۔

(جاری ہے)

اس سے قبل کراچی کے پوش علاقے میں بائیس سالہ لڑکی کے اغوا اوراجتماعی زیادتی کا مقدمہ درج کیا گیا تھا۔واضح رہے کہ رات گئے کلفٹن میں لڑکی کو اغوا کے بعد مبینہ اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنایا گیا تھا، ملزمان مبینہ اجتماعی زیادتی کے بعد لڑکی کو نیم بے ہوشی کی حالت میں عوامی پارک میں پھینک کر فرار ہوگئے تھے۔

پولیس کے دریافت کرنے پر لڑکی نے بتایا کہ وہ ایک پرائیویٹ ادارے میں کام کرتی ہے، گزشتہ رات وہ ڈیوٹی ختم کرکے گھر جارہی ہے تھی کہ کلفٹن کے معروف مال کے قریب ایک ویگو گاڑی میرے قریب آکر رکھی۔ گاڑی میں سے دو لڑکے اترے جنہوں نے مجھے پکڑا اور زبردستی گاڑی میں ڈال کر لے گئے۔ گاڑی میں ایک اور لڑکا ڈرائیونگ سیٹ پر موجود تھا۔ لڑکے اسے ایک فلیٹ میں لے گئے، جہاں انہوں نے پوری رات اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنایا۔ صبح اسے پارک میں پھینک کر چلے گئے۔