حکومت نے پٹرولیم مصنوعات پر عائد سیلز ٹیکس اور لیوی میں اضافہ کر دیا

فی لیٹر پٹرول پر عائد لیوی میں 4 روپے جبکہ سیلز ٹیکس میں 1.63فیصد اضافہ کر دیا گیا، پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں موجودہ سطح پر برقرار رہیں گی

muhammad ali محمد علی بدھ 1 دسمبر 2021 00:16

حکومت نے پٹرولیم مصنوعات پر عائد سیلز ٹیکس اور لیوی میں اضافہ کر دیا
اسلام آباد (اُردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔ 30 نومبر 2021ء) حکومت نے پٹرولیم مصنوعات پر عائد سیلز ٹیکس اور لیوی میں اضافہ کر دیا، فی لیٹر پٹرول پر عائد لیوی میں 4 روپے جبکہ سیلز ٹیکس میں 1.63فیصد اضافہ کر دیا گیا، پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں موجودہ سطح پر برقرار رہیں گی۔ تفصیلات کے مطابق حکومت نے یکم دسمبر سے پٹرول اور ڈیزل پر عائد لیوی میں اضافہ کر دیا۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق پیٹرول اور ڈیزل پر 4روپے فی لیٹر لیوی بڑھائی گئی ہے جس کے بعد ڈیزل پر عائد پیٹرولیم لیوی فی لیٹر 13روپے14پیسے ہو گئی جبکہ پٹرول پر عائد لیوی13روپے 62پیسے ہو گئی۔ حکومت نے پٹرول اور ڈیزل پر عائد جی ایس ٹی میں بھی اضافہ کر دیا۔ ڈیزل پر جی ایس ٹی 7.2فیصد سے بڑھا کر 7.37فیصد کر دیا گیا جبکہ پٹرول پر جی ایس ٹی صفر سے بڑھا کر 1.63فیصد کر دیا گیا ہے۔

(جاری ہے)

لیوی اور جی ایس ٹی میں اضافے کے باوجود پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں موجودہ سطح پر برقرار رکھنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ وزارت خزانہ نے یکم دسمبر سے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں رد و بدل کے حوالے سے اعلامیہ جاری کر دیا۔ وزارت خزانہ نے اگلے 15 روز کیلئے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں موجودہ سطح پر ہی برقرار رکھنے کا اعلان کیا ہے۔ اس فیصلے کے تحت پٹرول کی فی لیٹر قیمت 145 روپے 82 پیسے، ہائی اسپید ڈیزل کی قیمت 142 روپے 62 پیسے، لائٹ اسپیڈ ڈیزل کی قیمت 114 روپے 7 پیسے، جبکہ مٹی کے تیل کی قیمت 116 روپے 53 پیسے برقرار رہے گی۔

اس سے قبل اطلاعات سامنے آئی تھیں کہ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 8 روپے تک کمی ہو سکتی ہے۔ نجی ٹی وی چینل نیو ٹی وی کے مطابق پٹرولیم ڈویژن کو اوگرا کی تیل کی قیمتوں میں کمی بیشی کرنے کی ورکنگ سمرنی موصول ہوئی،ورکنگ سمری میں پٹرول 8 روپے فی لیٹر سستا کرنے کی تجویز دی گئی، پٹرول 5 روپے تک سستا ہونے کا امکان ظاہر کیا گیا۔ واضح رہے کہ گشتہ ہفتے ترجمان وزارت خزانہ نے نوید سنائی تھی کہ دسمبر میں پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی ہو سکتی ہے۔

ترجمان وزارت خزانہ مزمل اسلم نے ہفتے کے روز جاری کیے گئے اپنے ٹویٹ میں کہا کہ عالمی مارکیٹ میں خام تیل کی قیمت کم ہو کر72.91 ڈالر فی بیرل کی سطح پر آگئی ہے۔ عالمی مارکیٹ میں تیل کی قیمتوں میں کمی کا اثر یقینی طور پر درآمدات اور پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں پر بھی پڑے گا۔ مزمل اسلم نے مزید کہا کہ اللہ پاکستان پر مہربان ہے، عالمی مارکیٹ میں تیل کی قیمتوں میں کمی کے اثرات پندرہ دسمبر کو پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں نظر آئیں گے۔

جبکہ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی کے حوالے سے وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے کہا کہ شکر ہے عالمی منڈی میں تیل کی قیمت کم ہوئی، پاکستان میں اس کے اثرات 2 ماہ بعد آئیں گے۔ واضح رہے کہ گزشتہ ہفتے عالمی منڈی میں خام تیل کی قیمت میں 10 فیصد سے زائد کی نمایاں کمی آئی۔ گزشتہ ہفتے عالمی مارکیٹ میں خام تیل کی فی بیرل قیمت میں ڈیڑھ سال کے دوران سب سے بڑی یومیہ گراوٹ دیکھنے میں آئی تھی۔
>