سو میگاواٹ بجلی کی پیداوار کے بعد کوئی جواز حکومت پاکستان کیلئے باقی نہیںہے کہ وہ آزاد خطے کو لوڈ شیڈنگ کے عذاب میں مبتلا کرے‘

پاکستان خطے کو لوڈشیڈنگ سے مستثنیٰ قراردے جماعت اسلامی آزاد جموںوکشمیرکے نائب امیر شیخ عقیل الرحمان ایڈووکیٹ کی صحافیوں سے بات چیت

منگل اپریل 19:23

مظفرآباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 24 اپریل2018ء) جماعت اسلامی آزاد جموںوکشمیرکے نائب امیر شیخ عقیل الرحمان ایڈووکیٹ نے کہاہے کہ25سو میگاواٹ بجلی کی پیداوار کے بعد کوئی جواز حکومت پاکستان کیلئے باقی نہیںہے کہ وہ آزاد خطے کو لوڈ شیڈنگ کے عذاب میں مبتلا کرے‘ پاکستان خطے کو لوڈشیڈنگ سے مستثنیٰ قراردے‘آزاد کشمیر کی قیادت سے حوالے سے وفاق سے دوٹوک بات کرے اور کہے کہ ہمیں اب بجلی کی لوڈشیڈنگ سے بچایاجائے،حکومت پاکستان اور مسلم لیگ ن اپنے اس کارنامے کو اپنی سیاسی انتخابی مہم میں عوام کو بتارہی ہے کہ اس نے آزاد کشمیرسے 25سومیگاواٹ بجلی کی پیدوار شروع کردی ہے تو آزاد کشمیرکو تو محض 350میگاواٹ کی ضرورت ہے اس سے لوڈ شیڈنگ ختم ہوجائے گی،ان خیالات کااظہارانھوںنے صحافیوںسے گفتگوکرتے ہوئے کیا،انھوںنے کہاکہ آزاد کشمیرکے عوام کو بھیڑبکریاں نہ سمجھا جائے یہ غیور قوم ہے جس نے جہا د کے ذریعے یہ خطہ آزاد کروایاہے اور اپنے قومی تشخص پر کوئی انچ نہیں آنے دے گی،انھوںنے کہاکہ یہ کوئی سیاسی ایشو اورپوائنٹ سکورنگ کا ایشو نہیں ہے بلکہ آزاد خطے کے عوام کا حق ہے اور اس حق کے حصول کے لیے سب کو مل کرآوازبلند کرنی ہوگی،اس مقصد کے حصول کے لیے اسمبلی کی سطح پر جب پاکستان کے وزیرا عظم آئیں ان کے سامنے اپنا مسئلہ رکھنا چاہیے،،جماعت اسلامی نے اسمبلی کے فلور پر بات کی ہے اور باقی جماعتیں بھی یک زبان ہوکر یہ مسئلہ اٹھائیںیہ ہم کا مسئلہ ہے حق کامقبوضہ کشمیرکی آزادی اور آزاد خطے کے حقوق کے حصول کے لیے سب کو مل کر کام کرنا ہوگا۔