Live Updates

سعودی عرب میں گودام پر چھاپہ، 43لاکھ طبی ماسک برآمد

یہ اب تک مملکت میں پکڑا جانے والا طبی ماسک کا سب سے بڑا ذخیرہ ہے

Muhammad Irfan محمد عرفان جمعرات مارچ 08:58

سعودی عرب میں گودام پر چھاپہ، 43لاکھ طبی ماسک برآمد
جدہ(اُردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔26مارچ 2020ء) سعودی مملکت میں کورونا قابو سے باہر ہوتا جا رہا ہے۔ صرف دو روز کے اندر مملکت میں 300 سے زائد مریض سامنے آ گئے ہیں۔ آخری اطلاعات تک مملکت میں کورونا وائرس کے مریضوں کی گنتی 900 تک جا پہنچی ہے۔ اس موذی وائرس سے بچاؤ کی خاطر لوگ دھڑا دھڑ سرجیکل ماسک خرید رہے ہیں۔ تاہم بے حس منافع خوروں نے اس موقع سے فائدہ اُٹھانے کی ٹھان لی ہے اور مارکیٹ میں جان بوجھ کر ماسک کی مصنوعی قلت پیدا کر دی ہے۔

لوگ ماسک کی تلاش میں مارے مارے پھر رہے ہیں مگر فارمیسی اور دُکانوں سے انہیں مایوس لوٹنا پڑ رہا ہے۔ سعودی وزارت تجارت نے لوگوں کی مجبوریوں سے فائدہ اُٹھانے والے ذخیرہ اندوزوں کے خلاف بھرپور کریک ڈاؤن شروع کر دیا ہے۔سعودی اخبار سبق کے مطابق وزارت تجارت کی تفتیشی ٹیم نے فو ڈ اینڈ ڈرگ اتھارٹی کے اہلکاروں کے ساتھ مل کر جدہ کے ایک گودام پر چھاپہ مارا گیا تو وہاں سے 43 لاکھ 10 ہزار طبی ماسک برآمد ہوئے، جو کہ ذخیرہ کیے گئے ماسک کی پکڑی جانے والی سب سے بڑی کھیپ ہے۔

(جاری ہے)

لاکھوں کی گنتی میں پڑے یہ ماسک ذخیرہ اندوزوں نے ماسک کی بڑھتی ہوئی طلب کے باعث من مانی قیمتوں پر فروخت کرنے کی خاطر چھُپائے ہوئے تھے۔ تاہم مخبری کے بعد گودام کے حِس ذخیرہ اندوزکے خلاف کارروائی کی گئی اور یوں اس کی گراں فروشی کی ناجائز خواہش دھری کی دھری رہ گئی۔گودام کے مالک کے خلاف ناجائز منافع خوری اور ذخیرہ اندوزی کا مقدمہ درج کر کے اسے پبلک پراسکیوشن کے حوالے کر دیا گیا ہے جو ضابطے کی کارروائی کے بعد اسے عدالت میں پیش کر کے مقدمہ چلائے گا۔

وزارت تجارت کے مطابق حالیہ کارروائی کے دوران ضبط کیے جانے والے لاکھوں ماسک کو مارکیٹ میں سپلائی کیا جائے گا تاکہ اس وقت ہونے والی قلت پر قابو پایا جا سکے اور عوام کو سستے داموں ماسک دستیاب ہو سکیں۔واضح رہے کہ گزشتہ ہفتے بھی وزارت تجارت کی ایک ٹیم نے ایک گودام پر چھاپہ مار کر وہاں پر بیس لاکھ سے زائد ماسک ضبط کر لیے تھے۔ گودام میں اس کے علاوہ گلوز بھی ہزاروں کی گنتی میں موجود تھے۔

انسپکٹرز نے چھاپہ مار کر سارا سامان ضبط کر لیا اور گودام میں موجود ملازمین کو بھی گرفتار کر کے پولیس کے حوالے کر دیا ۔ وزارت تجارت نے انتباہ کیا ہے کہ جن تاجروں نے زیادہ منافع کمانے کے چکر میں حفاظتی ماسک چھپا رکھے ہیں وہ فوری طور پر اسے مارکیٹ میں لے آئیں، ورنہ ان کے خلاف سخت ایکشن لیا جائے گا۔وزارت کی جانب سے لوگوں کو بھی تاکید کی گئی ہے کہ وہ ذخیرہ اندوزوں کے خلاف وزارت تجارت کی ویب سائٹ پر دیں تاکہ مملکت میں ماسک کی مصنوعی قلت پر قابو پایا جا سکے۔اس وقت سعودی عرب میں ذخیرہ اندوزی کے سبب ماسک کئی گنا زیادہ قیمت پر فروخت ہو رہا ہے۔ 50 ماسک کا پیکٹ جو آ ج سے ایک ماہ پہلے 8 ریال میں فروخت ہو رہا تھا اب وہ 50 ریال میں بھی منت سماجت کے بعد بیچا جا رہا ہے۔ 
کرونا وائرس کی تباہ کاریاں سے متعلق تازہ ترین معلومات