امریکی صدر انتخابات سے قبل سپریم کورٹ میں ہونے والی خالی نشست پر جج مقررکرنا چاہتے ہیں

آئندہ ہفتے سپریم کورٹ کی خالی ہونے والی نشست کے لیے نامزدگی کر دیں گے. صدر ٹرمپ کا خطاب

Mian Nadeem میاں محمد ندیم پیر ستمبر 09:14

امریکی صدر انتخابات سے قبل سپریم کورٹ میں ہونے والی خالی نشست پر جج ..
ٍواشنگٹن(اردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین-انٹرنیشنل پریس ایجنسی۔22 ستمبر ۔2020ء) امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا ہے کہ سپریم کورٹ کی جج جسٹس روتھ بیڈر گنزبرگ کے انتقال کے بعد وہ ان کی جگہ کسی خاتون جج کو ہی اس عہدے کے لیے نامزد کریں گے. شمالی کیرولائنا میں انتخابی ریلی سے خطاب کرتے ہوئے صدر ٹرمپ نے کہا کہ وہ آئندہ ہفتے سپریم کورٹ کی خالی ہونے والی نشست کے لیے نامزدگی کر دیں گے.

صدر نے کہا کہ میرا خیال ہے کہ اس نشست کو پر کرنے کے لیے کسی خاتون کا انتخاب ہونا چاہیے کیوں کہ میں مردوں کے مقابلے خواتین کو کہیں زیادہ پسند کرتا ہوں صدر ٹرمپ کے اس اعلان کے دوران ا±ن کے حامیوں نے ”اس نشست کو پر کریں“ کے نعرے لگائے.

(جاری ہے)

اس سے قبل صدر دو خواتین ججز کی تعریف کر چکے ہیں جن میں سے کسی ایک کو صدر اس مستقل نشست کے لیے نامزد کر سکتے ہیں مذکورہ خواتین ججز کو انہوں نے وفاقی ایپلٹ عدالتوں میں ترقی دی تھی.

ان میں سے ایک شکاگو کی ساتویں سرکٹ کورٹ آف اپیل کی جج ایمی کونی بیرٹ اوردوسری اٹلاٹنا کی گیارہویں کورٹ آف سرکٹ کی جج باربرا لاگوا ہو سکتی ہیں سپریم کورٹ میں اس وقت قدامت پسند نظریات کے حامل ججوں کو چار کے مقابلے میں پانچ کی برتری حاصل ہے. امریکہ میں سپریم کورٹ کے جج کی تعیناتی تاحیات ہوتی ہے گنزبرگ 27 سال تک امریکی سپریم کورٹ کی جج رہنے کے بعد کینسر کے باعث انتقال کر گئیں تھیں انہیں لبرل نظریات کی حامل جج سمجھا جاتا تھا.

ماہرین کا کہنا ہے کہ اگر صدر ٹرمپ قدامت پسند نظریات کی حامل جج تعینات کرانے میں کامیاب ہو گئے تو امریکی سپریم کورٹ میں ان نظریات کے حامل ججز کی تعداد 6 ہو جائے گی لیکن صدر ٹرمپ کو امریکی سینیٹ سے اس کی منظوری لینا ہو گی جہاں ری پبلکن اراکین کو ڈیمو کریٹک پارٹی کے 47 اراکین کے مقابلے میں 53 اراکین کی حمایت حاصل ہے. نیشنل پبلک ریڈیو کے مطابق انتقال سے چند روز پہلے گنز برگ نے اپنی پوتی کلیرا سپرا کو ایک بیان لکھوایا تھا جس میں کہا گیا تھا کہ میری سب سے بڑی خواہش یہ ہے کہ میری جگہ سپریم کورٹ میں تعیناتی نئے صدر کے منتخب ہونے تک نہ کی جائے‘تاہم سینیٹ میں ری پبلکن پارٹی کے لیڈر مچ مکونل نے ایک بیان میں کہا کہ صدر ٹرمپ کی جانب سے نامزد کیے جانے والے کسی بھی جج کی منظوری کے لیے امریکی سینیٹ میں ووٹنگ کی جائے گی.