ہ* مسجد میں عبادت کے دوران فلسطینیوں کو تشدد کا نشانہ بنانا قابلِ مذمت ہے، وزیر خارجہ

ض* فلسطینیوں پر ظلم کرکے بے دخل کرنے کا کوئی اخلاقی اور سیاسی جواز نہیں بنتا م*پاکستان، فلسطینی بھائیوں کے ساتھ ہے، فلسطینیوں کو ان کے حقوق ملنے چاہئیں ،بیان

اتوار مئی 18:35

‘اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - آن لائن۔ 09 مئی2021ء) وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی اسرائیلی فورسز کی جانب سے مسجد اقصیٰ کے قریب عبادت میں مصروف فلسطینیوں پر تشدد کے واقعات کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ پاکستان نے ہمیشہ اسرائیل کی جانب سے فلسطین پر حملوں کی پرزور الفاظ میں مذمت کی ہے۔انہوں نے ایک جاری بیان میں کہا کہ فلسطینیوں پر ظلم کرکے بے دخل کرنے کا کوئی اخلاقی اور سیاسی جواز نہیں بنتا۔

وزیر داخلہ نے حالیہ واقعات پر رد عمل دیتے ہوئے کہا کہ رمضان المبارک کی 27 ویں شب مسجد میں عبادت میں مشغول نمازیوں کو تشدد کا نشانہ بنانا انتہائی قابل مذمت ہے، فلسطینیوں پر ظلم و ستم کسی صورت قابل قبول نہیں۔شاہ محمود قریشی نے کہا کہ پاکستان، فلسطینی بھائیوں کے ساتھ ہے اور فلسطینیوں کو ان کے حقوق ملنے چاہئیں۔

(جاری ہے)

وزیر خارجہ شاہ محمود کا کہنا تھا کہ پاکستان نے فلسطین کے حوالے سے، ہمیشہ واضح اور ٹھوس مؤقف اختیار کیا ہے اور مجھے خوشی ہے کہ عرب لیگ نے اس حوالے سے ایک ہنگامی اجلاس طلب کیا ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ میں سمجھتا ہوں کہ عرب لیگ، او آئی سی اور مسلم امہ کو مل کر اس ظلم و ستم کے خلاف آواز اٹھانی چاہیے اور انسانی حقوق کے علمبرداروں اور مغربی ممالک کی توجہ اس جانب مبذول کروانی چاہیے۔ علاوہ ازیں وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ اسلاموفوبیا کا ٹرینڈ بڑھتا جارہا ہے اس کا حل تلاش کرنا ہوگا۔وزیرخارجہ نے کہا کہ حضورؐ کی شان میں گستاخی کے واقعات، پوری دنیا کے مسلمانوں کی دل آزاری کا سبب بنتے ہیں اور یہ کسی صورت بھی قابل برداشت نہیں، جو عناصر نفرت کے بیچ بو رہے ہیں ہمیں مل کر ان کا سدباب کرنا ہو گا۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ میں نے وزیراعظم عمران خان کے وڑن کی روشنی میں، ایران، ترکی اور انڈونیشین حکام کو اس معاملے پراعتماد میں لیا، مسلم ممالک کو مل کر او آئی سی کے فورم سے مشترکہ کاوشیں بروئے کار لانا ہوں گی۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان کے دورہ سعودی عرب سے دونوں ممالک کے مابین برادرانہ تعلقات کو نئی جہت اور وسعت ملی ہے، ہمارے درمیان ادارہ جاتی میکنزم کے قیام کا فیصلہ ہوا ہے، جس سے پاکستانیوں کے لیے روزگار کے نئے مواقع کھلیں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ عید الفطر کے بعد سعودی حکام کا ایک وفد اس حوالے سے ‘اسٹرکچرڈ مذاکرات’ کیلئے پاکستان آئے گا، اس کے بعد سعودی وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان آل سعود اور ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان پاکستان تشریف لائیں گے۔