Live Updates

پی ڈی ایم حکومت نے پہلا کام اے وی ایم مشین اور اوورسیزپاکستانیوں سے ووٹنگ کا حق چھینا

ان جماعتوں کو شفاف الیکشن سوٹ نہیں کرتا، پی ٹی آئی کو عوام نے 3 کروڑ ووٹ دئیے، حکومت کا مینڈیٹ کھوکھلا ہے، ان کے پاس حکومت کرنے کا کوئی جواز نہیں۔مرکزی رہنماء پی ٹی آئی سینیٹر شبلی فراز

Sanaullah Nagra ثنااللہ ناگرہ جمعرات 2 مئی 2024 19:38

پی ڈی ایم حکومت نے پہلا کام اے وی ایم مشین اور اوورسیزپاکستانیوں سے ..
اسلام آباد ( اردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین ۔ 02 مئی 2024ء) پاکستان تحریک انصاف کے مرکزی رہنماء سینیٹر شبلی فراز نے کہا ہے کہ پی ٹی آئی استعفوں کے بعد پی ڈی ایم حکومت نے پہلا کام اے وی ایم مشین اور اوورسیز سے ووٹنگ کا حق چھینا، ان جماعتوں کو شفاف الیکشن سوٹ نہیں کرتا، پی ٹی آئی کو عوام نے 3 کروڑ ووٹ دئیے، حکومت کا مینڈیٹ کھوکھلا ہے۔ انہوں نے پی ٹی آئی رہنماؤں کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان تحریک انصاف کے استعفوں کے بعد دو قوانین جن کو تبدیل کیا گیا ایک اے وی ایم مشین اور دوسرا اوورسیز پاکستانیوں کو ووٹ کا حق دینا ، یہ اس لئے کیا گیا کہ ن لیگ ، پیپلزپارٹی اور ایم کیوایم دیگر جماعتیں جن کو شفاف الیکشن سوٹ نہیں کرتا۔

پہلی بار پی ٹی آئی نے جب دو صوبوں پنجاب اور خیبرپختونخواہ کی قانون کے مطابق اسمبلیوں کو توڑا لیکن نوے روز میں انتخابات نہ کروا کر آئین توڑا گیا، پھر سب نے دیکھا کہ پاکستان کی معیشت اور سیاسی استحکام کا کیا بنا؟ پی ٹی آئی کے ورکرز کو تشدد اور ڈرا دھمکا کر سائیڈ لائن کیا گیا۔

(جاری ہے)

پھر جب الیکشن کا اعلان ہوگیا تو ہمارے امیدواروں سے کاغذات چھینے، ہمارا انتخابی نشان چھینا، اس سے بڑا کسی سیاسی جماعت سے کوئی ظلم نہیں ہو سکتا، پی ٹی آئی کے انٹراپارٹی الیکشن کو متنازع بنا کر انتخابی نشان چھینا گیا، لیکن عوام نے پریشان کردینے والے انتخابی نشان پر ووٹ دیا۔

اس کے باوجود سلام ہے پاکستان کی عوام کو جو عمران خان کی سپورٹ میں نکلے اور پی ٹی آئی کو تین کروڑ ووٹ دئیے اس کے بعد جو ہوا وہ قوم کے سامنے ہے۔ حکومت کا مینڈیٹ کھوکھلا ہے، ان کیلئے اخلاقی جواز نہیں بنتا کہ حکومت کریں۔ اسی طرح قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر عمر ایوب خان نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ الیکشن شفاف کرانے کی ذمہ داری کس کی تھی؟ الیکشن کمیشن کو صاف شفاف انتخابات کروانے کے لیے اربوں روپے دئیے گئے الیکشن کمیشن اور ان کے ممبران کو مستعفی ہونا چاہیے کیونکہ انہوں نے پاکستان کی عوام کی امانت میں خیانت کی ہے، مستعفی ہونے کا مطالبہ کرتے رہیں گے، جس کینسر کی ہم نے پہلے دن سے نشاندہی کی اس کو نکالنے کیلئے درست ریڈیو،کیمیوتھراپی ہونی چاہئے، دھاندلی کینسر پھیلنے سے ملک میں انتشار پھیلے گا۔

عمر ایوب خان نے کہا کہ چیف الیکشن کمیشن اور کمیشن کے دیگر ممبران فوراً اپنی نشستوں سے استعفیٰ دیں وہ صاف و شفاف انتخابات کروانے میں ناکام رہے ہیں۔ اسی طرح پاکستان تحریک انصاف نے انتخابات میں مبینہ دھاندلی پر وائٹ پیپر جاری کردیا، چیئرمین پی ٹی آئی بیرسٹر گوہر علی خان نے پی ٹی آئی رہنماؤں اپوزیشن لیڈر عمرایوب خان، شبلی فراز ودیگر کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ الیکشن میں پی ٹی آئی کو لیول پلیئنگ فیلڈ نہیں دی گئی، فارم 45 کی بجائے فارم 47 پر نتیجہ دیا گیا، فارم 47 کی بنیاد پر ہماری جیت کو ہار میں تبدیل کیا گیا۔

انتخابات دھاندلی کے خلاف سپریم کورٹ میں پٹیشن دائر کی وہ بھی نہیں سنی گئی، ہماری نشستیں دوسری جماعتوں کو دے دی گئیں، جس کی بنیاد پر پھر ہماری مخصوص نشستیں بھی چھَن گئی، ہم الیکشن میں 180سیٹیں جیتے ہوئے ہیں، دھاندلی کے خلاف ہمارا احتجاج جاری رہے گا۔ گوہر خان نے کہا کہ 8 فروری کو الیکشنز ہوئے پوری قوم نے دیکھا کہ کس طرح فارم 45 والوں کی جیت کو شکست میں بدل دیا گیا صرف یہی نہیں بلکہ اک پلان کے تحت ہم سے ہمارا بلے کا نشان چھینا گیا ہماری انٹرا پارٹی الیکشنز کلعدم قرار دیے گئے ہمارے امیدواران کے کاغذات نامزدگی چھینے گئے انکو مختلف نشانات الاٹ کیے گئے مگر پاکستانی عوام نے بھرپور طریقے سے نہ صرف الیکشن میں Participate کیا بلکہ عمران خان کے منتخب نمائیندوں کو جو نشانات الاٹ کیے گئے اس پر مہر لگائی ہماری مخصوص نشستوں کا کیس سپریم کورٹ میں Pending ہے ہم نے متعدد پٹیشنز فائل کی مگر کوئی پیشرفت ابھی تک نہ ہوسکی الیکشن کمیشن صاف شفاف انتخابات کروانے میں ناکام رہا ہے۔

پاکستان تحریک انصاف کا قیام ہی انصاف پر تھا عمران خان گرفتاری سے قبل بھی سینکڑوں دفعہ خود عدالتوں میں پیش ہوتے رہے ہیں آج جس طرح انکے خلاف 14/14 گھنٹے جیل ٹرائلز ہورہے ہیں آدھے گھنٹے کے اندر 30 صفحات پر مشتمل ججمنٹس دے دی جاتی ہے وکلا کو صفائی کا موقع بھی نہیں دیا جاتا تو عدلیہ کا بھی کام ہے کہ وہ انصاف کے حصول کو یقینی بنائے۔
Live عمران خان سے متعلق تازہ ترین معلومات