اُردو پوائنٹ پاکستان اسلام آباداسلام آباد کی خبریںپولیس سے بدتمیزی کرنے والی خاتون کو پولی کلینک اسپتال منتقل کر دیا ..

پولیس سے بدتمیزی کرنے والی خاتون کو پولی کلینک اسپتال منتقل کر دیا گیا

میری موکلہ دل کی مریضہ ہیں اور دباؤ میں ذہنی حالت مفلوج ہو جاتی ہے۔ وکیل

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 21 اکتوبر2018ء)پولیس سے بدتمیزی کرنے والی خاتون  کو پولی کلینک اسپتال منتقل کر دیا گیا۔وکیل کا کہنا ہے کہ میری موکلہ دل کی مریضہ ہیں اور دباؤ میں ذہنی حالت مفلوج ہو جاتی ہے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق پولیس سے بدتمیزی کرنے والی خاتون ڈاکٹر شہلا کو ڈیوٹی جج کے رو برو پیش کیا گیا۔ملزمہ ڈاکٹر شہلا کے وکیل نے درخواست ضمانت دائر کی۔

وکیل کا کہنا ہے کہ ایف آئی آر میں درج تمام دفعات قابل ضمانت ہیں۔میری موکلہ دل کی مریضہ ہیں اور دباؤ میں ذہنی حالت مفلوج ہو جاتی ہے۔میری موکلہ بیرون ملک سے کافی عرصے بعد پاکستان آئیں۔پولیس اہلکاروں نے رہنمائی کرنے کی بجائے دباؤ کا ماحول بنا دیا۔عدالت نے خاتون کا 14 روزہ جوڈیشل ریمانڈ منظور کر لیا اور خاتون کو کل متعلقہ عدالت پیش کرنے کا حکم دیا ہے۔

(خبر جاری ہے)

تازہ ترین اطلاعات کے مطابق پولیس سے بدتمیزی کرنے والی خاتون کو پولی کلینک اسپتال منتقل کر دیا گیا
کیونکہ خاتون دل کی مریض ہیں اس لیے انہیں جیل کی بجائے آئی سی یو منتقل کر دیا گیا ہے۔خیال رہے اسلام آباد کے ڈپلومیٹک انکلیو میںپولیس کے ساتھ بدتمیزی کرنے والی خاتون ڈاکٹر شہلا شکیل کو گرفتار کیا گیا۔اسلام آباد میں ڈپلومیٹک انکلیومیں پولیس کو دھمکیاں دینے والی خاتون ڈاکٹر شہلا کو راولپنڈی ڈی ایچ اے فیزٹو سے گرفتار کیا گیا اور تھانہ وومن اسلام آباد منتقل کردیا گیا۔

پولیس ذرائع کے مطابق شہلا شکیل سیٹھی امریکا میں ڈاکٹر رہی ہیں اور حال ہی میں وطن واپس آئی ہیں۔مذکورہ پولیس افسر نے درخواست میں موقف اختیار کیا تھا کہ ڈاکٹر شہلا نامی خاتون نے بغیر نمبر پلیٹ والی گاڑی کے ساتھ ڈپلومیٹک انکلیو کے اندر جانے کی کوشش کی اور روکنے پر پولیس اہلکاروں کے ساتھ بدتمیزی کی اورسنگین نتائج کی دھمکیاں دیں۔واضح رہے کہ گزشتہ روز پولیس اہلکار کو دھمکانے والی خاتون کیخلاف مقدمہ تھانہ سیکریٹریٹ میں اے ایس آئی طاہرفاروق کی مدعیت میں درج کیا گیا تھا۔

اپنی رائے کا اظہار کریں -

اسلام آباد شہر کی مزید خبریں