اورنج لائن کا نام تبدیل کر کے بی آر ٹی عبد الستار ایدھی کردیا گیا

وزیراعلیٰ سندھ کی محکمہ ٹرانسپورٹ کو اورنج لائن منصوبے کا بنیادی ڈھانچہ مکمل کرنے کی ہدایت

منگل ستمبر 23:03

اورنج لائن کا نام تبدیل کر کے بی آر ٹی عبد الستار ایدھی کردیا گیا
کراچی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 29 ستمبر2020ء) وزیر اعلی سندھ سید مراد علی شاہ نے محکمہ ٹرانسپورٹ کو اورنج لائن منصوبے کا بنیادی ڈھانچہ مکمل کرنے ، ریڈ لائن اے ڈی بی کے قرض کو موثر بنانے اور ییلو لائن کے ڈیزائن کو حتمی شکل دینے کی ہدایت دے دی تاکہ کراچی شہر کے وسیع تر مفاد میں ان پر کام شروع کیا جاسکے۔ یہ بات انہوں نے منگل کے روز بی آر ٹی سسٹم کی پیشرفت کا جائزہ لینے کے لئے محکمہ سندھ ٹرانسپورٹ کے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کہی۔

اجلاس میں وزیر ٹرانسپورٹ اویس قادر شاہ ، چیئرمین پی اینڈ ڈی محمد وسیم ، ایڈمنسٹریٹر کراچی افتخار شلوانی ، کمشنر کراچی سہیل راجپوت ، سیکرٹری ٹرانسپورٹ شائق احمد اور پروجیکٹ کنسلٹنٹس نے شرکت کی۔ وزیر اعلی سندھ نے بتایا کہ ان کی حکومت نے کے بی آر ٹی منصوبوں پر کام کی تیاری شروع کردی ہے۔

(جاری ہے)

لہذا ، محکمہ ٹرانسپورٹ کو ان پر کام شروع کرنے کے حوالے سے ایک ٹائم لائن طے کرنا چاہئے۔

وزیراعلیٰ سندھ نے کہاکہ اورنج لائن کا نام تبدیل کر کے بی آر ٹی عبد الستار ایدھی کردیا گیا ہے یہ 3.88 کلومیٹر طویل ہے جس میں چار بس اسٹیشن اور ایک بس ٹرمینل صوبائی حکومت نے اپنے وسائل سے 2 ارب 33 کروڑ روپے کی لاگت سے شروع کیا ہے۔ اس کا روٹ ٹی ایم اے آفس اورنگی ٹان سے جناح یونیورسٹی برائے خواتین ناظم آباد کراچی تک ہے۔میسرز نیسپاک اس منصوبے کا ڈیزائن اور نگرانی کا کنسلٹنٹ ہے۔

وزیر ٹرانسپورٹ اویس قادر شاہ نے وزیراعلی سندھ کو بتایا کہ بی آر ٹی کا بنیادی ڈھانچہ تقریبا مکمل ہو چکا ہے لیکن گرین لائن کی تکمیل کے سبب تاخیر ہوئی کیونکہ اسے اس کے ساتھ منسلک کرنا ہے۔ وزیراعلی سندھ نے انہیں باقی کام مکمل کر کے انہیں رپورٹ کرنے کی ہدایت کی۔چیئرمین پی اینڈ ڈی محمد وسیم نے وزیر اعلی سندھ کو بتایا کہ بی آر ٹی ریڈ لائن میں انجینئرنگ ، پروکیورمنٹ اینڈ کنسٹرکشن مینجمنٹ (ای پی سی ایم)اور آپریشن ڈیزائن سمیت تین پیکیجز ہیں۔

انہوں نے کہا کہ دوسرا پروجیکٹ مینجمنٹ ، کوآرڈینیشن اینڈ کپیسیٹی بلڈنگ (پی ایم سی سی بی) ہے اور اس پیکیج کے تحت سندھ ماس ٹرانزٹ اتھارٹی اور ٹرانس کراچی بی آر ٹی کمپنی کی استعداد کار کے ساتھ تعمیر ہورہی ہے۔ تیسرا پیکیج آپریشن ، ڈیزائن اور بزنس مینجمنٹ (ODBM) ہے۔ اس پیکیج کے تحت کنسلٹنٹ آپریشنل پلان ، مالیاتی ماڈل ، ٹرانسپورٹ ماڈل اور بس انڈسٹری کی ری اسٹرکچرنگ کی جارہی ہے۔

وزیر ٹرانسپورٹ اویس قادر شاہ نے کہا کہ تمام کنسلٹنٹس اور ٹرانس کراچی سندھ حکومت کے ساتھ تمام پروجیکٹس آلات مثلا بی آر ٹی گاڑیاں ،انٹیلی جنٹ ٹرانسپورٹ سسٹم اور کرایے کے نظام کے لئے سول ورکس اور سپلائی کرنے والوں کے ٹھیکیداروں کا انتخاب کرنے کے لئیتعاون کریں گے۔ وزیراعلی سندھ کے ایک سوال کے جواب میں اویس قادر شاہ نے کہا کہ تفصیلی انجینئرنگ ڈیزائن کے ذمہ داران کنسلٹنٹس نے ڈرائنگ کے ڈیزائن اور ڈرافٹ ورژن کو تقریبا حتمی شکل دے دی ہے اور پروجیکٹ ڈائریکٹر کے جائزے اور کمنٹس کے لئے پیش کیا ہے۔

چیئرمین پی اینڈ ڈی نے وزیراعلی سندھ کو بتایا کہ پروجیکٹ کنسلٹنٹ سلیکشن کمیٹی نے پیشگی کنسلٹنٹس کو شارٹ لسٹ کیا ہے اور اب وہ آر ایف پی کے اجرا کے لئے ایشین ڈویلپمنٹ بینک کی این او سی کے منتظر ہیں۔ واضح رہے کہ ریڈ لائن منصوبے کی لاگت 74679.4 ملین روپے ہے۔انہوں نے بتایا کہ ورلڈ بینک نے وزیراعلی سندھ کی درخواست پر کراچی میں شہری نقل و حرکت ، رسائی اور سڑک کی حفاظت کو بہتر بنانے کے مقصد سے یلو لائن منصوبہ شروع کرنے پر اتفاق کیا ، اس میں 22 کلو میٹر طویل یلو لائن بی آر ٹی سمیت یلو لائن بی آر ٹی کوریڈور، راہداری ، نکاسی آب ، لائٹنگ ، بسوں کے راستے، اسٹیشنز ، ٹرمینلز اور ڈپو شامل ہیں۔

چیئرمین پی اینڈ ڈی محمد وسیم نے کہا کہ اس منصوبے کا تصوراتی پیپر پی ڈی ڈبلیو پی نے کلیئر کردیا ہے جسے سی ڈی ڈبلیو پی میں غور اور منظوری کے لئے پلاننگ ڈویلپمنٹ اینڈ ریفارمز پلاننگ کمیشن کو بھجوا دیا گیا ہے۔ وزیراعلی سندھ کو بتایا گیا کہ ابتدائی ڈیزائن کے طورپر 61 بلین روپے کا پی سی ون تیار کیا گیا ہے جسے ای سی این ای سی نے منظور کرلیا ہے۔

وزیر ٹرانسپورٹ اویس قادر شاہ نے بتایا کہ ییلو لائن داد چورنگی ، کورنگی سے کورنگی 8000 روڈ اور کورنگی روڈ شاہراہ فیصل اور شاہراہ قائدین سے شروع ہوکر 22 کلومیٹر لمبے روٹ پر مبنی ہوگی اور یہ نمائش بی آر ٹی اسٹیشن پر ضم ہوگی۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس میں آٹھ انڈر پاس اور دو ایلویٹڈ یو ٹرن ، 268 ڈیزل ہائبرڈ ٹیکنالوجی کی بسیں ، اور 28 اسٹیشن ہوں گے ، جن میں 22 ایٹ گریڈ اور چھ زیر زمین شامل ہیں۔

وزیراعلی سندھ نے محکمہ ٹرانسپورٹ کو ہدایت کی کہ وہ تفصیلی ڈیزائن کی تیاری کے لئے مشاورتی خدمات کے حصول کا عمل شروع کریں۔ اویس قادر شاہ نے کہا کہ ماحولیاتی ، مواصلات ، صنف ، معاشرتی ، خریداری اور مالیاتی انتظامی ماہر جیسے اہم پوزیشن پر ہائر کرنے جارہی ہے۔ وزیراعلی سندھ نے محکمہ ٹرانسپورٹ کو ہدایت کی کہ وہ جلد سے جلد کنسلٹنٹ کو بورڈ میں شامل کریں۔ انہوں نے کہا کہ میں یہ دونوں منصوبے یلو لائن اور ریڈ لائن کو جلد شروع کرنا چاہتا ہوں اور ان کو دو سالوں میں مکمل کیا جائے۔

کراچی شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments