Episode 33 - Awaz E Nafs By Qalab Hussain Warraich

قسط نمبر 33 - آوازِ نفس - قلب حسین وڑائچ

https://photo-cdn.urdupoint.com/show_img_new/books/bookImages/146/400x120/146_logo.gif._2 in Urdu
جو انسان ا نسانیت کی حفاظت کرتا ہے وہ مومن ہے ۔
###
جب آپ کسی کا عیب ظاہر کریں گے تو کوئی آپ کا عیب ظاہر کرے گا اِس لئے پردہ پوشی کا حکم ہے جو سب کچھ جانتا ہے وہ سب سے بڑا پردہ پوش ہے ۔
###
مومن وہ ہے جسے غصہ دیر سے آتا ہے اور راضی جلدی ہو جاتا ہے ۔
###
دشمن کی طاقت دراصل دوست کی کمزوری ہوتی ہے ۔ قوی دوست کی وجہ سے دشمن کمزور ہوتا ہے اِس میں اصول اور اخلاق کا بڑا کردار ہے ۔

###
اللہ تعالیٰ اصلاح کے دروازے بند نہیں کرتا یہ کام انسان خود اپنے خلاف کرتا ہے ۔
###
خدا کو ناراض کر کے جو مخلوق خدا کو راضی کرتے ہیں اُن سے مخلوق خدا کبھی مخلص نہیں ہوتی ۔ خدا کو راضی رکھو مخلوق خدا خود بخود راضی ہو جائے گی ۔
###
جن کے قلوب بغض ‘ عداوت اور نفرت سے بھرے ہوئے ہیں اُن کی عبادت صرف وقت کا زیاں اور بے فائدہ مشقت ہے ۔

(جاری ہے)

###
حسب و نسب کا جب غرور ٹوٹے گا تو انسان خدا کے سامنے جھکے گا ۔
###
جو شئے آپ خدا کے نام پر دے دیتے ہیں اُس پر آپ کا حق ختم ہو جاتا ہے ۔
###
انسان ایک دوسرے کے قریب اُس وقت آئے گا جب اُس میں معاف کرنے اور درگزر کرنے والا جذبہ بیدار ہو گا ۔
###
ندامت کا احساس سب سے پہلے حضرت آدم  نے کیا تھا لہذا ہر بنی آدم پر اِس کا احساس کرنا لازم قرار دیا گیا ہے جس میں احساس ندامت نہیں وہ انسان نہیں… !
###
واردات قلبی انسان کی آنکھ میں ایک مقدس مصفا آب کا ایک قطرہ ہے جسے” آنسو “ کہتے ہیں… ایک آنسو سارے گناہوں کو دھو دیتا ہے جسے خدا توبہ کی صورت میں قبول کر لیتا ہے ریا کاری والی عبادت پر یہ ایک قطرہ آب بھاری ہے ‘ انسان کی بے بسی کا یہ آخری اور حتمی علاج ہے ۔

###
جو شاکر نہیں اُسے اطمینان نصیب نہیں ہو گا ۔ جس نے اپنے مقام کو دریافت کر لیا وہ مطمئن ہو گیا ۔
###
خوشی روح کا ایک انداز نظر ہے اِسے غم میں سے بھی حاصل کیا جا سکتا ہے باطن کا سنورنا خوشی ہے ۔
###
محبت عظیم خواہش کا نام ہے ۔ وہ دل کعبہ سے عظیم تر ہے جس میں خدا سے سچی محبت ہے اور خوف خدا کا گھر ہے ۔
###
سچا دین ایک کامل انسان کی صداقت اور دیانت کا نام ہے ہم دین کے لئے نہیں دین ہماری راستی کے لئے ہے دین جھگڑا نہیں دین امن ہے دین نفرت نہیں دین پیار ہے دین محبت ہے دہشت گردی نہیں ۔

###
جب آپ کے سامنے مقصد عظیم نہ ہو تو آپ کو لڑائی زیب نہیں دیتی بحرحال لڑائی جھگڑا کسی مسئلہ کا حل نہیں ۔
###
جب تک انسان اپنے اندر سے سچ کو تلاش نہیں کرے گا اُسے باہر سے کوئی صادق نہیں ملے گا… اندر کی سچائی کو ظاہر کرو باہر والا سچ آپ کے سامنے آ جائے گا ۔
###
جن کے دل مردہ ہوتے ہیں اُن کی یادداشت کمزور ہوتی ہے اور وہ خود غرض اور مفاد پرست ہوتے ہیں وہ اپنی ذات سے باہر نہیں نکلتے …!
###
عورت ناقص العقل ہے مگر محبت کے لئے بنی ہے اور عقل کی بنیاد محبت ہے جب تک انسان میں محبت والا جذبہ نہیں ہو گا اُسے عقل والے راستے کا پتہ نہیں چلے گا ۔

سچی محبت خدا کے بتائے ہوئے راستے کا سنگ میل ہے ۔ سب سے قابل اعتبار موت سے محبت ہے جوہر حالت میں آنی ہے ۔
###
بہبودی انسان کے خلاف جو بھی علم ہے وہ فاسق ہے اور انسانیت کی فلاح کے لئے جو بھی علم ہے وہ حقیقی ہے ۔
###
احساس الفاظ کا جوہر لطیف و تقدیس ہے جس میں احساس زندہ نہیں الفاظ اُس پر اثر انداز نہیں ہوتے اور وہ ہی مردہ لوگ ہیں انہیں میں حیوانیت ہے وہی چلتی پھرتی لاشیں ہیں … احساس زندگی کا اسم ثانی ہے ۔

###
غیر جانبدار رویے انسان کو آسودہ خیال رکھتے ہیں ۔
###
جھوٹ آپ کو شاید مالی فائدہ تو دے سکتا ہے مگر سکون قلب نہیں دے سکتا ۔
###
سچ اگر آپ کو کچھ بھی نہ دے تو کم از کم دلی اطمینان ضرور دیتا ہے ۔ سچ بولنے سے جو نقصان ہوتا ہے وہ جھوٹ والے فائدہ سے زیادہ بہتر ہے ۔
###
انسان کا ظاہر بکھر جائے تو وہ اکٹھا کیا جا سکتا ہے اور اگر اُس کا باطن ٹوٹ جائے تو وہ ناقابل مرمت ہے ۔

انسان کا باطن مضبوط ایمان اور یقین محکم سے پاک اور صاف رہتا ہے اور یہی ہو تو انسان‘ انسان رہتا ہے ۔
###
دوسرے کے لئے بھی جھوٹ مت بولو مگر اپنے لئے ہمیشہ سچ بولو سچ انسان کے باطن کی قوت یزداں ہے ۔ دونوں جہانوں کی کامیابی سچ میں ہے ۔ سچ انسان کا نجات دہندہ ہے ۔ سچ بولنے والے کی روح کبھی بیمار نہیں ہوتی ۔ سچ روح کی غذائے لذیذہ ہے نفس مطمئنہ کی جان ہے سچ دراصل خدا کا فرمان ہے بلکہ خدا کی زبان ہے یہ جہاں کہیں بھی ہو گا اِس کا نام سچ رہے گا ۔

###
جن کو کچھ معلوم نہ ہو انہیں کچھ کہنے سے گریز کرنا چاہئے ۔
###
جب کرسی اقتدار پر جھوٹ بولنے والا ہو تو عوام پر جھوٹ بولنا واجب ہے جب حاکم بدکار ہو تو رعایا پر بدکاری واجب ہے جیسا حاکم ویسی رعایا ۔
###
انسان کی تہذیبی روایات اُس کے ہر عمل پر حاوی ہوتی ہیں اِس وجہ سے نا مناسب مصائب اور پریشانیوں میں مبتلا رہتا ہے یہی روایات ہمارے رویوں پر اثر انداز ہوتی ہیں ۔

###
زندگی کے ہر حادثہ میں ایک سبق پوشیدہ ہے جو اِس سبق سے مثبت پہلو نکال لیتے ہیں وہ کامیاب اور اطمینان بخش زندگی بسر کرتے ہیں ۔
###
نفرت اور الزام تراشی کے احساس کے باعث انسان اپنی حکمت اور دانائی والی پوشیدہ صلاحیت سے محروم رہتا ہے ۔
###
غصہ نفرت پیدا کرتا ہے اور نفرت ہمارے روزمرہ معمولات پر اثر انداز ہوتی ہے ہماری صلاحیت منفی رد عمل کی وجہ سے ضائع ہو جاتی ہے غصہ ہمارے فہم و ادراک اور بصیرت کا دشمن ہے ۔

###
اپنی ذات سے محبت والا رویہ انسان کو خود تنقیدی سے محفوظ رکھتا ہے اور دوسرے پر الزام تراشی اور عیب جوئی سے باز رہنے والا رویہ انسان کو آسودہ خیال اور ذہنی آزادی اور خود مختاری والی دولت عطا کرتا ہے اپنی ذات سے محبت کا طریقہ یہ ہے کہ انسان عفو و درگزر ‘ برداشت‘ ایثار اور قربانی جیسے جذبہ سے سرشار ہو ۔ غیر مہذب عمل بھی انسان کا دشمن ہے ۔

###
یقین محکم ہی انسان کے اندر انسانیت کو بیدار کرتا ہے جوفطرت میں ڈوب جائے گا اُس پر یقین کا راز فاش ہو گا ہر پیدا ہونے والی شئے فانی ہے ۔
###
جو لوگ اپنے معاملات کو بدلہ اور انتقام کے ذریعہ حل کرنا چاہتے ہیں وہ تباہ و برباد ہو جاتے ہیں اُن کا سکون غارت ہو جاتا ہے انسان کو ذہنی اور عملی رویہ پر کڑی نظر رکھنی چاہئے یہ الزام تراشی اور انتقام والے جذبات سے پیدا ہوتے ہیں یہ انسان کو سرد مُہر اور سنگدل بنا دیتے ہیں یہ مقدس تعلیمات کی خلاف ورزی ہے یہ عقیدہ اور عقیدت کی نفی ہے ۔

Chapters / Baab of Awaz E Nafs By Qalab Hussain Warraich

قسط نمبر 1

قسط نمبر 2

قسط نمبر 3

قسط نمبر 4

قسط نمبر 5

قسط نمبر 6

قسط نمبر 7

قسط نمبر 8

قسط نمبر 9

قسط نمبر 10

قسط نمبر 11

قسط نمبر 12

قسط نمبر 13

قسط نمبر 14

قسط نمبر 15

قسط نمبر 16

قسط نمبر 17

قسط نمبر 18

قسط نمبر 19

قسط نمبر 20

قسط نمبر 21

قسط نمبر 22

قسط نمبر 23

قسط نمبر 24

قسط نمبر 25

قسط نمبر 26

قسط نمبر 27

قسط نمبر 28

قسط نمبر 29

قسط نمبر 30

قسط نمبر 31

قسط نمبر 32

قسط نمبر 33

قسط نمبر 34

قسط نمبر 35

قسط نمبر 36

قسط نمبر 37

قسط نمبر 38

آخری قسط