مائنس ون فارمولہ اختیار کیا گیا تو ہم بھی خاموش نہیں رہیں گے ،فاروق ستار

ہفتہ جون 16:21

مائنس ون فارمولہ اختیار کیا گیا تو ہم بھی خاموش نہیں رہیں گے ،فاروق ..
کراچی (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 09 جون2018ء) ایم کیو ایم پاکستان کے سربراہ فاروق ستار نے کہا ہے کہ مائنس ون فارمولہ اختیار کیا گیا تو ہم بھی خاموش نہیں رہیں گے اور ایم کیوایم کوزمین سے لگانے کا فیصلہ کیا گیا تو پھرہم بھی جواب دیں گے۔ ایم کیوایم پاکستان کو اب تک سیاسی آزادی نہیں دی گئی۔ہفتے کو ایم کیو ایم پاکستان کے سربراہ فاروق ستار نے این اے 241 سے کاغذات جمع کرادیے،اس موقع پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ہمارے ساتھ بہت سارے ساتھی کاغذات جمع کرارہے ہیں، این ای241 ، 245 اور 247 سے کاغذات جمع کرارہا ہوں۔

فاروق ستارنے کہا کہ ایم کیوایم کوانتخابات سے متعلق پوری اسپیس نہیں دی گئی، ایم کیوایم کو اپنے دفاتر تک ابھی واپس نہیں کیے گئے، کتنے حلقوں سے لڑنا ہے اس کا ابھی فیصلہ نہیں ہوا۔

(جاری ہے)

سربراہ ایم کیو ایم پاکستان نے کہا کہ ہماری165 کے قریب ساتھیوں کو بازیاب نہیں کرایا گیا، ہمارے ساتھیوں کی رہائی میں تاخیری حربے استعمال ہو رہے ہیں، مردم شماری میں کراچی کے ساتھ ناانصافی کی گئی ہے، مردم شماری میں کراچی کی ایک کروڑ آبادی کو کم کیا گیا ہے، مردم شماری پرہی حلقہ بندیاں کی گئیں جن پرتحفظات ہیں۔

فاروق ستار نے سندھ کی نگراں حکومت کو پیپلزپارٹی کی حکومت قرار دیتے ہوئے کہا نگراں سندھ حکومت میں کچھ لوگ نیوٹرل ہیں، گاڑیاں سرکاری محکموں کی ہیں اور جھنڈے پیپلزپارٹی کے لگے ہیں۔۔فاروق ستار نے کہا کہ پیپلزپارٹی انتخابی فضا کو بگاڑ رہی ہے، ترقیاتی فنڈز پیپلزپارٹی کے امیدوار استعمال کر رہیہیں، پیپلزپارٹی ابھی بھی سیاسی فائدے لے رہی ہے۔

رہنما ایم کیو ایم پاکستان کا کہنا تھا کہ اسکروٹنی کے بعد والے دستاویزات ابھی سے مانگے جارہے ہیں، نامزدگی کا طریقہ انتہائی آسان ہونا چاہیے، صوبائی اسمبلی کی فیس 20ہزار اور قومی اسمبلی کی 30ہزار ہے، اتنے پیسے عام پاکستانی کہاں سے لائے گا۔انھوں نے مزید کہا کہ اس قسم کے فیصلے الیکشن کیلئے ناانصافی ہے، ایسی ناانصافی کیساتھ الیکشن ہوگا تو پھردھرنا بھی ہوگا، ریکارڈ کرلیں ہمیں دیوار سے لگانے کی کوشش کی جارہی ہے، مائنس ون فارمولہ اختیار کیا گیا تو ہم بھی خاموش نہیں رہیں گے۔

ایم کیو ایم پاکستان کے سربراہ نے کہا کہ بڑی پارٹیاں اربوں کے اشتہار دینگی کوئی پوچھنے والانہیں ہوگا، پیسوں کے ذریعے الیکشن کو خریدا جائے گا، میں نے کہیں بھی بائیکاٹ کا لفظ استعمال نہیں کیا۔۔فاروق ستار نے کہا کہ ہمیں دیوارسے لگانے کا سلسلہ بند ہوناچاہیے، ایم کیو ایم کو زمین سے لگانے کا فیصلہ کیا گیا تو پھر ہم بھی جواب دینگے، ایم کیوایم پاکستان کاووٹ بینک کوکوئی دھڑانہیں ہے۔

انہوںنے کہا کہ الیکشن کمیشن کو بھی عدالت کے فیصلوں کو ماننا چاہیے اور میرا نام کنوینئر کے طور پر ویب سائٹ پر ڈالنا چاہیے۔سربراہ ایم کیوایم پاکستان نے کہاامیدواروں کے اخراجات پر پابندی لگائی گئی ہے، لیکن جماعت پر نہیں۔ ہمیں دیوار سے لگائے جانے کا عمل اب بندہونا چاہئیے۔ انہوں نے کہا میں نے الیکشن کے بائیکاٹ کا لفظ استعمال نہیں کیا، الیکشن کمیشن کو عبوری فیصلہ تسلیم کرنا چاہیئے۔مائنس ون فارمولا تک توٹھیک، اگر ایم کیوایم کو مائنس کرنے کا تاثر ملا تو کوئی بھی فیصلہ کرسکتے ہیں۔