ملک بھر کی طرح کراچی میں بھی لیلة القدر نہایت عقیدت واحترام کے ساتھ منائی گئی

فرزندان اسلام نے رات بھر تلاوت قرآن مجید، نوافل اور ذکر واذکار میں گزاری اور سحری تک عبادت وریاضت کرتے رہے شہر بھر کی مساجد کو برقی قمقوں سے سجایا گیا تھا۔ کراچی کی مساجد میں خصوصی انتظامات کئے گئے۔ مساجد میں نماز تراویح میں ختم قرآن کے اجتماعات ہوئے علماء کرام نے اس موقع پر اپنے خصوصی خطابات میں شب قدر کے فضائل بیان کئے، ملکی سلامتی واستحکام، امت مسلمہ کی سربلندی اور کراچی کے لئے خصوصی دعائیں

پیر جون 22:20

کراچی (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 11 جون2018ء) ملک بھر کی طرح کراچی میں بھی لیلة القدر نہایت عقیدت واحترام کے ساتھ منائی گئی۔ فرزندان اسلام نے رات بھر تلاوت قرآن مجید، نوافل اور ذکر واذکار میں گزاری اور سحری تک عبادت وریاضت کرتے رہے۔ شہر بھر کی مساجد کو برقی قمقوں سے سجایا گیا تھا۔ کراچی کی مساجد میں خصوصی انتظامات کئے گئے۔ مساجد میں نماز تراویح میں ختم قرآن کے اجتماعات ہوئے۔

علماء کرام نے اس موقع پر اپنے خصوصی خطابات میں شب قدر کے فضائل بیان کئے۔ ملک کی سلامتی واستحکام، امت مسلمہ کی سربلندی اور ملک سے دہشت گردی کے خاتمے کے لئے خصوصی دعائیں کی گئیں۔ 27 ویں شب کی مناسبت سے اللہ تعالیٰ کے حضور خصوصی دعائیں کی گئیں۔ علماء نے شب قدر کے فضائل بیان کئے۔

(جاری ہے)

محافل شبینہ وجشن نزول قرآن، صلوة التسبیح اور اللہ تعالیٰ کے حضور گناہوں سے توبہ، جنت کی طلب، رزق کی کشادگی، عالم اسلام اور پاکستان کی سلامتی کے لئے خصوصی دعائیں کی گئیں۔

شہر بھر کی مساجد میں علماء، آئمہ اور خطباء نے مسلم امہ کی ترقی، خوشحالی ملک وقوم خصوصاً شہر کراچی کے امن وسلامتی اور استحکام کے لئے خصوصی اجتماعی دعائیں کیں۔ جماعت اہلسنت کراچی کے تحت شب قدر کا خصوصی اجتماع میمن مسجد مصلح الدین گارڈن کھوڑی گاڑڈن میں ہوا۔ علامہ شاہ عبدالحق نے اپنے خطاب میں کہا کہ اپنے گناہوں پر ندامت، توبہ، بخشش ومغفرت اور دعائوں کی قبولیت کی رات شب قدر ہے۔

علماء کرام نے کہا کہ رمضان المبارک گناہوں سے توبہ اور ہماری مغفرت کے لئے ایک سنہری موقع ہے۔ صرف ایک رات میں ہزار مہینوں کی عبادت کا ثواب حاصل کرنے کیلئے شہریوں کا ذوق و شوق عروج پر پہنچ گیا تھا۔ علماء کرام نے شب قدر کے فضائل بیان کرتے ہویء کہا کہ اور تمہیں کیا معلوم کہ شب قدر کیا ہی عزت و کرامت والی رات، رحمتوں اور برکتوں والی رات، بخششوں اور مغفرت والی رات، ایک ہی شب میں ہزار مہینوں کی عبادت کا اجر دینے والی رات ہے۔

اس رات کا اجر اور فضیلتیں تو کائنات کا رب ہی بہتر جانتا ہے مگر احادیث اور روایات سے ثابت ہے کہ اس رات جبرئیل امین کی قیادت میں فرشتوں کا قافلہ زمین پر اترتا ہے اور عبادت کرنے والوں کی مغفرت کیلئے طلوعِ آفتاب تک دعا کرتا ہے۔ علما کے مطابق نزولِ قرآن کا سلسلہ بھی اسی مبارک شب سے شروع ہوا، ایک ایسا ضابطہ حیات جو رہتی دنیا تک انسانوں کی رہنمائی کرتا رہے گا۔