کشمیر پر حکمرانوں کے بزدلانہ اور معذرت خواہانہ رویے نے عوام کو احتجاج پر مجبور کردیاہے، سینیٹر سراج الحق

عوام حکمرانوں کیخلاف ہر قربانی دینے کے لیے تیار ہیں ، ان نااہل حکمرانوں میں یہ صلاحیت نہیں کہ طرز حکمرانی بدل سکیں 7 یہ حکومت آئی نہیں لائی گئی ہے، اب تو گردو غبار بیٹھ چکاہے اور بچہ بچہ جان گیاہے کہ یہ عوام کی منتخب حکومت نہیں،ہم اپوزیشن کا حصہ نہیں بلکہ اصل اپوزیشن ہیں E سابقہ اور موجودہ حکومت کی داخلہ و خارجہ اور معاشی پالیسی ایک ہے، عوام کو آئی ایم ایف اور ورلڈ بنک کی غلامی کی زنجیروں میں جکڑنے کے لیے سابقہ اور موجودہ حکومتوں نے ایک دوسرے سے بڑھ کر کام کیا ، کشمیریوں کی دعائیں اب بد دعائوں میں بدل چکی ہیں،تقریب تقسیم انعامات سے خطاب ، میڈیا سے گفتگو

جمعرات نومبر 23:34

کشمیر پر حکمرانوں کے بزدلانہ اور معذرت خواہانہ رویے نے عوام کو احتجاج ..
لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - آن لائن۔ 07 نومبر2019ء) امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہاہے کہ کشمیر پر حکمرانوں کے بزدلانہ اور معذرت خواہانہ رویے نے عوام کو احتجاج پر مجبور کردیاہے ۔ عوام حکمرانوں کیخلاف ہر قربانی دینے کے لیے تیار ہیں ۔ ان نااہل حکمرانوں میں یہ صلاحیت نہیں کہ طرز حکمرانی بدل سکیں ۔ یہ حکومت آئی نہیں لائی گئی ہے ۔

اب تو گردو غبار بیٹھ چکاہے اور بچہ بچہ جان گیاہے کہ یہ عوام کی منتخب حکومت نہیں ۔ ہم اپوزیشن کا حصہ نہیں بلکہ اصل اپوزیشن ہیں ۔ سابقہ اور موجودہ حکومتیں اسٹیٹس کو کی پیداوار اور محافظ ہیں ۔ ان کی پالیسیوں میں کوئی فرق نہیں ۔ سابقہ اور موجودہ حکومت کی داخلہ و خارجہ اور معاشی پالیسی ایک ہے۔ عوام کو آئی ایم ایف اور ورلڈ بنک کی غلامی کی زنجیروں میں جکڑنے کے لیے سابقہ اور موجودہ حکومتوں نے ایک دوسرے سے بڑھ کر کام کیا ۔

(جاری ہے)

کشمیریوں کی دعائیں اب بد دعائوں میں بدل چکی ہیں ۔ ان خیالات کااظہار انہوںنے گوجرانوالہ میں کارخیر تنظیم کے زیراہتمام تقریب تقسیم انعامات سے خطاب اور بعد ازاں میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ۔ اس موقع پر امیر جماعت اسلامی صوبہ وسطی پنجاب جاوید قصوری، ضلعی امیر مظہر اقبال رندھاوا اور چیئرمین تنظیم کار خیر ڈاکٹر عبدالماجد حبیب المشرقی بھی موجود تھے ۔

سینیٹر سراج الحق نے کہاکہ سابقہ اور موجودہ حکومت سب کا ایک ہی ایجنڈا ہے ۔ہم موجودہ حکومت کے ساتھ ساتھ سابقہ حکومتوں میں رہنے والی پارٹیوں کے خلاف بھی احتجاج کرتے رہے ہیں، تمام ملکی مسائل کی ذمہ دار یہی پارٹیاں ہیں ۔ ملک میں مہنگائی ، بے روزگاری ، کرپشن ، لوٹ کھسوٹ ، غربت ، جہالت اور بدامنی انہی لوکوں کے کارنامے ہیں ۔ انہوںنے کہاکہ 72سالوں سے ملک پر جاگیردار وں ، وڈیروں اور سرمایہ داروں کی حکومت ہے ۔

عوام نے نام نہاد جمہوریت اور فوجی آمریتوں کو بھی دیکھا ہے مگر ملک کے مسائل کم ہونے کی بجائے مسلسل بڑھتے رہے ان کے مسلط کردہ استحصالی نظام نے عوام کی پریشانیوں اور مصائب میں اضافہ کیا ۔ عالمی استعمار کے ذہنی غلاموں نے ایک دن کے لیے بھی قرآن و سنت کے نظام کو نہیں آزمایا ۔ انہوں نے کہاکہ مغرب اور امریکہ کو خوش کرنے کے لیے تعلیم ، معیشت ، سیاست اور عدالت ہر جگہ سے اسلام کو نکلا اور اپنی مرضی کے نظام مسلط کر کے ملک کو مسائل کی دلدل میں پھنسا دیا ۔

انہوںنے کہاکہ حکومت پر عوام کا اعتما د ختم ہوچکاہے ۔سینیٹر سراج الحق نے کہاکہ کشمیری 72سالوں سے بھارت کے غاصبانہ قبضہ سے آزادی کی جنگ لڑ رہے ہیں ۔ کشمیری تکمیل پاکستان کے لیے ہر طرح کی قربانیاں دے رہے ہیں مگر کشمیر کو اپنی شہ رگ قرار دینے والوں نے ہمیشہ ان کے ساتھ بے وفائی کی ۔ انہوںنے کہاکہ کشمیر میں تین ماہ سے زیادہ عرصہ سے کرفیو نافذ ہے لیکن جس طرح دنیا خاموش تماشائی بنی ہوئی ہے ، اسی طرح ہمارے حکمران لاتعلقی کا مظاہرہ کر رہے ہیں ۔

آج حکومت جس پریشانی سے دوچار اور شہر اقتدار میں محصور ہے یہ کشمیریوں کی بد دعائوں کی ہی نتیجہ ہے ۔ انہوںنے کہاکہ موجودہ حکومت کے آنے کے بعد مودی نے کشمیر کی حیثیت تبدیل کی اور کشمیر کے حصے بخرے کر کے اسے اپنے صوبے بنالیا ۔ اس نے آزاد کشمیر اور بلتستان کو بھی اپنا حصہ قرار دیدیا ہے لیکن ہماری حکومت اندھی گونگی اور بہری بنی بیٹھی ہے ۔