Live Updates

وزیراعلیٰ بلوچستان نے پی ڈی ایم کے کوئٹہ جلسے کے حوالے سے خدشات کا اظہار کر دیا

پی ڈی ایم جلسے کے حوالے سے بہت زیادہ تھریٹس موجود ہیں،سیاسی رہنماؤں کو فول پروف سیکیورٹی فراہم کرنے کے لیے انتظامات کر رہے ہیں۔وزیر داخلہ بلوچستان میر ضیا لانگو کی گفتگو

Muqadas Farooq مقدس فاروق اعوان جمعہ اکتوبر 11:26

وزیراعلیٰ بلوچستان نے پی ڈی ایم کے کوئٹہ جلسے کے حوالے سے خدشات کا اظہار ..
کوئٹہ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 23 اکتوبر2020ء) وزیراعلیٰ بلوچستان نے پی ڈی ایم کے کوئٹہ جلسے کے حوالے سے خدشات کا اظہار کر دیا ہے۔تفصیلات کے مطابق وزیر داخلہ بلوچستان میر ضیا لانگو نے کہا کہ پی ڈی ایم جلسے کے حوالے سے بہت زیادہ تھریٹس موجود ہیں۔انہوں نے پی ڈی ایم کے حوالے سے حکومتی انتظامات کے بارے میں میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ پی ڈی ایم جلسے کے حوالے سے بہت زیادہ تر تھریٹس موجود ہیں۔

سیاسی رہنماؤں کو فول پروف سیکیورٹی فراہم کرنے کے لیے انتظامات کر رہے ہیں۔انہوں نے کہا جو سیاسی قیادت سڑک کے ذیریعے آئیگی، ان کی سیکیورٹی کے لیے متعلقہ ڈی سیز کو کہہ دیا ہے۔ وزیرداخلہ بلوچستان میر ضیاء لانگو نے کہا ہے کہ جلسے و جلوس کرنا اپوزیشن کا حق ہے تاہم ان سے حکومت کو کوئی خطرہ نہیں پی ڈی ایم کے جلسے کو فول پروف سیکورٹی دیں گے البتہ اگر کسی نے ملک و اداروں کے خلاف بات کی تو ہم اسکی مذمت کریں گے اپوزیشن جلسوں میں کورونا وائرس کی احتیاطی تدابیرکا خیال رکھیں اگرچہ اپوزیشن کے جلسے میںرش ہوگا لیکن عوام نے انہیں مستردکیا ہے۔

(جاری ہے)

یہ بات انہوں نے جمعرات کو سول سیکرٹریٹ کوئٹہ میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہی ۔انہوں نے کہا کہ پی ڈی ایم کے جلسے اور سیاسی قائدین کو کو فول پروف سیکورٹی مہیا کریں گے اس حوالے سے جو لوگ بائی روڈ آرہے ہیں تمام اضلاع کے ڈپٹی کمشنرز کو ہدایت کی گئی ہے کہ انکی سیکورٹی کے انتظامات کریں سیاسی قائدین کیلئے بلٹ پرو ف گاڑیوں کابندوبست کیا گیا ہے جلسہ گاہ جانے والے کسی راستے پر کنٹینر نہیں لگائیں گے البتہ وہاں چیکنگ کیلئے واک تھرو گیٹس لگے ہونگے۔

انہوں نے کہا کہ جلسے و جلوس کرنا اپوزیشن کا جمہوری حق ہے حکومت اس میں خلل نہیں ڈالے گی لیکن بلوچستان میں ماضی میں دشمن نے عوام اور سیکورٹی فورسز کے درمیان فاصلے پیدا کرنے کیلئے بہت پیسہ لگایالیکن ہم نے دشمن کی سازشوں کو ناکام بنایا ہے اپوزیشن ،عوام اوراداروں کے درمیان فاصلے پیدا کرنے سے گریز اور اداروں کے خلاف بات نہ کریں اگرایسا کیا گیا تو ہم اسکی مذمت کریں گے۔
کرونا وائرس کی دوسری لہر سے متعلق تازہ ترین معلومات