بند کریں
صحت صحت کی خبریںمسلسل بیٹھ کر کام کرنے والوں کو ہر 30 منٹ بعد چہل قدمی کر لینی چاہیے، امریکی ماہرین

صحت خبریں

وقت اشاعت: 20/09/2017 - 15:27:30 وقت اشاعت: 20/09/2017 - 14:01:22 وقت اشاعت: 20/09/2017 - 13:36:01 وقت اشاعت: 19/09/2017 - 16:53:12 وقت اشاعت: 19/09/2017 - 16:26:49 وقت اشاعت: 19/09/2017 - 12:58:48 وقت اشاعت: 19/09/2017 - 12:58:48 وقت اشاعت: 19/09/2017 - 12:32:17 وقت اشاعت: 18/09/2017 - 14:01:53 وقت اشاعت: 18/09/2017 - 13:58:15 وقت اشاعت: 18/09/2017 - 13:56:29

مسلسل بیٹھ کر کام کرنے والوں کو ہر 30 منٹ بعد چہل قدمی کر لینی چاہیے، امریکی ماہرین

نیویارک ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 19 ستمبر2017ء) کولمبیا یونیورسٹی کے محققین کا کہناہے کہ سارادن بیٹھے رہنا صحت کیلئے خطرناک نہیں لیکن ضروری ہے کہ ہر آدھے گھنٹے بعد اٹھ کر بھی کچھ کام کرتے رہیں۔ ماہرین کی جائزہ رپورٹ کے مطابق بیٹھے رہنے کی طوالت زیادہ اہم نہیں بلکہ یہ بات زیادہ اہمیت کی حامل ہے کہ آپ کرسی پر یا زمین پر کس طرح بیٹھتے ہیں۔

ایسے افراد جو ہر 30 منٹ بعد اپنی کرسی سے اٹھ کر ذرا سی چہل قدمی کرلیتے ہیں انہیں موت کا خطرہ کم سے کم رہتا ہے لیکن ایسے لوگ جو مسلسل 60 سی90 منٹ بیٹھے رہتے ہیں انہیں قبل از وقت موت کا خطرہ لاحق رہتا ہے۔ ماہرین نے تجویز پیش کی ہے کہ ایسے لوگو ںکو چاہئے کہ وہ کچھ دیر کرسی پر بیٹھنے کے بعد چلتے پھرتے بھی رہیں کیونکہ زیادہ بیٹھے رہنے سے دل کے امراض لاحق ہوسکتے ہیں۔ لوگ دفاتر میں 9سے 10گھنٹے تک کام کرتے ہیں اور زیادہ بیٹھے رہتے ہیں جس کی وجہ سے انہیں دل کے امراض لاحق ہوتے ہیں اور وہ اپنی موت کے قریب ہوجاتے ہیں۔ چلتے پھرتے رہنے سے ایسے لوگ ہمیشہ فعال رہتے ہیں اور ان کے دل کی حالت بھی بہتر رہتی ہے۔
19/09/2017 - 12:58:48 :وقت اشاعت