بند کریں
صحت صحت کی خبریںبہاولنگر اسپتال میں زہریلی دوا سے 15 روز میں 54 بچے جاں بحق

صحت خبریں

وقت اشاعت: 25/09/2014 - 17:54:24 وقت اشاعت: 25/09/2014 - 16:56:53 وقت اشاعت: 25/09/2014 - 14:12:17 وقت اشاعت: 25/09/2014 - 13:43:54 وقت اشاعت: 25/09/2014 - 13:35:42 وقت اشاعت: 25/09/2014 - 13:32:01 وقت اشاعت: 25/09/2014 - 12:27:40 وقت اشاعت: 25/09/2014 - 12:22:24 وقت اشاعت: 25/09/2014 - 12:16:57 وقت اشاعت: 24/09/2014 - 22:08:29 وقت اشاعت: 24/09/2014 - 20:56:12

بہاولنگر اسپتال میں زہریلی دوا سے 15 روز میں 54 بچے جاں بحق

بہاولنگر(اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔25ستمبر۔2014ء)ڈسٹرکٹ ہیڈکوارٹرز اسپتال میں غیرمیعاری دواؤں اور ڈاکٹروں کی غفلت کے باعث پندرہ روز میں54بچے زندگی کی بازی ہارگئے۔اسپتال انتظامیہ حقائق پر پردہ ڈالنے کی کوشش کر رہی ہے۔ وزیراعلیٰ پنجاب نے نوٹس لیتے ہوئے تحقیقات کا حکم دے دیا۔ نجی ٹی وی کے مطابق ماؤں کی گودیں خالی ہونے پر کسی مسیحا کا دل نہ پسیجا تو اپنے پیاروں کی اموات پر غم سے نڈھال ورثا سراپا احتجاج بن گئے۔

ان والدین کا کہنا تھا اگر علاج ہی نہیں کرنا تو ایسے اسپتال بند کر دیے جائیں۔ بچوں کی اموات اور عملے کی بے توجہی پر ایم ایس ڈاکٹر فیاض انور بھی تسلی بخش جواب نہ دے سکے۔انھوں نے کہا کہ دواؤں کی خریداری ای ڈی او ہیلتھ نے کی ہے۔ زہریلی دواسے بچوں کی ہلاکت پر وزیراعلی نے 2 رکنی تحقیقاتی کمیٹی قائم کر دی۔ واضح رہے کہ گزشتہ ڈیڑھ ماہ کے دوران چلڈرن وارڈ کے ڈاکٹروں کی غفلت اور لاپرواہی کے باعث مجموعی طور پر وفات پانے والے بچوں کی تعداد 120سے تجاوز کر چکی ہے۔

25/09/2014 - 13:32:01 :وقت اشاعت