بند کریں
صحت صحت کی خبریںہیوز جدید ترین ہیلمٹ نہیں پہنے ہوئے تھے ‘ ہیلمنٹ مینو فیکچرر
امید ہے ہینوز کی صحت جلد بحال ..

صحت خبریں

وقت اشاعت: 26/11/2014 - 14:41:26 وقت اشاعت: 26/11/2014 - 13:37:54 وقت اشاعت: 26/11/2014 - 13:35:45 وقت اشاعت: 26/11/2014 - 13:32:44 وقت اشاعت: 26/11/2014 - 13:16:58 وقت اشاعت: 26/11/2014 - 12:51:55 وقت اشاعت: 26/11/2014 - 12:35:55 وقت اشاعت: 26/11/2014 - 12:08:54 وقت اشاعت: 26/11/2014 - 12:08:54 وقت اشاعت: 26/11/2014 - 11:48:07 وقت اشاعت: 25/11/2014 - 23:34:38

ہیوز جدید ترین ہیلمٹ نہیں پہنے ہوئے تھے ‘ ہیلمنٹ مینو فیکچرر

امید ہے ہینوز کی صحت جلد بحال ہو جائیگی ‘ کمپنی کا بیان

لندن(اُردو پوائنٹ تاز ترین اخبار۔ 26نومبر 2014ء) باوٴنسر لگنے سے زخمی ہونے والے فل ہیوز کے ہیلمٹ مینوفیکچرر کے مطابق آسٹریلوی بلے باز ہیلمٹ کا جدید ترین ماڈل نہیں پہنے ہوئے تھے۔برطانوی کمپنی مسوری سر کی حفاظت کرنے والی پوشاک بنانے کی نامور کمپنی ہے جس نے اپنے ایک اعلامیے میں ہیوز کہ جلد اور مکمل بحالی کی امید کا اظہار کیا ہے۔اعلامیے میں کہا گیا کہ وہ حادثے کی مزید فوٹیج طلب کررہے ہیں تاکہ اس بات کا تعین کیا جاسکے کہ ہیوز کو گیند کہاں لگی ہے۔

اعلامیے میں کہا گیا کہ جو فوٹیج ابھی دستیاب ہے اس سے ایسا محسوس ہوتا ہے کہ ہیوز کو ہیلمٹ کے گرل کے پیچھے والے حصے میں گیند لگی اور گیند نے اس سابقہ ماڈل والے ہیلمٹ کو مکمل طور پر مس کردیا۔اعلامیے میں بتایا گیا کہ یہ ہیلمٹ کا غیر محفوظ حصہ ہوتا ہے جہاں سر اور گردن ہوتی ہے تاہم اسے بلے باز کی آسانی سے سر ہلانے کے غرض سے اس طرح بنایا جاتا ہے۔

اعلامیے میں کہا گیا کہ اس ہیلمٹ کے جدید ترین ماڈل میں اس حصے کو مزید محفوظ بنایا گیا ہے تاہم اس سے بلے باز کو الجھن محسوس نہیں ہوتی تاہم یہ کہنا قبل ازوقت ہے کہ اگر ہیوز نے یہ ہیلمٹ پہنا بھی ہوتا تو آیا وہ اس انجری سے بچ پاتے یا نہیں۔مسوری کے مینیجنگ ڈائریکٹر سیم ملر نے کہا کہ ہیلمٹ مینوفیکچررز بہتر سے بہتر مصنوعات بنانے کی کوشش کررہے ہیں اور اس حوالے سے دنیا بھر کی گورننگ اتھارٹیز سے رابطہ بھی کیا جاتا ہے۔مسوری کے ترجمان نے بتایا کہ نئے ہیلمٹ اگست 2014 سے فروخت کے لیے دستیاب ہیں۔



26/11/2014 - 12:51:55 :وقت اشاعت