بند کریں
صحت صحت کی خبریںہیپاٹائٹس جگر کی سوجن کی بیماری‘بروقت تشخیص سے علاج ممکن ہے:ڈاکٹرہارون مجید

صحت خبریں

وقت اشاعت: 10/08/2015 - 14:59:40 وقت اشاعت: 10/08/2015 - 12:30:00 وقت اشاعت: 08/08/2015 - 16:35:36 وقت اشاعت: 07/08/2015 - 16:38:15 وقت اشاعت: 07/08/2015 - 12:44:42 وقت اشاعت: 06/08/2015 - 16:48:18 وقت اشاعت: 06/08/2015 - 16:47:19 وقت اشاعت: 06/08/2015 - 16:27:57 وقت اشاعت: 06/08/2015 - 14:46:05 وقت اشاعت: 06/08/2015 - 13:44:31 وقت اشاعت: 06/08/2015 - 12:26:05

ہیپاٹائٹس جگر کی سوجن کی بیماری‘بروقت تشخیص سے علاج ممکن ہے:ڈاکٹرہارون مجید

پیرمحل (اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔06اگست۔2015ء) معروف معالج ڈاکٹر ہارون مجید نے کہا ہے کہ ہیپاٹائٹس جگر کی سوجن کی بیماری ہے ایسے خطرناک قسم کے موذی مرض کابروقت تشخیص سے علاج ممکن ہے اس بیماری کی کوئی ظاہری علامت نہیں۔ 80 فیصد لوگ آخر تک اپنے جسم میں اس خطرناک وائرس کی موجودگی سے بے خبر رہتے ہیں دنیا بھر میں قریباً 17 کروڑ لوگ اس موذی مرض کا شکار ہیں جبکہ ہر سال 40 لاکھ افراد کا اضافہ ہو رہا ہے۔

دنیا بھر میں ہیپاٹائٹس سی کے مریضوں کی تعداد ایک کروڑ ہے جبکہ 20 لاکھ افراد کا سالانہ اضافہ ہو رہا ہے۔ ہیپاٹائٹس سی کی علامتوں میں تھکاوٹ اور کمزوری، وزن میں کمی، بھوک کا خاتمہ، جوڑوں میں درد، فلوجیسی علامتیں مثلاً بخار، سر درد پسینے چھوٹنا، ذہنی پریشانی جگر کے پاس درد کا احساس شامل ہیں۔ اس بیماری میں جگر کے خلیات گل جاتے ہیں اور اگر اس پاس کی نسیں سخت ہو جاتی ہیں یہ وائرس خون کے راستے جسم میں داخلی ہوتا ہے جس کیلئے عام ذریعہ استعمال شدہ سرنج ہوتی ہے سرنج کے ذریعے منشیات کا استعمال کرنے والے لوگ اس مرض کا زیادہ شکار ہوتے ہیں کان، ناک، چھروانے یا بدن گروانے یا شیو بنانے والے آلات بھی اگر متاثرہ ہوں تو متعلقہ فرد میں یہ وائرس منتقل ہو جاتا ہے مریض کی کنگھی اور دیگر اشیاء سے بچنا چاہئے۔

06/08/2015 - 16:48:18 :وقت اشاعت