بند کریں
صحت صحت کی خبریںنوعمر بچے انٹرنیٹ کے زیادہ استعمال سے بلڈپریشر کے مرض میں مبتلا ہوسکتے ہیں، ماہرین

صحت خبریں

وقت اشاعت: 09/10/2015 - 16:38:06 وقت اشاعت: 09/10/2015 - 16:32:17 وقت اشاعت: 09/10/2015 - 15:17:20 وقت اشاعت: 09/10/2015 - 15:17:18 وقت اشاعت: 09/10/2015 - 13:24:36 وقت اشاعت: 09/10/2015 - 13:22:54 وقت اشاعت: 08/10/2015 - 17:05:15 وقت اشاعت: 08/10/2015 - 16:40:51 وقت اشاعت: 08/10/2015 - 15:26:46 وقت اشاعت: 08/10/2015 - 15:10:15 وقت اشاعت: 08/10/2015 - 15:00:20

نوعمر بچے انٹرنیٹ کے زیادہ استعمال سے بلڈپریشر کے مرض میں مبتلا ہوسکتے ہیں، ماہرین

واشنگٹن(اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔ 09 اکتوبر۔2015ء) ایک حالیہ مطالعے سے انکشاف ہوا ہے کہ انٹرنیٹ پر غیرمعمولی وقت صرف کرنے والے نوعمر لڑکے اور لڑکیوں میں ہائی بلڈ پریشر کے مسائل پیدا ہوسکتے ہیں۔امریکی اسپتال کے ماہرین نے انٹرنیٹ استعمال کرنے والے 134 افراد کا جائزہ لیا جن میں سے زیادہ انٹرنیٹ استعمال کرنے والے 26 افراد کا بلڈ پریشر ہائی نوٹ کیا گیا جس کے بعد ماہرین نے انکشاف کیا کہ ایک ہفتے میں 14 گھنٹے انٹرنیٹ پر گزارنے والے نوعمر (ٹین ایج) بچوں میں بلڈ پریشر کے امراض پیدا ہوسکتے ہیں۔

اپنی نوعیت کی اس اولین تحقیق سے معلوم ہوا ہے کہ انٹرنیٹ کی دنیا میں گم رہنے والے افراد معاشرے سے الگ تھلگ، ذہنی دباوٴ اور موٹاپے کے شکار ہونے کے ساتھ ساتھ بلڈ پریشر کے عارضے میں بھی مبتلا ہوسکتے ہیں۔ جو نوعمر افراد ہفتے میں 25 گھنٹے انٹرنیٹ استعمال کرتے رہے ان میں ہائی بلڈپریشر نوٹ کیا گیا۔بین الاقوامی جریدے میں شائع ہونے والیی اس رپورٹ کے مطابق نوعمر بچوں میں بلڈ پریشر کی وجہ سے کم عمری میں ہی بہت سے مسائل پیدا ہوسکتے ہیں اسی لیے ضروری ہے کہ ایسے بچے انٹرنیٹ کے استعمال سے توقف کرتے ہوئے کچھ ورزش ضرور کریں۔

09/10/2015 - 13:22:54 :وقت اشاعت