مریم نواز کی باتوں پر اب بچے بھی ہنستے ہیں فواد چوہدری

ہم الیکٹورل ریفارمز، چیئرمین نیب کی تقرری اور عدلیہ ترامیم پر اپوزیشن کے ساتھ مل کر آگے بڑھنا چاہتے ہیں میڈیا اداروں کی آمدن کے حوالے سے اعداد و شمار غلط ہیں تو میڈیا مالکان اپنے اکائونٹس اوپن کر دیں،وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات کی کابینہ اجلاس کے بعد میڈیا کو بریفنگ

منگل 18 جنوری 2022 20:44

مریم نواز کی باتوں پر اب بچے بھی ہنستے ہیں فواد چوہدری
اسلام اآباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - آن لائن۔ 18 جنوری2022ء) وفاقی وزیر اطلاعات ونشریات فواد چوہدری نے کہا ہے کہ مریم نواز کی باتوں پر اب ان کے بچے بھی ہنستے ہیں، اسٹیٹ بینک کابل سینیٹ سے بھی جلد پاس کروا لیں گے، 2 بلین ڈالرز سے زائد کی ویکسین امپورٹ کرکے شہریوں کو لگائی ، کورونا کیسز کی یومیہ تعداد 5 ہزار پر پہنچ گئی ہے ، اومیکرون کیسب سے زیادہ کیسزکراچی میں ہیں، زیادہ ترعلاقوں میں کسانوں کویوریا کھاد مل رہی ہے ، ویکسین کروانے والوں پراومیکرون کا اثرکم ہورہا ہے ، سندھ ویکسینیشن کے حوالے سے سب سے پیچھے ہے۔

چوہدری فواد حسین نے کابینہ اجلاس کے بعد میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ ہم الیکٹورل ریفارمز، چیئرمین نیب کی تقرری اور عدلیہ ترامیم پر اپوزیشن کے ساتھ مل کر آگے بڑھنا چاہتے ہیں، اپوزیشن کی لیڈر شپ اصلاحات سے زیادہ احتجاجوں پر یقین رکھتی ہے، چار سال انہوں نے احتجاجوں میں گذار لئے ہیں، آئندہ وہ ایسے ہی چلنا چاہتے ہیں، مریم نواز کی باتوں پر اب ان کے بچے بھی ہنستے ہیں، چوہدری فواد حسین نے کہاکہ میڈیا اداروں کی آمدن کے حوالے سے اعداد و شمار غلط ہیں تو میڈیا مالکان اپنے اکائونٹس اوپن کر دیں،میڈیا ورکرز بھی دیکھیں کہ ان کے اداروں کی آمدن اور اخراجات کیا ہیں، وفاقی کابینہ کو اومیکرون کی تازہ ترین صورتحال سے آگاہ کیا گیا، اومی کرون کیسز کی تعداد میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے،وفاقی وزیر اطلاعات نے کہاکہ اومی کرون کے کیسز میں 2.5 گنا اضافہ ہوا، موجودہ کیسز پانچ ہزار یومیہ پر پہنچ گئے ہیں، ویکسین لگانے والے افراد اومیکرون سے کم متاثر ہوتے ہیں، انہوں نے کہاکہ سندھ ویکسینیشن میں سب سے پیچھے ہے، کراچی میں اومیکرون کے کیسز بہت زیادہ ہیں، سکولوں کے بچے زیادہ متاثر ہو رہے ہیں، حکومت نے دو بلین ڈالر سے زائد کی ویکسین درآمد کر کے اپنے شہریوں کو لگائی، کرنٹ اکا?نٹ خسارہ میں بڑا حصہ ادویات کی درآمد ہے، صرف ویکسین کی درآمد پر دو بلین ڈالر خرچ ہوئے، گزشتہ حکومتوں میں بھی اسٹیٹ بنک کی خود مختاری کیلئے ترامیم کی گئیں۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہاکہ اسٹیٹ بنک ترمیمی بل معیشت کی بہتری اور اسٹرکچرل ریفارمز کیلئے انتہائی ضروری ہے۔پاکستان کی تاریخ میں یوریا کی سب سے زیادہ پیداوار ہوئی،پانچ لاکھ ایکڑ سے زائد رقبہ پر گندم کی کاشت ہوئی، عالمی منڈی میں کھاد کی قیمت پاکستان سے چھ گنا زائد ہے۔انہوں نے کہاکہ کھاد کی مارکیٹ پر دبائو ہے، پاکستان کے زیادہ تر علاقوں میں کھاد میسر ہے، گندم کی اس بار بمپر فصل ہوگی، اسپشل ٹیکنالوجی زونز کے قیام اور کامیابی سے روزگار کی فراہمی اور ملکی آئی ٹی بر آمدات میں اضافہ ہوگا۔

انہوں نے کہاکہ 2018 تک گرین ایریاز اور درختوں کی تعداد میں واضح کمی واقعہ ہوئی۔ 2018 کے بعد حکومتی اقدامات کی وجہ سے اسلام آباد میں نہ صرف درختوں کی تعداد میں اضافہ ہوا بلکہ گرین ایریاز کو بحال کیا گیا، قبضہ مافیا سے سرکاری اراضی واگزار کروائی گئی، چوہدری فواد حسین نے کہاکہ وزیراعظم نے تمام بڑے شہروں کا ماسٹر پلان جلد مکمل کرکے ان پر عملدرآمد کو یقینی بنانے اور شہری آبادیوں میں گرین ایریاز اور درختوں کی تعداد کو بڑھانے کی ہدایات جاری کیں۔

اسلام آباد شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments