مقررہ وقت پر حلف نہ اٹھانے پر رکن اسمبلی کی نشست خالی ہونے بارے قانون کے اجراء کیخلاف درخواست پر تحریری حکم جاری

وفاقی حکومت ،الیکشن کمیشن سمیت تمام فریقین 14روز میں تحریری جواب جمع کروائیں،جسٹس جواد حسن نے تین صفحات پر مشتمل تحریری فیصلہ جاری کیا

منگل 21 ستمبر 2021 23:02

لاہور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 21 ستمبر2021ء) لاہور ہائیکورٹ نے منتخب اراکین اسمبلی کی جانب سے مقررہ وقت پر حلف نہ اٹھانے کی صورت میں نشست کو خالی تصور کرنے کے قانون کے خلاف درخواست پر تحریری حکم جاری کردیا۔ جسٹس جواد حسن نے قرار دیاکہ وفاقی حکومت ،الیکشن کمیشن سمیت تمام فریقین 14روز میں تحریری جواب جمع کروائیں۔لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس جواد حسن نے شہری فریدعادل کی درخواست پر سماعت کی۔

فرید عادل نے الیکشن آرڈیننس 2021 میں تیسری ترمیم کیخلاف آئینی درخواست دائر کی۔درخواست گزار کی جانب سے موقف اختیار کیا گیا کہ الیکشن آرڈیننس میں ترمیم کے ذریعے 72 اے کے ذریعے منتخب رکن اسمبلی کو 60 روز میں حلف لینے کا پابندبنایا گیا ہے۔فیڈرل لیجسلیٹو لسٹ میں وفاق کو رکن اسمبلی کے حلف اٹھانے کا وقت مقرر کرنے کا کوئی اختیار نہیں دیا گیا۔

(جاری ہے)

درخواست گزار وکیل نے کہا وفاقی حکومت اگر حلف کی مدت مقرر کرنے کا اختیار نہیں رکھتی تو صدر مملکت کیسے وہی اختیار استعمال کرسکتے ہیں۔ صدر مملکت نے غیر آئینی طور پر رکن اسمبلی کے حلف کی مدت مقرر کرنے کا ترمیمی آرڈیننس جاری کیا۔ لہذاعدالت الیکشن آرڈیننس 2021 میں تیسری ترمیم کو غیر آئینی قرار دے کر کالعدم کیا جائے۔جسٹس جواد حسن نے 3صفحات پر مشتمل فیصلہ جاری کرتے ہوئے کہا کہ آئندہ سماعت سے قبل تمام فریقین تحریری جواب جمع کرائیں ۔

سرکاری وکیل اور متعلقہ ادارے ہدایات لے کے آئندہ سماعت تک عدالت کو آگاہ کریں۔درخوسات گزار کے وکیل نے درخواست کے قابل سماعت ہونے سے متعلق عدالت میں دلائل دئیے ۔ درخواست گزار نے اعلی عدلیہ کے فیصلے بطور مثال بھی عدالت میں پیش کیے ۔وفاقی حکومت اور الیکشن کمیشن پاکستان چودہ دن میں جواب اور رپورٹ پیش کریں گے۔

لاہور شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments