سپریم کورٹ ، خوشاب کی ضلع کونسل انتخابات کے خلاف درخواست پر فیصلہ محفوظ

جمعرات اپریل 22:30

سپریم کورٹ ، خوشاب کی ضلع کونسل انتخابات کے خلاف درخواست پر فیصلہ محفوظ
اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 19 اپریل2018ء) سپریم کورٹ نے خوشاب کی ضلع کونسل انتخابات کے خلاف درخواست پر فیصلہ محفوظ کرلیا پریزائڈنگ آفیسرنے تسلیم کیا کہ انتخابات میں ووٹرزنے پرچیاں پولنگ ایجنٹس کودکھائیں جبکہ الیکشن کمیشن نے دوبارہ انتخابات کا موقف اپنایا جمعرات کے روز جسٹس گلزاراحمد کی سربراہی میں 2رکنی بینچ نے خوشاب ضلع کونسل انتخابات کیس کی سماعت کی جسٹس قاضی فائزنے پوچھا کہ ووٹ برائے فروخت کہنے والے ممبرکے خلاف الیکشن کمیشن کیا کرسکتا ہے سمیرا ملک کے وکیل نے موقف اپنایا کہ شفاف طریقے سے انتخابات الیکشن کمیشن کی ذمہ داری ہے ، ووٹ برائے فروخت ہونے پر الیکشن کمیشن نتیجہ آنے سے پہلے انتخابی عمل روک سکتا ہے ، پریزائڈنگ آفیسراسراراحمد نے عدالت کوبتایاکہ ضلع کونسل انتخابات کے دوران ووٹرزنے پرچیاں پولنگ ایجنٹس کودکھائیں،جسٹس قاضی فائز عیسی نے پریذائیڈنگ آفیسر سے مخاطب ہوکرکہاکہ بیان کیوں بدلا سپریم کورٹ میں جھوٹ بولاتونوکری بھی جاسکتی ہے پریذائڈنگ آفیسرنے حالات وواقعات کوذمہ دارٹھہرایا جبکہ الیکشن کمیشن کے ڈی جی لاء نے اپنے ادارے کے فیصلے کی حمایت کی،،،،سپریم کورٹ نے فریقین کے دلائل مکمل ہونے پر فیصلہ محفوظ کرلیا،سمیراملک ضلع خوشاب سے چئیرمین منتخب ہوئی تھیں مخالف امیدوار کی دھاندلی کی درخواست پر الیکشن کمیشن نے دوبارہ انتخابات کرانیکا حکم دیا تھا جبکہ ہائیکورٹ نے الیکشن کمیشن کا فیصلہ کالعدم قراردیا تھا جسے درخواست گزارامیرحیدرنے سپریم کورٹ میں چیلنج کیا