کراچی میں لوڈ شیڈنگ کے مسئلہ کو جلد سے جلد حل کرنے کے خواہاں ہیں،کراچی اور سکھر کے عوام بھی بجلی چوری کی وجہ سے عذاب میں مبتلا ہیں، وزیراعلیٰ سندھ پہلے وہاں بجلی چوری روکنے کیلئے اپنا کردار ادا کریں پھر وزیراعظم ہائوس یا کسی اور جگہ دھرنے کا سوچیں

وفاقی وزیر پاور ڈویژن اویس لغاری کی صحافیوں سے گفتگو

جمعہ اپریل 16:40

اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 20 اپریل2018ء) پاور ڈویژن کے وفاقی وزیر اویس لغاری نے کہا ہے کہ کراچی میں لوڈ شیڈنگ کے مسئلہ کو جلد سے جلد حل کرنے کے خواہاں ہیں، کراچی اور سکھر کے عوام بھی بجلی چوری کی وجہ سے عذاب میں مبتلا ہیں، وزیراعلیٰ سندھ پہلے وہاں بجلی چوری روکنے کیلئے اپنا کردار ادا کریں پھر وزیراعظم ہائوس یا کسی اور جگہ دھرنے کا سوچیں۔

ان خیالات کا اظہار انہو نے جمعہ کو یہاں کے الیکٹرک کو گیس کی فراہمی اور بجلی کی لوڈ شیڈنگ کے حوالہ سے منعقدہ اجلاس کے بعد صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ اویس لغاری نے کہا کہ کسی کو بغیر معاہدہ کے گیس نہیں دی جاتی، کے الیکٹرک ایک پرائیویٹ ادارہ ہے، معاہدے کے بغیر کے الیکٹرک کو گیس کیسے دی جائے، ہم بھی چاہتے ہیں معاملہ کو جلد از جلد حل کیا جائے۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ آج تک کوئی بھی مسئلہ ایک ہنگامی میٹنگ میں حل نہیں ہوا، ہم چاہتے ہیں کہ کراچی کے عوام کو تکلیف نہ ہو، مسلم لیگ (ن) کے صدر شہباز شریف اور وزیراعظم نے بھی ہدایت کی ہے کہ مسئلہ کا جلد سے جلد حل نکالا جائے، معاملات بہتری کی جانب جا رہے ہیں، بدقسمتی سے کے الیکٹرک کے کچھ معاملات تھے جو نہیں ہونے چاہئیں تھے۔ انہوں نے کہا کہ ہم بلیک میل نہیں ہوں گے۔

وزیراعلیٰ سندھ سیّد مراد علی شاہ کی طرف سے وزیراعظم ہائوس کے باہر دھرنے کے حوالہ سے بیان سے متعلق سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ حیدرآباد اور سکھر کے غریب عوام بجلی چوری کی وجہ سے عذاب میں مبتلا ہیں، وزیراعلیٰ سندھ کو چاہئے کہ وہ پہلے اس بجلی چوری کی روک تھام کیلئے پولیس کو متحرک کریں پھر وزیراعظم ہائوس یا کہیں اور دھرنے کا سوچیں، الیکشن سے پہلے ڈراموں کی سمجھ نہیں آتی۔