افغانستان میں دہشتگردانہ تربیت حاصل کرنیوالوں کا معاملہ یواین میں اٹھانے کا فیصلہ

کاؤنٹر ٹیررازم ڈیپارٹمنٹ سندھ نے 19 ملزمان کی فہرست متعلقہ وفاقی ادارے کو ارسال کر دی ،دیگر صوبوں سے بھی رپورٹس طلب کر لیں گیئں ،ایڈیشنل آئی جی سی ٹی ڈی ثناء اللہ عباسی

منگل مئی 15:25

افغانستان میں دہشتگردانہ تربیت حاصل کرنیوالوں کا معاملہ یواین میں ..
اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 01 مئی2018ء) پاکستان میں بدامنی میں ملوث ملزمان کو پڑوسی ملک افغانستان میں دہشتگردی کی تربیت دینے کا معاملہ یو این او اور متعلقہ فورمز پر اٹھانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔۔سندھ میں گرفتار کئے گئے ایسے 19 ملزمان کی فہرست کاؤنٹر ٹیررازم ڈیپارٹمنٹ سندھ نے حکومت کے توسط سے متعلقہ وفاقی ادارے کو بھیج دی ہے،جبکہ دیگر صوبوں سے بھی ایسی رپورٹس طلب کر لی گئیں ہیں۔

اس حوالے سے ایڈیشنل آئی جی سی ٹی ڈی ثناء اللہ عباسی نے میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ پڑوسی ملک افغانستان میں بم دھماکوں،انتہاپسندی اور دہشتگردی کی تربیت حاصل کرنیوالے پاکستانی ملزمان کی اصل تعداد تو سینکڑوں میں ہے لیکن پولیس کو دستیاب شواہد سے مرتب فہرست سندھ میں گزشتہ 5سال کے دوران گرفتار کیے گئے کالعدم تنظیموں کے کارندوں اور ان ملزمان کی ہے،جنہوں نے مشترکہ تحقیقات کے دوران اقبال جرم کیا اور عدالتوں میں بیانات دیئے۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ اپنی حکمت عملی اور مقامی دہشتگردوں کو کنٹرول کرنے میں ناکام افغانستان ہر معاملے کا الزام پاکستان یا یہاں کے مذہبی گروپوں پر عائد کردیتا ہے جبکہ پاکستان کی سرزمین پر دہشتگردی اور لاقانونیت کے پیچھے یہی پڑوسی ملک اور اس کے اتحادی ملوث رہے ہیں۔اس سلسلے میں افغاستان اور اس کے اداروں کی پاکستان میں ہر مداخلت کا جواب دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے،ان رپورٹس اور ڈیٹا کی تیاری اسی سلسلے کی کڑی ہے۔

اس حوالے سے تفصیلات کے مطابق سال 2013 میں گرفتار کیے گئے محمد عادل عرف عثمان نے تحریک طالبان افغانستان کے بینر تلے افغانستان میں بم بنانے کی تربیت حاصل کی تھی۔غازی فورس کے نام سے اس گروہ کو سابق صدر پاکستان جنرل پرویز مشرف پر حملے کی منصوبہ بندی میں گرفتار کیا گیا تھا۔سال 2015 میں گرفتار لانڈھی کے رہائشی اور مہمند ایجنسی سے تعلق رکھنے والے ملزم عبدالغفور نے بھی تحریک طالبان کے تحت افغانستان میں مولوی آغا جان گروپ میں رہ کر دہشتگردی کی تربیت حاصل کی۔

پولیس حکام کے مطابق سال 2015 کے دوران گرفتار کئے گئے ایم پی آر کالونی اورنگی ٹاؤن کے رہائشی راز محمد عرف عمر، تاج محمد عرف سلمان، بلوچ گوٹ اورنگی ٹاؤن نمبر 4 کے رہائشی محمد رحیم عرف پہلوان اور ڈیرہ الہ یار بلوچستان کے رہائشی منظور احمد عرف معاویہ عرف اسامہ عارف حبیب اللہ نے بھی افغانستان سے دہشتگردی کی تربیت لینے کا اعتراف کیا ہے۔

سال 2016 میں دہشتگردوں کی سہولت کاری کے الزام میں گرفتار حیدرآباد لطیف آباد کے رہائشی ڈاکٹر عبدالرقیب،بلال کالونی کورنگی کی رہائشی فہد جاوید عرف فہد ملا عرف موسیب اور شادمان ٹاؤن کراچی کے رہائشی سید محمد مرتضیٰ عرف بے نام عرف ابوہریرہ عرف معاویہ نے بھی افغانستان سے دہشتگردی کی تربیت لینے کا اعتراف کیا ہے۔ملیر کے رہائشی اور القاعدہ برصغیر گروپ سے تعلق رکھنے والے عبدالباسط رشید کو بھی دو سال قبل گرفتار کیا گیا تھا۔

اس ملزم نے بھی سال 2008 میں افغانستان میں تربیت لی اور 2010 میں اس مقصد کیلئے افغانستان جاتے ہوئے اسے گرفتار کرلیا گیا۔ملزم نے سال 2012 میں القاعدہ کو جوائن کیا اور پھر سال 2014 میں پھر افغانستان جاکر دہشتگردی کی تربیت حاصل کی۔۔پولیس حکام کے مطابق سندھ کے شہر شکارپور کے گوٹھ عبدالخالق پندرانی سے تعلق رکھنے والے بلال احمد اور سکندر عرف اصغر اور عرف عمر نے مبینہ طور پر لشکر جھنگوی اور جیش الاسلام کے پلیٹ فارم سے سال 2009 میں بم بنانے اور دہشتگردی کی تربیت افغانستان جاکر حاصل کی۔

سال 2009 میں لشکرجھنگوی جوائن کرنے والا یہ ملزم بم بنانے کا ماسٹر تصور کیا جاتا ہے۔رپورٹ کے مطابق ملزم دہشتگردوں کو مبینہ طور پر دھماکا خیز مواد اور بارود سپلائی کرنے میں بھی ملوث رہا ہے۔ ملزم شکارپور امام بارگاہ بم دھماکے میں بھی ملوث ہے اور دو مرتبہ افغانستان جاچکا ہے۔سال 2016 میں گرفتار کیے گئے ملزم 25 فروری 2015کو پیر حیدر شاہ کی درگاہ پر بم دھماکے میں ملوث رہا ہے۔

سال 2016 میں پاکستانی حساس ادارے کے ہاتھوں گرفتار کئے گئے محمد نعیم عرفان عرف سعید اللہ عرف احمد عرف صدیقی عرف ولید سیٹلائٹ ٹاؤن کوئٹہ کا رہائشی ہے جو لشکر جھنگوی کے العالمی گروپ سے تعلق رکھتا ہے۔ملزم نے ملا منصوری گروپ میں رہتے ہوئے افغانستان سے دہشتگردی کی تربیت حاصل کی۔ملزم پاکستان سے غیر قانونی طور پر افغانستان جاکر 40دن تک تربیتی امام ابو حنیفہ کیمپ میں رہا۔

ملزم نے جہاد کے نام پر بیکری کے ہندو مالک سے بھتہ وصول کرنے اور کوئٹہ میں ہی ایک اور واردات میں ہندو تاجر کے اسٹور میں لوٹ مار کی۔اس گروہ نے بھتہ نہ دینے پر کوئٹہ میں وائن شاپ پر دستی بم سے حملہ کیا۔ملزم اور اس کے گروہ نے فرقہ ورانہ دہشتگردی میں درجن سے زائد افراد کو قتل کیا۔ سال 2017 میں گرفتار کیے گئے خلیل احمد عرف جلیل احمد نے لشکر جھنگوی کے پلیٹ فارم سے افغانستان میں بم بنانے اور دہشتگردی کی تربیت حاصل کی۔

ملزم بلوچستان میں سال 2005 درگاہ پر بم دھماکے میں ملوث رہا جس میں 45 افراد جاں بحق جبکہ 70 زخمی ہوئے۔ملزم اوستہ محمد بلوچستان کا رہائشی اور شکار پور کے گاؤں سندھو یا میں مقیم تھا، گزشتہ سال کا گرفتار ملزم محمد وزیر حسین اور فرحان سندھی مسلم سوسائٹی کراچی کا رہائشی ہیں جو نعیم بخاری گروپ کے پلیٹ فارم سے افغانستان میں دہشتگردی کی تربیت حاصل کرچکا ہے ایک اور ملزم تنویر احمد سال 2017 میں گرفتار ہوا جو القاعدہ کے حقانی گروپ کے تحت افغانستان میں تربیت کے بعد دہشتگردی میں بھی ملوث رہا۔

امارات اسلامیہ افغانستان سے تعلق رکھنے والا بلدیہ ٹاؤن کراچی کا ملزم عبدالجبار عرف سلام عرف لغاری بھی افغانستان میں تربیت یافتہ ہے جو کراچی میں دہشتگردی کے علاوہ بم دھماکوں اور دستی بم حملوں میں ملوث رہا۔ملزم عبدالحمید بروہی جند الفدا گروپ سے تعلق رکھتا ہے جسے جامشورو پولیس نے گرفتار کیا تھا۔شکار پور کے نواحی گاؤں سے تعلق رکھنے والا یہ ملزم بھی افغانستان سے دہشتگردی کی تربیت حاصل کرچکا ہے۔ایک ملزم جنید احمد عرف جنید سال کو رواں سال سی ٹی ڈی سندھ نے گرفتار کیا ہے جو کیماڑی کا رہائشی اور پشاور سے تعلق رکھتا ہے۔یہ ملزم افغانستان کے علاقے غزنی سے دہشتگردی کی تربیت لے چکا ہے۔