بھارتی جیلوں میں قید پاکستانیوں کو عبادت کرنے کی بھی اجازت نہیں دی جارہی‘ رہائی پانے والی پاکستانی شہری کا انکشاف

پاکستانی قیدی ابتر زندگی گزار رہے ہیں،جیل حکام کی جانب سے بیجا تشدد کیا جاتا ہے ،کئی دنوں تک بھوکا بھی رکھا جاتا ہے‘محمد یاسین

اتوار جون 16:50

لاہور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 24 جون2018ء) بھارتی قید سے آزاد ہوکر پاکستان آنے والے شہری نے انکشاف کیا ہے کہ بھارت میں قید پاکستانی ابتر صورتحال سے دو چار ہیں اور انہیں عبادت کرنے کی بھی اجازت نہیں دی جارہی۔پاکستانی شہری محمد یاسین بھارت میں11سال سے قید رہنے کے بعد رہائی ملنے پر تحصیل پسرور میں اپنے آبائی گائوں چاہال پہنچا ۔محمد یاسین سیالکوٹ میں ورکنگ بائونڈری پر غلطی سے سرحد پار کرکے بھارت کے زیر انتظام کشمیر میں داخل ہوگیا تھا جہاں اسے بھارتی بارڈر سکیورٹی فورسز نے گرفتار کرلیا تھا۔

محمد یاسین کو 2 سال کی سزا سنائی گئی تھی تاہم سزا پوری ہونے کے باوجود محمد یاسین 11 سال تک بھارتی جیل میں قید رہا۔محمد یاسین نے پاکستانی قیدیوں کی روداد سناتے ہوئے کہا کہ بھارت میں قید پاکستانی ابتر زندگی گزار رہے ہیں۔

(جاری ہے)

اس نے دعویٰ کیا کہ قید میں موجود پاکستانیوں پر جیل حکام کی جانب سے بیجا تشدد کیا جاتا ہے اور انہیں کئی دنوں تک بھوکا بھی رکھا جاتا ہے۔پاکستانی قیدیوں کو بھارتی جیلوں میں نماز اور دیگر عبادات کرنے کی بھی اجازت نہیں دی جاتی۔انہوں نے کہا کہ وہ اللہ رب العزت کا شکر ادا کرتے ہیں کہ بھارتی جیل میں اپنی زندگی کے 11سال گزار کر وہ بحفاظ اپنوں کے پاس واپس پہنچ گئے ہیں اور اپنے اہل خانہ سے مل کر بہت خوش ہیں۔

متعلقہ عنوان :