"وچلی گل دسو وچلی"، انگلینڈ کی جانب سے اپنی کرکٹ ٹیم پاکستان بھیجنے سے انکار پر شہباز گل کا ردعمل

رونا یاروں نوں لے لے ناں بھرواں داں، سیدھی تے چٹی گل کرو۔ اے کی ہویا اسیں کرکٹ نہیں کھیلنی، وچلی گل دسو وچلی، معاون خصوصی وزیراعظم شہباز گل کا ٹویٹ

Danish Ahmad Ansari دانش احمد انصاری پیر 20 ستمبر 2021 21:33

"وچلی گل دسو وچلی"، انگلینڈ کی جانب سے اپنی کرکٹ ٹیم پاکستان بھیجنے ..
اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین .20 ستمبر2021ء) "سیدھی تے چٹی گل کرو، اے کی ہویا اسیں کرکٹ نہیں کھیلنی، وچلی گل دسو وچلی"، انگلینڈ کی جانب سے اپنی کرکٹ ٹیم پاکستان بھیجنے سے انکار پر وزیراعظم کے معاون خصوصی شہباز گل کا ردعمل سامنے آ گیا- تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان کے معاون خصوصی شہباز گل نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹویٹر پر کیے گئے اپنے ایک ٹویٹ میں پنجابی زبان میں لکھا کہ رونا یاروں نوں لے لے ناں بھرواں داں۔

سیدھی تے چٹی گل کرو۔ اے کی ہویا اسیں کرکٹ نہیں کھیلنی۔ وچلی گل دسو وچلی- (سیدھی اور کھری بات کریں، یہ کیا بات ہوئی کہ آپ نے کرکٹ نہیں کھیلنی، آپ اندر کی بات بتائیں- واضح رہے کہ انگلینڈ کرکٹ بورڈ نے نیوزی لینڈ کے نقش قدم پر چلتے ہوئے پاکستان میں شیڈول ٹی ٹوئنٹی سیریز کے حوالے سے یکطرفہ فیصلہ کیا ہے۔

(جاری ہے)

میڈیا رپورٹس کے مطابق انگلش کرکٹ بورڈ نے سیکورٹی خدشات کا بہانہ بنا کر اکتوبر میں اپنی مینز اور ویمن کرکٹ ٹیمیں پاکستان بھیجنے سے معذرت کر لی ہے، انگلینڈ کرکٹ بورڈ کے ٹوئٹر اکاونٹ سے بھی اس فیصلے کی تصدیق کی گئی۔

انگلش کرکٹ بورڈ حکام کے مطابق سیکورٹی خدشات سے متعلق اطلاعات ملنے کے بعد اپنی ٹیمیں اگلے ماہ پاکستان نہ بھیجنے کا فیصلہ کیا ہے۔ اس حوالے سے جاری بیان میں انگلینڈ کرکٹ بورڈ نے موقف اختیار کیا کہ خطے کی موجودہ صورتحال کے باعث کھلاڑیوں کو پاکستان کا سفر کرنے پر تحفظات ہیں، کرونا صورتحال کی وجہ سے بھی کھلاڑیوں پر بہت زیادہ دباو ہے۔

کھلاڑیوں کی ذہنی اور جسمانی فلاح سب سے اہم ہے، پاکستان کے دورے سے کھلاڑی مزید ذہنی دباو کا شکار ہوں گے، اس لیے ان پر مزید ذہنی دباو نہیں ڈال سکتے۔ سمجھتے ہیں فیصلے سے پی سی بی کو مایوسی ہو گی، پی سی بی نے پاکستان میں بین الاقوامی کرکٹ کی واپسی کیلئے انتھک محنت کی، جانتے ہیں اس فیصلے سے پاکستان کی کرکٹ پر اثرات پڑیں گے، اس لیے اپنے فیصلے پر پی سی بی سے معذرت کرتے ہیں۔

واضح رہے کہ انگلینڈ کی مینز کرکٹ ٹیم کو اگلے ماہ 13 اور 14 اکتوبر کو راولپنڈی میں 2 ٹی ٹوئنٹی میچز کی مختصر سیریز کھیلنے کیلئے پاکستان آنا تھا۔ یہ انگلینڈ کی کرکٹ ٹیم کا 2005 کے بعد پہلا دورہ پاکستان ہوتا، اس حوالے سے پی سی بی اپنی تمام تیاریاں مکمل کر چکا تھا۔ انگلیںڈ کے اس فیصلے سے قبل پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) کے سی ای او وسیم خان نے واضح کیا تھا کہ وہ بیرون ملک ہوم سیریز نہیں کھیلیں گے۔

پی سی بی کے پاس واضح ویژن ہے کہ پاکستان صرف پاکستان میں ہوم سیریز کھیلے گا جس کے لیے ہم مختلف بورڈز سے بات چیت کر رہے ہیں۔ پی سی بی نے ماضی قریب میں عالمی کرکٹ کا اعتماد جیتنے اور پاکستان میں بین الاقوامی کرکٹ دوبارہ شروع کرنے کے لیے سخت محنت کی۔ نیوزی لینڈ نے پاکستان کی ساکھ اور محنت کو نقصان پہنچایا ہے۔ مالی نقصان ہے لیکن پاکستان کرکٹ کی ساکھ کو بہت زیادہ نقصان پہنچا ہے۔