Khayye Or Slim Rahiye

کھائیے اور سلم رہئیے

بدھ جون

Khayye Or Slim Rahiye
بظاہر تو سننے میں عجیب لگتا ہے کیونکہ یہ چیز ہر کسی کے ساتھ ممکن نہیں بہت کم لوگ ایسے ہوتے ہیں جو کھاتے بھی ہیں اور دبلے پتلے بھی رہتے ہیں۔اس کے لئے وہ جو کچھ کرتی ہیں یقینا آپ بھی کرنا چاہیں گی تاکہ کسی محنت کے بغیر آپ بھی سلم رہ سکیں۔اس کے لئے آپ کو کچھ اصولوں کو اپنی زندگی کا حصہ بنانا ہو گا جو کچھ عرصے کے لئے تو آپ کو مشکل لگیں گے بعد میں آپ کی زندگی کا حصہ بن جائیں گے۔


جو دل کو اچھا لگے وہ کھائیے
یہ مت سوچئے کہ یہ کھایا تو یہ ہو جائے گا،موٹاپا بڑھ جائے گا۔ان سب باتوں سے ڈرنے کے بجائے جو دل چاہے کھائیں لیکن اس طرح نہ کھائیں کہ جب دل چاہے تب کھائیں۔جب آپ کا جسم آپ کو کھانے کا سگنل دے تو کھائیں اس سے آپ کے وزن پرفرق نہیں پڑے گا۔

(جاری ہے)


تسلی ہو جائے تو کھانا بند کردیں
پیٹ بھرنا الگ بات ہے اور تسلی ہو جانا الگ بات ہے۔

پیٹ بھر جانے کے بعد آپ کو بے سکونی ،غنودگی اور بے اطمینانی ہونے لگتی ہے مگر تسلی کا مطلب ہے کہ آپ کی بھوک مٹ چکی ہے۔کھانے کا مقصد بھوک ختم کرنا رکھیئے پیٹ بھرنا نہیں۔
باڈی لینگویج سمجھئے
ایک نارمل انسان نہ تو چکنائی سے پرہیز کرتا ہے اور نہ ڈائٹنگ کرتا ہے بلکہ وہ اپنی باڈی لینگویج کو سمجھتا ہے ۔

جس پر عمل کرکے وہ اپنے آپ کو موٹا ہونے سے روک لیتا ہے ۔اگر صرف کھا لیا جائے گا تو اس کا نتیجہ موٹا ہو گا۔صحیح بات یہ ہے کہ اپنی باڈی لینگویج کو سمجھئے اور جسم جس وقت سگنل دے تو اس سگنل پر غور کرنے کی عادت کو اپنائیے اس طرح اپنے آپ کو نارمل رکھ سکتے ہیں۔

جب بھوک لگے تب کھائیں
اکثر لوگ صرف کھاتے ہیں اور کھاتے رہتے ہیں۔

اس لئے ان لوگوں کو پتہ نہیں چلتا کہ انہیں بھوک لگ بھی رہی ہے یا نہیں ۔اس لئے جب پورا پورا احساس ہو جائے کہ بھول لگی ہے تب ہی کھائیں اور جب بھوک لگ جائے تو کھالیں پھر بلا وجہ انتظار نہ کریں بلکہ جیسے ہی بھوک کا احساس ہو کھالیں۔

موڈ
اگر آپ پریشانی ،ٹینشن میں مبتلا ہیں تو اس وقت کھانا نہ کھائیں اس سے معدہ پر بھی اثر ہو گا اور آپ غلط بھی کھالیں گے۔

جذبات جب غالب ہوتے ہیں تو آپ کو ضرورت کی غذا سے دور کر دیتا ہے ۔اس لئے موڈ دیکھ کر کھائیں تو بہتر ہے۔

دھیان کھانے پر رکھیں
کھانے کے وقت کھانے پر دھیان دیجئے کوئی اور کام کرتے وقت مت کھائیں کیونکہ اس طرح دھیان دونوں کام پر لگائے رہیں گے تو زیادہ کھانے پر بھی آپ کو احساس ہو گا کہ کم کھایا ہے ۔

جیسے اگر آپ ٹی وی دیکھتے ہوئے کھائیں گے تو آپ کو احساس ہی نہیں ہو گا کہ کتنا کھایا ہے ۔توجہ صرف کھانے پر رکھیں گے تو نا صرف کھانے کا لطف اٹھائیں گے بلکہ کتنا کھایا اس کا بھی احساس رہے گا۔

احساسات
آپ نے کیسا کھانا کھایا ہے ،اس کا ذائقہ اچھا تھا،براتھا ،زیادہ کھایا ہے ،کم کھایا ہے اس کا احساس جسم ہی دلاتا ہے۔

اگر کھانے کے بعد جلن، گیس وغیرہ ہوتو اس کا احساس بھی فوراً ہی ہو جاتا ہے ۔اس لئے جسم کے سگنل ہمیں سکون،بے سکونی،اچھے برے کام احساس دلاتے ہیں اور اسی احساسات کی بناء پر ہم اپنے جسم کی زبان کو سمجھ سکتے ہیں ۔یعنی اپنے جسم کی Wantsکو سمجھ سکتے ہیں۔باالفاظ دیگر سہی ہے کہ اگر ہم کچھ سگنلز سمجھنے لگیں تو خود کو کافی حد تک سلم اور اسمارٹ رکھ سکتے ہیں یعنی

جسم کے اس اشارے کو سمجھئے کہ جو چیز وہ کھانے کا اصرار کر رہا ہے وہ ذائقہ دار ہو تو کھائیے ہر بے مزہ چیز مت منہ کو لگائیے۔


یہ سمجھئے کہ اگر آپ کا جسم پر سکون ہے تو آپ نے صحیح کھایا ہے۔
جسم کی طلب کو سمجھئے وہ جس چیز کی طرف اشارہ کرے اسے ہی کھائیے۔
اگر ان سب چیزوں پر عمل کریں گے تو نا صرف یہ کہ خود کو پریشانی سے بچا سکتے ہیں بلکہ آپ اپنے ہی جسم کی زبان سمجھ سکتے ہیں اور اس کے بدلے میں آپ کو ملیں گے Ring Resultsاور آپ پائیں گے Smart Body
صحت کے چند گر
کھانے سے اس وقت ہاتھ روک لیں جب تھوڑی سی بھوک باقی رہ گئی ہو۔


اگر کھانے کے اوقات کے درمیانی وقفے میں بھوک لگ جائے تو تازہ پھل اور سلاد جیسی ہلکی چیز کھالیں۔
کھجور کھانے سے آپ کے بلڈ کاؤنٹ(خون کی کسی مخصوص مقدار میں سفید اور سرخ خلیوں کی تعداد اور تناسب کا تعین)میں اضافہ ہو تاہے۔
پھل کا جوس پینے کے مقابلے میں پھل کھانا زیادہ صحت بخش ہے۔
کھانے کے دوران ذہنی طور پر خوش اور پر سکون رہیں۔

اس طرح آپ اپنی غذا بہتر طریقے سے ہضم کرسکیں گے۔

ریفائنڈ آٹے سے گریز کریں۔اس کی بجائے چکی کا پسا ہوا آٹا استعمال کریں جس میں ریشے(فائبر) کی وافر مقدار ہوتی ہے۔
سفید چاول کے مقابلے میں غیر پالش شدہ براؤن چاول زیادہ صحت بخش ہوتا ہے۔
یاد رکھئے چینی صرف حرارے(کیلوریز)کا ایک ذریعہ ہے۔
اپنی غذا میں اسپراؤنٹس(کلے)کو شامل کیجئے۔یہ پروٹین سے پُر ہوتے ہیں۔
دالوں،بیجوں اور جئی میں پائے جانے والا ریشہ(فائبر)کولیسٹرول کم کرتا ہے۔
کھانوں کو زیادہ پکانے سے اس کی اہم غذائیت ضائع ہو جاتی ہے۔
ایک پرفیکٹ جلد کے لئے پھل،سلاد اور 8سے 10گلاس پانی روزانہ ایک پرفیکٹ غذاہے۔
تاریخ اشاعت: 2020-06-17

Your Thoughts and Comments