بند کریں
صحت مضامینمضامینکان درد

مزید مضامین

پچھلے مضامین - مزید مضامین
کان درد
الرجی اورانفیکشن اہم وجوہات ہیں
سرورتنویر:
یوں توہمارے جسم میں موجود اعضامیں ایک کان بھی ہے۔کان کے بارے میں کہاجاتاہے کہ اس کے اندرجسم میں پائے جانے والی سب سے باریک ہڈیاں ہوتی ہیں جن کی تعداد بھی کافی زیادہ ہوتی ہے۔ہماراکان تین حصوں پر مشتمل ہوتاہے ایک بیرونی حصہ،دوسرا درمیانی اور تیسرا اندرونی حصہ ہے۔ کان کے باہروالا حصہ بیرونی کان کہلاتاہے بیرونی کان سے ایک سوراخ اندرکی طرف ایک ائیرڈرم کے ساتھ جڑاہواہوتاہے۔ اس ائیرڈرم کے پچھلے حصے کودرمیانی حصہ اور ائیرڈرم سے آگے والے حصے کوجوجھلی دارہوتاہے اندورنی حصہ کہتے ہیں اور یہ سیپ کی شکل کاہوتاہے۔
جب کوئی جراثیم ،بیکٹیریا یایاوائرس حملہ آور ہوکر جسم میں موجودسیلز کانقصان پہنچاتے ہیں جس سے انفیکشن ہوتاہے۔ اور اگر یہ بیکٹریا یاوائرس اندرونی حصہ میں داخل ہوجائے تو وہاں بھی یہ انفیکشن کردیتاہے۔ اس انفیکشن کی دو اقسام ہیں۔ ایک MediOtitisاور دوسرا extemaOtitis کہلاتا ہے۔ ان دونوں سے کان کے درمیانی اور اندرونی حصے متاثر ہوسکتی ہیں جن میں الرجی انفیکشن، زخم، پانی پڑجانا، ائیرڈرم کونقصان پہنچنا ،کان میں کسی چیز کاپڑجانا، گلے کے غدود کاورم اس کے علاوہ ایسے بچے جودانت نکال رہے ہوں ان کوبھی کان میں درد ہوسکتاہے۔ بعض اوقات کان میں کچھ پڑجاتا ہے اکثر میں خلے بیج ،موتی یاکیڑے وغیرہ کان میں چلے جاتے ہیں اس کے لئے آپ تیزروشنی میں کان کامعائنہ کرسکتے ہیں کوشش کریں خود سے تجربات نہ کریں فوراََ مریض کوکسی قریبی ڈاکٹر کے پاس لے جائیں جومعائنہ کے بعدطبعی آلات سے پھنسی ہوئی چیز نکال دے گا۔
اکثر مریض کان کے بہنے کی شکایت کرتے ہیں اس کی کئی وجاہات ہوسکتی ہیں مثلاََ چیچک ،خسرہ وغیرہ ہونے کی صورت میں کان کے درمیانی حصہ میں ورم ہوجاتاہے جس کی وجہ سے کان بہنا شروع ہوجاتے ہیں۔ بعض اوقات بچوں میں نزلہ وزکام اور سردی کی صورت میں بھی کان سے رطوبت نکلتی ہے اس کے علاوہ ناک اور حلق کی تکلیف میں بھی کان بہنا شروع ہوجاتے ہیں۔
کان سے متعلق چند احتیاطی تدابیر یہ ہیں۔ کان میں خارش کے دوران ماچس کی تیلی سوئی نماتنکا استعمال نہ کریں۔
ہمیشہ مستندڈاکٹراور کمپنی کی ادویات استعمال کریں۔ عطائیوں سے کان کاعلاج کروانے سے آپ کی تکلیف کم نہیں بلکہ بڑھ جائے گی۔
دیسی علاج:
کان سے پیپ آنے کی صورت میں سرسوں کے تیل کے دوقطرے نیم گرم کرکے ڈالیں۔
کان میں اگر کوئی کیڑاچلاجائے توگلیسرین ڈالیں جس سے وہ چیز باہرآجائے گا۔
صبح نہارمنہ پانی میں لیموں کارس ملاکرپینے سے کان بہنے میں مددگار ہے۔
لہسن کوسرسوں کے تیل میں جلاکرکان میں ڈالنے سے درداور پیپ ختم ہوجاتی ہے۔
پیازکارس گرم ڈالنے سے بہرہ پن میں فائدہ ہوتاہے۔
سرسوں کانیم گرم تیل ڈالنا بھی بہرہ پن میں مفید ہے۔
کان دردکاہومیوپیتھک میں بھی بہترین علاج دسیتاب ہے۔
بچوں کے کان میں اگر پھنسیاں ہوں پیپ اور خون نکلتا ہوتو تھوجا30Xکی ایک خوراک کافی ہے۔
بچوں کے کان میں خارش ،دردکی صورت میں مولین آئل کے دوقطرے ڈال دیں۔

(0) ووٹ وصول ہوئے