Zehni Mareezon Kay Nigran Kia Kehtay Hain

ذہنی مریضوں کے نگران کیا کہتے ہیں

Zehni Mareezon Kay Nigran Kia Kehtay Hain
شہریاراشرف:
پنجاب انسٹیٹیوٹ آف مینٹل ہیلتھ میں پچھلے 25برس سے تعینات ایک نگران نے بتایا کہ یہاں زیر علاج مریضوں کی دنیا ہی الگ ہے ۔ یہ کبھی تو بہت عقلمندی والی باتیں کرتے ہیں اور کبھی ایسی باتیں کرنے لگتے ہیں جن کا کوئی سرپیر ہی نہیں ہوتا ۔ ہسپتال کی بالائی منزل پر قید مریضوں کے بارے میں پیش آنے والے ایک واقعہ کے بارے میں اس نے بتایا کہ ان لوگوں میں طاقت بہت زیادہ ہوتی ہے ۔

(جاری ہے)

ایک دن میں ایک مریض کوکھاناڈال کر دے رہا تھا اس نے کھانے والا برتن میرے سر پر دے مارا جس سے میرا سر پھٹ گیا ۔ اس وجہ سے جارحانہ طبیعت کے ذہنی مریضوں کو ہر وقت نشہ آور ادویات دی جاتی ہیں تاکہ یہ نشہ میں ہی رہیں اور نگران کو نقصان نہ پہنچا سکیں ۔ جبکہ کم بیمار ذہنی مریض ہسپتال میں گھومتے پھرتے ہیں اور اپنے زیادہ کام خود ہی کرتے ہیں ۔ یہاں کئی حجام ملازم بھی ہیں جو مردوں کی شیو اور ان کی حجامت بناتے ہیں ۔ اس نے بتایا کہ عید کے موقع پر زیادہ تر مریض ڈاکٹر اور ہسپتال کے عملے کے ساتھ عید کی نماز بھی پڑھتے ہیں ۔ اس کا یہ بھی کہنا تھا کہ ہم ان لوگوں کی خدمت سچے دل سے کرتے ہیں بے شک انہیں اس بات کی سمجھ نہیں ہے۔
تاریخ اشاعت: 2015-07-16

Your Thoughts and Comments