بند کریں
صحت صحت کی خبریںمیرپورخاص ڈویژن میں سخت گرمی ، حبس اور گیسٹرو کی وباء نے عوام کیلئے مشکلات پیدا کردیں ، سینکڑوں ..

صحت خبریں

وقت اشاعت: 27/05/2013 - 15:37:34 وقت اشاعت: 27/05/2013 - 15:35:10 وقت اشاعت: 27/05/2013 - 13:17:06 وقت اشاعت: 26/05/2013 - 13:30:01 وقت اشاعت: 24/05/2013 - 22:58:03 وقت اشاعت: 24/05/2013 - 20:47:20 وقت اشاعت: 24/05/2013 - 20:46:56 وقت اشاعت: 24/05/2013 - 14:44:15 وقت اشاعت: 23/05/2013 - 21:01:49 وقت اشاعت: 23/05/2013 - 20:58:51 وقت اشاعت: 23/05/2013 - 20:33:32

میرپورخاص ڈویژن میں سخت گرمی ، حبس اور گیسٹرو کی وباء نے عوام کیلئے مشکلات پیدا کردیں ، سینکڑوں افراد ہسپتالوں میں داخل

میرپورخاص (اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔آئی این پی۔24مئی۔ 2013ء) میرپورخاص ڈویژن میں سخت گرمی ، حبس کے ساتھ ساتھ گیسٹرو کی وباء نے تباہی پھیلا دی ہے میرپورخاص ڈویزن کے چاروں اضلاع اور سترہ تحصیل ہیڈکوارٹرز اسپتالوں میں دو روز میں چار سو سے زائد بچے ، خواتین اور بڑی عمر کے بزرگ افراد گیسٹرو کی وباء میں مبتلاء ہونے کہ بعد سول اسپتال میرپورخاص سمیت دیگر سرکاری اور نجی اسپتالوں میں گیسٹرو کے مریض داخل ہو رہے ہیں ۔

ایک ستم کے گرمی اور گیسٹرو نے مارا دوسرا ستم یہ کہ میرپورخاص ڈویزن کا سب سے بڑا سرکاری اسپتال سول اسپتال میرپورخاص میں بجلی کی اٹھار ا اٹھارا گھنٹے بندش ، اسپتال میں شدید بدبو اور گندگی سے مریض بجائے شفاء پانے کے مزید بیمار ہورہے ہیں۔ اسپتال میں ڈاکٹرز اور عملے کی جانب سے عدم توجہی گندگی سے مریض سخت پریشان ہیں۔ جگہ جگہ کچرے کے ڈھیر ہیں ۔

بچوں کے وارڈ ، میڈیسن وارڈ اور ایمرجنسی مین زیادہ تر گیسٹرو کی شکایت کے مریض آرہے ہیں۔ اور یہ تعداد شہروں میں گندہ بدبودار پانی پینے سے مزید پہیل رہی ہے۔ میرواھ گورچانی، ڈگری، جھڈو، نوکوٹ، مٹھی، عمرکوٹ، سامارو، پتھورو، کنری، شادی پلی، سندھڑی، پہلڈیوں ، کنڈیار، سانگھڑ، شہدادپور، سنجھورو، جام نواز علی، ٹنڈو آدم اور دیگر علائقوں میں گیسٹرو کی وباء سے اب تک چار سو کے قریب مریض صرف سرکاری اسپتالوں میں آچکے ہیں۔

جبکہ نجی اسپتالوں میں یہ تعداد اور زیادہ ہے۔ غریب نادار افراد کے لئے بنائے گئے سرکاری اسپتال مسبح خانہ سے کم نہی۔ اسپتالوں میں نہ صفائی ہے ، نہ جنریٹر کی سہولت ہے اور نہی سرکاری ادویات ملتی ہے۔ سرکاری اسپتال تو صرف نام کے ہیں ایوان صحافت میرپورخاص کے صحافیوں کی ٹیم نے جب سول اسپتال میرپورخاص کا دورہ کیا تو خلق خدا نے شکایتوں کے انبار لگادئے صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے مریضوں کا کہنا ہے کہ بجلی ہے، نہ دوائی ملتی ہے اور سب زیادہ یہ کہ اسٹاف اور ڈاکٹرز انکی دیکھ بحال نہی کرتے۔

مریضوں نے بتایا کہ وہ گیسٹرو ، حیضہ میں مبتلا ہیں اور اور انٹی باؤٹک ، ڈرپس سب باہر سے منگائی جاتی ہے۔ ایمرجنسی وارڈ میں موجود ڈاکٹر، غلام جیلانی نے بتایا۔ کہ گندہ پانی سپلائی ہونے اور بغیر دھلے ہوئے فروٹ اور سبزیاں کھانے سے گیسٹرو ہوتا ہے اور آجکل گیسٹرو کی وبا ء تیزی سے پہیل رہی ہے اور بڑی تعداد میں گیسٹرو میں مبتلا مریض آرہے ہیں۔ دوسری جانب ڈاریکٹر ھیلت میرپورخاص غلام غوث قائم خانی نے بتایا کہ سول اسپتال انتظامیہ کی جانب سے مریضوں کے ساتھ عدم توجہی اور ادویات کی عدم فراھمی کا نوٹس لیا جائے گا۔ اور ڈویزن بھر کی تمام سرکاری اسپتالوں میں گیسٹرو کے باعث ایمرجنسی لگادی گئی ہے۔
24/05/2013 - 20:47:20 :وقت اشاعت