بند کریں
صحت صحت کی خبریںساہیوال، ڈسٹرکٹ ٹیچنگ ہیڈ کوارٹر ہسپتال میں 2012-13 کی ادویات کی تین کروڑ 8 لاکھ 83 ہزار روپے کی ..

صحت خبریں

وقت اشاعت: 29/08/2014 - 21:26:28 وقت اشاعت: 29/08/2014 - 20:24:40 وقت اشاعت: 29/08/2014 - 19:30:17 وقت اشاعت: 29/08/2014 - 19:02:28 وقت اشاعت: 29/08/2014 - 18:58:08 وقت اشاعت: 29/08/2014 - 18:27:15 وقت اشاعت: 29/08/2014 - 18:23:11 وقت اشاعت: 29/08/2014 - 16:40:35 وقت اشاعت: 29/08/2014 - 16:32:29 وقت اشاعت: 29/08/2014 - 16:31:00 وقت اشاعت: 29/08/2014 - 16:21:53

ساہیوال، ڈسٹرکٹ ٹیچنگ ہیڈ کوارٹر ہسپتال میں 2012-13 کی ادویات کی تین کروڑ 8 لاکھ 83 ہزار روپے کی خریداری میں گھپلا پکڑاگیا

ساہیوال(اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔29اگست۔2014ء) وزیر اعلیٰ پنجاب کے حکم پر وزیر اعلیٰ کی انکوائری کمیٹی نے ڈسٹرکٹ ٹیچنگ ہیڈ کوارٹر ہسپتال ساہیوال میں 2012-13 کی ادویات کی تین کروڑ 8 لاکھ 83 ہزار 410 روپے کی خریداری میں گھپلا پکڑ لیاگیا۔ذمہ داروں 8 آفیسروں کو سیکرٹری ہیلتھ پنجاب نے سات یوم کے اندر جواب طلب کر لیا ہے۔جن میں پرنسپل میڈیکل کالج ساہیوال سابق معطل ہونے والے میڈیکل سپرٹنڈنٹ شیخ غلام مرتضےٰ، ڈاکٹر رحمت علی عمران، حبیب جیلانی ڈائریکٹر فنانس ، ڈسٹرکٹ اکاؤنٹس آفیسر ساہیوال دلمیر خان، آڈٹ آفیسر انٹریل ساہیوال میڈیکل کالج عمران رفیق، حافظ محمد ارشاد فارمااسسٹنٹ اور ڈسپنسر سٹور ضیاء الحق بھٹہ شامل ہیں۔

انکوائری رپورٹ کے مطابق ایک کمپنی سے ایک کروڑ 41 لاکھ 67 ہزار 250 روپے کی ادویات خریدکی گئی اور 91 لاکھ 9 ہزار 278 روپے اسی کمپنی کیلئے مخصوص کر کے الگ رکھ لئے۔ 74 لاکھ روپے میڈیکل سپرٹنڈنٹ نے اپنی ثواب دید پر رکھ لئے۔ انکوائری کمیٹی کی سفارشات پر ان آفسروں کے خلاف کرپشن ، بدعنوانی کے الزامات کا ایکشن لیا جائے جس پر سیکرٹری صحت پنجاب ڈاکٹر اعجاز منیر نے ان آٹھ آفیسروں سے جواب طلب کر لیا جس کے بعد ان آفیسروں کے خلاف کرپشن کا مقدمہ درج کر لیا جائے گا۔

انکوائری کمیٹی میں کمشنر ساہیوال، ڈاکٹر مبشر اظہر جنرل منیجرسٹور پنجاب ، سیکشن آفیسر جنرل آڈٹ شامل تھے۔جنہوں نے انکوائری کے بعد رپورٹ داخل کر دی اور ذمہ داروں کو کر پشن اور بدعنوانیوں کے تحت عہدہ سے الگ کر نے کی سفارش کی گئی جس کے بعد سیکرٹری صحت پنجاب نے کاروائی شروع کر دی ہے۔

29/08/2014 - 18:27:15 :وقت اشاعت